اولمپیئن اور گولڈ میڈلسٹ ذاکر حسین انتقال کرگئے

اپ ڈیٹ 19 اگست 2019

ای میل

ذاکر حسین نے 1956 اور 1968 کے اولمپک مقابلوں میں قومی ٹیم کی نمائندگی کی — فائل فوٹو: ٹوئٹر
ذاکر حسین نے 1956 اور 1968 کے اولمپک مقابلوں میں قومی ٹیم کی نمائندگی کی — فائل فوٹو: ٹوئٹر

پاکستان ہاکی کا اور عظیم باب بند ہوگیا اور قومی ٹیم کو متعدد فتوحات اور میڈلز سے ہمکنار کروانے والے اولمپیئن ذاکر حسین 85 برس کی عمر میں انتقال کرگئے۔

سرکاری خبر رساں ادارے 'اے پی پی' کی رپورٹ کے مطابق قومی ہاکی ٹیم کے سابق گول کیپر کی نماز جنازہ ان کے آبائی علاقے واہ کینٹ میں ادا کی جائے گی۔

پاکستان ہاکی فیڈریشن (پی ایچ ایف) کے صدر بریگیڈیئر ریٹائرڈ سجاد کھوکھر اور سیکریٹری پی ایچ ایف محمد آصف باجوہ نے عظیم اولپمیئن کے انتقال پر گہرے دکھ کا اظہار کیا۔

مزید پڑھیں: کراچی: سابق اولمپیئن منصور احمد علالت کے بعد انتقال کرگئے

دونوں عہدیداران نے گولڈ میڈلسٹ گول کیپر کی بلند درجات کی دعا بھی کی۔

خیال رہے کہ اولمپیئن ذاکر حسین نے 1956 اور 1968 میں ہونے والے اولمپکس مقابلوں میں قومی ٹیم کی نمائندگی کی تھی۔

آسٹریلیا کے شہر میلبورن میں ہونے والے 1956 کے اولمپک گیمز کے فیلڈ ہاکی کے مقابلوں میں ذاکر حسین پاکستانی ٹیم کا حصہ تھے، جہاں اسے فائنل میں بھارت کے ہاتھوں 0-1 سے شکست ہوئی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: قومی ہاکی کا عروج اور گوجرہ سے تاریخی ملاپ

تاہم پاکستانی ٹیم نے اس شکست کا مداوا 1960 میں ہونے والے اولمپکس کے ہاکی مقابلوں کے فائنل میں بھارت کو شکست دے کر کیا تھا۔

ذاکر حسین نے میکسیکو میں ہونے والے 1968 کے اولمپک مقابلوں میں پاکستان کی نمائندگی کی تھی جہاں پاکستان نے فائنل میں آسٹریلیا کو 1-2 سے شکست دے کر دوسری مرتبہ گولڈ میڈل حاصل کیا تھا۔

سابق چیمپیئن کی کامیابیوں کا سلسلہ یہیں ختم نہیں ہوتا، بلکہ انہوں نے 1958 اور 1962 کے ایشین گیمز میں قومی ٹیم کی نمائندگی کرتے ہوئے گولڈ میڈل حاصل کیا۔

دونوں ایونٹ کے فائنل میں پاکستان نے روایتی حریف بھارت کو شکست دے کر گولڈ میڈل اپنے نام کیے۔