پاکستان کا امریکی شہریوں کو 5 سال کا ویزا دینے کا فیصلہ

اپ ڈیٹ 10 جون 2019

ای میل

امریکی حکومت نے پاکستانی شہریوں کے لیے 5 سال کے ویزے جاری کرنے کی پالیسی میں تبدیلی کی ہے— فائل فوٹو: کریٹو کامنز
امریکی حکومت نے پاکستانی شہریوں کے لیے 5 سال کے ویزے جاری کرنے کی پالیسی میں تبدیلی کی ہے— فائل فوٹو: کریٹو کامنز

واشنگٹن: امریکی حکومت نے اگرچہ پاکستانی شہریوں کے لیے ویزے جاری کرنے کی پالیسی سخت کی ہے مگر پاکستان نے امریکی شہریوں کو 5 سال، ایک سے زائد مرتبہ داخلے (ملٹی پل انٹری) ویزے دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

ڈان اخبار کی ایک رپورٹ کے مطابق گزشتہ ماہ بھیجے گئے ایک مراسلے میں اسلام آباد میں موجود وزارت خارجہ نے امریکا میں پاکستانی سفارتی مشن کو مشورہ دیا ہے کہ وہ امریکی شہریوں کو ویزا جاری کرتے وقت نئی پالیسی پر عمل کرے۔

وزارت کی جانب سے سب سے پہلے اس تبدیلی کے بارے میں اسلام آباد میں امریکی سفارتخانے کو امریکی شہریوں کے لیے وزٹ/سیاحتی ویزے کی مدت سے متعلق سوال کا جواب دیتے ہوئے بتایا گیا۔

مزید پڑھیں: ویزا پابندی کا معاملہ امریکا کے ساتھ اٹھائے جانے کا امکان

مراسلے میں کہا گیا کہ یہ بیان کرنا وزارت خارجہ کا ’اعزاز ہے کہ حکومت پاکستان سیاحت کو فروغ دینے کی اپنی پالیسی کے تناظر میں امریکی شہریوں کے لیے زیادہ سے زیادہ 3 ماہ قیام کے ساتھ 5 سال تک ملٹی پل انٹری ویزا کی اجازت دیتی ہے‘۔

واضح رہے کہ امریکا کی جانب سے طویل عرصے سے پاکستان کی ویزا پالیسی میں تبدیلی کا مطالبہ کیا جارہا تھا اور حال ہی میں اس نے اپنی پالیسی تبدیل کی مگر پاکستان نے جواب نہیں دیا۔

امریکیوں کی جانب سے پاکستانی شہریوں کو 5 سال، ملٹی پل انٹری ٹوررسٹ اور وزٹ ویزے جاری کیے جاتے تھے جبکہ کچھ کیسز میں پیشہ ور افراد جیسے صحافیوں کو بھی 5 سال کا ملٹی پل ویزے جاری کیے جاتے تھے۔

اس کے بدلے میں امریکیوں کا مطالبہ تھا کہ ان کے شہریوں کو بھی یہی سہولیات فراہم کی جائیں۔

تاہم اب امریکا زیادہ تر پاکستانیوں کو صرف 3 ماہ کے ویزے جاری کر رہا ہے اور سرکاری ویزوں پر نئی پابندیاں بھی عائد کردی ہیں۔

واضح رہے کہ اپریل میں امریکا نے پاکستان کو پابندی کا شکار 10 ممالک کی اس فہرست میں شامل کردیا تھا جو ملک بدر اور زائد المعیاد ویزے پر واپس بھیجے گئے افراد کو لینے سے انکار کرتے ہیں۔

اس نئی پابندیوں کی وجہ سے وزارت داخلہ کے کچھ حکام کو امریکی ویزے کے حصول میں رکاوٹ کا سامنا کرنا پڑا۔

تاہم امریکی ویزا پالیسی میں اس نئی تبدیلی سے قبل پاکستان نے امریکی شہریوں کو 90 روز کا ویزا جاری کرنا شروع کردیا تھا، جس میں اسلام آباد میں وزارت داخلہ کی جانب سے توسیع کی جاسکتی تھی، ساتھ ہی کچھ کیسز میں 90 روز کے قیام کے ساتھ ایک سال کے ویزے بھی جاری کیے جاتے تھے۔

ادھر اسلام آباد میں امریکی سفارتخانے کو بھیجا گیا سفارتی مراسلہ یہ اشارہ کرتا ہے کہ امریکیوں کی جانب سے 5 سالہ ویزا، ملٹی پل انٹری ویزا کا طویل عرصے سے مطالبہ کیا جارہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: 170 ممالک کے لیے نئی ویزا پالیسی کا اعلان جلد متوقع

ان کا اعتراض یہ ہے کہ ویزا کی سہولیات عام طور پر دوطرفہ ہوتی ہیں اور جب وہ پاکستانیوں کو 5 سال، ملٹی پل انٹری ویزے جاری کرتے ہیں تو پاکستان کو بھی ان کے شہریوں کے لیے ایسا کرنا چاہیے۔

دوسری جانب ایک دوسرے کے سفارتی مشن پر تعینات حکام کے لیے دونوں ممالک کی الگ پالیسی ہے، چونکہ اسلام آباد میں کوئی فیملی اسٹیشن نہیں ہے تو امریکیوں کی جانب سے ایک سال کا ویزا جاری کیا جاتا ہے، جو اگر سفارتکار کا قیام طویل ہو تو آسانی سے بڑھ جاتا ہے۔

چونکہ امریکا میں پاکستانی سفارتکار عام طور پر 3 سال کی مدت کے لیے تعینات ہوتے ہیں تو انہیں اس پوری مدت کے لیے ہی ویزے جاری کیے جاتے ہیں۔