ایف بی آر کا 2 سو سے زائد بوتیکس کو رجسٹریشن کروانے کا حکم

اپ ڈیٹ 08 اگست 2019

ای میل

ایف بی آر کے ترجمان کے مطابق تمام علاقائی دفاتر کو مطلع کیا گیا تھا— فائل فوٹو: اے پی پی
ایف بی آر کے ترجمان کے مطابق تمام علاقائی دفاتر کو مطلع کیا گیا تھا— فائل فوٹو: اے پی پی

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے 2 سو 28 گارمنٹس اور بوتیک کو ٹیکس ڈپارٹمنٹ میں رجسٹرڈ کروانے سے متعلق نوٹسز جاری کردیے۔

ادارے کی جانب سے دکانوں سے متعلق جانچ پڑتال کی گئی جس کے بعد مذکورہ دکانوں کے نام ٹیکس نادہندگان کی فہرست میں سامنے آئے۔

اس جانچ پڑتال میں یہ بات سامنے آئی کہ ان دکانوں نے خود انکم ٹیکس اور سیلز ٹیکس ڈپارٹمنٹ میں رجسٹر نہیں کروایا ہے۔

مزید پڑھیں: ایف بی آر کا سیکڑوں اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی بڑھانے پر غور

ایف بی آر کے ترجمان حامد عتیق نے ڈان کو بتایا کہ اس پُرکشش کاروبار کی نشاندہی کے لیے ہدایات جاری کی گئی تھیں جو ٹیکس ڈپارٹمنٹ میں رجسٹرڈ نہیں ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ تمام علاقائی دفاتر کو مطلع کیا گیا تھا کہ وہ پورے ملک میں اپنے اپنے حلقوں میں ان آؤٹ لیٹس کی نشاندہی کرنے کے ساتھ انہیں رجسٹریشن سے متعلق نوٹسز بھی جاری کریں۔

دوسری جانب ایف بی آر نے سال 2018 کے لیے ٹیکس گوشوارے جمع کروانے کی حتمی تاریخ میں 9 اگست تک کی توسیع بھی کردی۔

یہ بھی پڑھیں: ایف بی آر نے آن لائن ٹیکس پروفائل نظام متعارف کروادیا

ترجمان ایف بی آر کا کہنا تھا کہ ہمیں اب تک 24 لاکھ روپے کی وصولی کرلی ہے تاہم اس شعبے میں ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح 25 لاکھ تک پہنچنے کی امید ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ نان فائلرز کو ریگولر نوٹسز 9 اگست کے بعد جاری ہونا شروع ہو جائیں گے۔

یاد رہے کہ ایف بی آر کی جانب سے پہلے ہی واضح کیا جاچکا ہے کہ صارفین سے سیلز ٹیکس صرف اسی صورت میں لیا جائے گا جب سپلائر سیلز ٹیکس میں رجسٹرڈ ہوگا اور اس کی رسید پر سیلز ٹیکس رجسٹریشن نمبر موجود ہوگا۔


یہ خبر 08 اگست 2019 کو ڈان اخبار میں شائع ہوئی