راولپنڈی: ماہ محرم میں پولیس کو سوشل میڈیا کی نگرانی کی ہدایت

19 اگست 2019

ای میل

سی پی او نے ہدایت کی کہ نفرت آمیز مواد شیئر کرنے والے افراد کو حراست میں لے کر ان کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے — اے ایف پی/فائل فوٹو
سی پی او نے ہدایت کی کہ نفرت آمیز مواد شیئر کرنے والے افراد کو حراست میں لے کر ان کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے — اے ایف پی/فائل فوٹو

راولپنڈی: پولیس کو انسداد دہشت گردی ایکٹ (اے ٹی اے) کے فورتھ شیڈول کے تحت کالعدم تنظیموں، ان کے اراکین اور افراد کی سوشل اکاؤنٹس کی نگرانی کرنے اور نفرت آمیز مواد شیئر کرنے والوں کے خلاف اے ٹی اے کے تحت مقدمہ درج کرنے کی ہدایت دے دی گئی ہے۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق راولپنڈی سٹی پولیس افسر (سی پی او) نے محرم کے دوران سیکیورٹی انتظامات پر نظر ثانی کے لیے طلب کیے گئے اجلاس کے دوران پولیس کو کالعدم تنظیموں کے سوشل میڈیا پر متحرک افراد کی نگرانی کرنے کا کہا۔

سی پی او نے پولیس کو ہدایت کی کہ ملزمان کو حراست میں لیا جائے اور نیشنل ایکشن پلان کے تحت نفرت انگیز مواد کو سوشل میڈیا پر ڈال کر امن و امان کی صورتحال خراب کرنے والوں کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے۔

مزید پڑھیں: کربلا میں گزارے گئے عشرہ محرم کی چند یادیں

ان کا کہنا تھا کہ وزارت داخلہ کی جانب سے کالعدم قرار دی گئی دہشت گرد تنظیمیں اور گروہ سمیت فورتھ شیڈول میں موجود افراد ایسے کاموں میں ملوث ہوسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایسے افراد عوام میں نفرت پھیلاتے ہیں جس کی وجہ سے پولیس نے ایسے عناصر کے خلاف کریک ڈاؤن کا فیصلہ کیا ہے۔

سی پی او کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیا پر نفرت انگیز مواد اپ لوڈ کرنے والے کسی بھی شخص سمیت سوشل میڈیا کے گروپ کے منتظمین کو فوری طور پر گرفتار کیا جائے گا اور ان کے خلاف اے ٹی اے کے تحت مقدمات درج کیے جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں: عیدالاضحیٰ اور محرم کی تاریخوں کا اعلان نامناسب ہے، شوکت یوسفزئی

ان کا کہنا تھا کہ تھانوں، سرکل، ڈویژنز اور ضلعی سطح پر امن کمیٹی کے اجلاس کو بھی فوری یقینی بنایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ پولیس حکام امن کمیٹی کے اراکین سے رابطے میں رہیں اور لاؤڈ اسپیکر پر لگی پابندی پر محرم کے دوران سختی سے عمل در آمد کروایا جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ معاشرے امن و امان کی صورتحال برقرار رکھنے کے لیے تمام قانونی کارروائیوں کا سہارا لیا جائے اور اگر کوئی شخص اس کام میں ملوث رہا ہے تو اسے نظر بند کیا جائے تاکہ امن برقرار رہے۔