پولیس کے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) نے کراچی میں ایک کارروائی کے دوران کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے 5 دہشت گردوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا ہے جن میں ایک ڈاکٹر بھی شامل ہے۔

سی ٹی ڈی کے ایس ایس پی جنید احمد شیخ کا کہنا تھا کہ پولیس نے خفیہ اطلاع پر کارروائی کرتے ہوئے گلشن اقبال کی ایک مسجد سے ڈاکٹر عبدالرحمٰن اور ملک رضوان کو گرفتار کرلیا جو چندہ جمع کررہے تھے۔

انھوں نے دعویٰ کیا کہ ‘گرفتار دہشت گرد کالعدم ٹی ٹی پی کے لیے فنڈ جمع کر رہے تھے اور انہوں نے دہشت گردی کی تربیت افغانستان سے حاصل کی ہے’۔

ایس ایس پی جنید احمد شیخ نے کہا کہ ‘عبدالرحمٰن کوالیفائیڈ ڈاکٹر ہیں اور ٹی ٹی پی کے متحرک کارکن ہیں’۔

ملزم کے حوالے سے تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عبدالرحمٰن نے ایم بی بی ایس کی ڈگری بہاولپور میڈیکل یونیورسٹی سے حاصل کی جس کے بعد آرتھو پیڈک میں ایف سی پی ایس کی ڈگری حاصل کی۔

جنید احمد شیخ نے کہا کہ ‘انہوں نے خفیہ طور پر زخمی دہشت گردوں کا علاج کیا اور انہیں مسلسل نگرانی کے بعد گرفتار کرلیا گیا ہے’۔

علاوہ ازیں سی ٹی ڈی نے کراچی کی مچھرکالونی میں ایک اور کارروائی کے دوران مزید دو مشتبہ افرد کو حراست میں لے کر ان کے قبضے سے دو پستولیں برآمد کرلیں۔

ایس ایس پی جنید شیخ کا کہنا تھا کہ ‘گرفتار دونوں افراد کا تعلق ٹی ٹی پی ولی محمد گروپ سے ہے’ اور وہ دہشت گردی کی کارروائی کی منصوبہ بندی کررہے تھے کہ انہیں گرفتار کرلیا گیا۔

سی ٹی ڈی کی جانب سے دیگر کارروائیوں کے دوران سیاسی جماعت سے تعلق رکھنے والے ایک مشتبہ دہشت گرد کو بھی گرفتار کرلیا گیا۔

ایس ایس پی جنید شیخ کا کہنا تھا کہ ‘گرفتار ملزم پر 6 جون کو کورنگی میں رینجرز اہلکاروں پر فائرنگ کا الزام تھا جہاں ایک رینجرز اہلکار شہید ہوگیا تھا’۔