ٹرمپ کا میکسیکو کی سرحد پر 'مسلح فوجی' بھیجنے کا اعلان

25 اپريل 2019

ای میل

ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹر میں فیصلے سے آگاہ کیا—فوٹو:اے ایف پی
ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹر میں فیصلے سے آگاہ کیا—فوٹو:اے ایف پی

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اعلان کیا ہے کہ امریکا اپنے مسلح فوجیوں کو میکسیکو کے ساتھ جنوبی سرحد پر تعینات کرے گا۔

خبرایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق ٹرمپ نے 13 اپریل کو پیش آنے والے اس واقعے کے ردعمل میں یہ اقدام اٹھا رہے ہیں جہاں اطلاعات کے مطابق میکسیکو کے فوجیوں نے سرحد پر تعنیات امریکی فوجیوں سے سوالات کیے تھے اور ان پر بندقین تانی تھیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹویٹر میں اپنے پیغام میں کہا کہ 'میکسیکو کے فوجیوں نے حال ہی میں ہمارے نیشنل گارڈ سولجرز پر بندوق تان لی تھی جو ممکنہ طور پر سرحد میں منشیات اسمگلنگ سے توجہ ہٹانے کی ایک کوشش تھی'۔

یہ بھی پڑھیں:16 امریکی ریاستوں نے ’بارڈر وال ایمرجنسی‘ پر ٹرمپ کے خلاف مقدمہ کردیا

انہوں نے کہا کہ 'اب ہم مسلح فوجی سرحد کی طرف بھیج رہے ہیں، میکسیکو ناکافی اقدامات کررہا ہے'۔

امریکا کے ناردرن کمانڈ کا کہنا تھا کہ دو امریکی فوج ایک گاڑی میں سرحد میں اپنی طرف گشت کررہے تھے کہ انہیں میکسیکو کے 5 سے 6 اہلکاروں نے روک لیا اور یہ واقعہ ٹیکساس کے ریو گرینڈ کے شمال میں پیش آیا تھا۔

انکوائری رپورٹ میں انکشاف ہوا تھا کہ 'میکسیکو کے فوجیوں کا ماننا ہے کہ امریکی فوجیوں جنوی سرحد میں تھے جبکہ امریکی فوجی اپنی ہی حدود میں گشت کررہے تھے'۔

مزید پڑھیں:میرے فالوورز کیوں کم ہورہے ہیں؟ ٹرمپ کا ٹوئٹر کے سربراہ سے شکوہ

نشریاتی ادارے سی این این کو دفاعی عہدیداروں نے کہا تھا کہ میکسیکو کے فوجیوں نے اسلحہ امریکی فوجیوں پر اٹھایاتھا اور ایک فوجی کے ہاتھ بھی موڈ لیا تھا اور انہیں واپس گاڑی کی جانب بھیج دیا تھا۔

کمانڈ کے بیان میں کہا گیا تھا کہ میکسیکو کے فوجی دونوں اطراف کے اہلکاروں کے درمیان مختصر سی گفتگو کے بعد اپنی حدود میں واپس چلے گئے تھے۔

بیان میں کہا گیا تھا کہ 'پورے واقعے کے دوران امریکی فوجیوں نے طے شدہ قواعد و ضوابط کی پیروی کی تھی'۔