وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی دو روزہ دورے پر سعودی عرب پہنچ گئے

اپ ڈیٹ 16 اپريل 2018

ای میل

—فوٹو:اے پی پی
—فوٹو:اے پی پی

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی 24 ملکی مشترکہ فوجی مشقوں کی اختتامی تقریب میں شرکت کے لیے دو روزہ سرکاری دورے پر سعودی عرب پہنچ گئے جس کا مقصد خطے کے ممالک کے مابین فوجی و سیکیورٹی تعاون اور رابطوں کو فروغ دینا ہے۔

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے ہمراہ وزیر دفاع خرم دستگیر خان اور پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ بھی 24 ملکی مشترکہ فوجی مشقوں کی اختتامی تقریب میں شرکت کے لیے سعودی عرب پہنچ گئے۔

خیال رہے کہ خطے کے ممالک کے مابین فوجی و سیکیورٹی تعاون اور رابطوں کو فروغ دینے کے لیے ایک ماہ جاری رہنے والی گلف شیلڈ-1 کا اختتام 16 اپریل کو ہوگا۔

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی، سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی دعوت پر سعودی عرب پہنچے جہاں شاہ عبدالعزیز فضائی اڈے الخبر میں دمام کے گورنر شہزادہ سعود بن نائف نے ان کا استقبال کیا۔

مشقوں میں پاک فوج کے دستے، پاک فضائیہ کے سی-130 جہاز، جے ایف-17 تھنڈر لڑاکا طیارے، پاک بحریہ کے بحری جہاز اور اسپیشل سروسز گروپ کے کمانڈوز نے حصہ لیا۔

ان مشقوں کو مختلف ممالک کے فوجی دستوں، ہتھیاروں کے نظام اور پیشہ وارانہ مہارتوں کے اعتبار سے خطے کی سب سے بڑی فوجی مشقیں تصور کیا جارہا ہے۔

قبل ازیں مشترکہ گلف شیلڈ-1 کے ترجمان بریگیڈیئر جنرل عبداللہ الصبائی نے ایک پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ ان مشقوں کے خدو خال میں فوجی آپریشن اورحربی فوجی آپریشن جیسی دو اقسام ہیں جس میں دشمن کے خلاف ساحلی دفاعی حملوں کے علاوہ باقاعدہ جنگی حربی تیاریاں اور یرغمال بنانے والے عناصر سے دیہات اور ساحلی اور صنعتی تنصیبات کو واگزار کرنے کی مشقیں بھی شامل ہیں۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ مشقوں کا اہم ترین پہلو جوائنٹ ملٹری کمبیٹ آپریشنل پلان ہے تاکہ خطے کی سلامتی اور تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے اور دشمن عناصر کا مقابلہ کیا جا سکے۔

ترجمان نے کہا کہ مشقوں میں شریک ممالک کے مابین فوجی تعاون کو فروغ دینا اور اس کے علاوہ اجتماعی سلامتی، اتحاد اور مشترکہ مقاصد کی سوچ کو فروغ دینا بھی ان مشقوں کا ایک بنیادی مقصد ہے۔

مشقوں کی اختتامی تقریب میں فوجی دستوں کی پریڈ ہو گی جہاں شاہ سلمان بن عبدالعزیز دیگر ممالک کے حکومتی قائدین، وزرائے دفاع و خارجہ اورمختلف مسلح افواج کے سربراہان کا استقبال کریں گے۔