ہم سب ہی انٹرنیٹ پر دوستوں سے بات چیت کرتے ہوئے اب لفظوں سے زیادہ ایموجیز کا سہارا لیتے ہیں، کیوں کہ طرح طرح کے ایموجیز اب کسی کے بھی ہر طرح کے جذبات کو باخوبی بیان کردیتے ہیں۔

جیسے اگر کوئی خوش ہے، بیمار ہے، غصے میں ہے یا افسوس کے عالم میں ہے، تو ان تمام جذبات کے لیے انٹرنیٹ کی دنیا میں ایموجیز موجود ہیں، جن کے استعمال کے ساتھ کچھ اور کہنے کی ضرورت نہیں پڑتی۔

زرد رنگ کے ایموجیز کا استعمال فیس بک، ٹوئٹر سمیت ہر سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر کیا جارہا ہے، اس کے علاوہ یہ ہمارے موبائل فون چیٹ میں بھی دستیاب ہیں۔

مزید پڑھیں: 'ایموجیز پیغام کا مطلب تبدیل کرنے کا باعث بن سکتے ہیں'

بہت سے ایموجیز تو ایسے بھی ہوتے جنہیں دیکھ کر کسی کا موڈ تبدیل ہوسکتا ہے، لوگوں کا تو ایسا بھی ماننا ہے کہ یہ ایموجیز کسی کو بھی خوش کرنے کا کام کرتے ہیں۔

اور آج 17 جولائی کو ورلڈ ایموجی ڈے منایا جاتا ہے، جو کہ ان دلچسپ اور مزاحیہ ایموجیز کے اعزاز میں رکھا گیا ہے۔

اس موقع پر سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک پر استعمال ہونے والے ایموجیز کے بارے میں 6 حیران کن اور دلچسپ حقائق یہاں مندرجہ ذیل ہیں:

  • کیا آپ جانتے ہیں فیس بک پر سب سے زیادہ کون سا ایموجی استعمال کیا جاتا ہے؟ نہیں، تو ہم آپ کو بتاتے چلیں کہ اس ویب سائٹ پر وہ ایموجی جو ہنسنے کو ظاہر کرتا لیکن اس کے آنسو بھی رواں ہوتے والی شکل کا ایموجی سب سے زیادہ استعمال ہوتا ہے، اس ایموجی کا استعمال گزشتہ سال ٹوئٹر پر بھی سب سے زیادہ تعداد میں کیا گیا تھا۔

  • دوسرے نمبر پر وہ ایموجی جس کی آنکھوں کی جگہ دو دل لگے ہیں کا استعمال کیا جاتا ہے۔

  • ایسا لگتا ہے جیسے اس سال امریکا میں سب کافی خوش ہیں، کیوں کہ گزشتہ سال اگر صرف امریکا کی بات کی جائے تو ٹوئٹر پر سب سے آگے غصے والا ایموجی موجود تھا، تاہم اس سال (rolling-on-the-floor) نے اس کی جگہ لے لی ہے۔

  • فیس بک میسنجر استعمال کرنے والے صارفین خاص طور پر برطانیہ، تھائی لینڈ، کینیڈا اور برازیل میں موجود افراد سب سے زیادہ ان ایموجیز کا استعمال کرتے ہیں جن پر دل بننا ہو یا جو محبت یا پیار کے اظہار میں استعمال کیے جاتے ہوں۔

  • فیس بک میسنجر پر ہر روز 50 لاکھ سے زائد ایموجیز کا استعمال کیا جاتا ہے۔

  • فیس بک پر استعمال کیے جانے والے ٹاپ ٹین ایموجیز میں سب زیادہ تر خوشی یا پیار کے جذبے کا اظہار کرتے ہیں، واحد ایک ایموجی ایسا ہے جو رونے کی شکل کا ہے جس کا شمار نمبر 9 میں ہوتا ہے۔

خیال رہے کہ ورلڈ ایموجی ڈے کا آغاز 2014 میں جیریمی برج نامی بلاگر نے کیا، جنہوں نے ایموجی پیڈیا نامی ادارہ بھی بنایا ہے۔

ایموجی پیڈیا کے مطابق ایپل، گوگل، ٹوئٹر اور فیس بک سمیت موبائل کمپنیز کی جانب سے 2 ہزار 666 اقسام کے ایموجیز دنیا بھر میں استعمال کیے جاتے ہیں۔

پہلی مرتبہ ایموجیز کا استعمال 1990 میں کیا گیا، جبکہ پہلی مرتبہ 2011 میں اسے موبائل فون میں ایپل کمپنی نے استعمال کیا۔

آپ دن میں کتنے ایموجیز کا استعمال کرتے ہیں؟ ہمیں کامنٹس میں بتائیں۔