گنج پن کی شرح میں نمایاں اضافے کا سبب سامنے آگیا

11 اکتوبر 2019

ای میل

یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی— شٹر اسٹاک فوٹو
یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی— شٹر اسٹاک فوٹو

کیا آپ کو معلوم ہے کہ دنیا بھر میں 35 سال سے کم عمر کروڑوں مردوں کو بالوں کے گرنے کے مسئلے کا سامنا ہوتا ہے اور ان میں سے 85 فیصد کے قریب افراد 50 سال کی عمر تک گنج پن کا شکار ہوچکے ہوتے ہیں۔

بالوں کے گرنے کی وجوہات تو غیرواضح ہیں مگر تحقیقی رپورٹس کے مطابق جینز اس حوالے سے اہم کردار ادا کرتے ہیں مگر اب بھی متعدد ایسے ماحولیاتی عناصر نامعلوم ہیں جو اس خطرے کو بڑھانے کا باعث بنتے ہیں۔

تاہم اب کم از کم ایک وجہ کو دریافت کرلیا گیا ہے اور وہ ہوائی آلودگی۔

کوریا کے فیوچر سائنس ریسرچ سینٹر کی اس تحقیق میں دیکھا گیا کہ آلودگی کس طرح گنج پن کی جانب لے جاسکتی ہے۔

اس تحقیق کے نتائج 28 ویں یورپین اکیڈمی آف ڈرماٹولوجی اینڈ وینرولوجی کانگریس میں پیش کیے گئے۔

تحقیق میں دیکھا گیا کہ ہوائی آلودگی کے ذرات کس طرح بالوں کی جڑوں کے خلیات پر اثرانداز ہوتے ہیں۔

تحقیق میں پی ایم 10 جیسے مٹی اور ڈیزل کے ذرات کا اثر دیکھا گیا اور دریافت کیا گیا کہ اس کے نتیجے مین بالوں کی نشوونما میں مدد دینے والے پروٹین کی سطح اس سے کم ہوجاتی ہے۔

اس پروٹین کو بیٹا کیٹینین کہا جاتا ہے اور محققین کے مطابق پی ایم 10 جیسے مٹی اور ڈیزل کے ذرات دیگر پروٹینز کی سطح بھی کم کردیتے ہیں جو بالوں کی نشوونما اور ان کو برقرار رکھنے میں کردار ادا کرتے ہیں۔

محققین کا کہنا تھا کہ ہوائی آلودگی اور سنگین امراض جیسے کینسر اور خون کی شریانوں کے امراض میں تعلق ثابت ہوچکا ہے مگر ان ذرات کے انسانی جلد اور بالوں پر زیادہ کام نہیں کیا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ نتائج سے معلوم ہوتا ہے کہ عام ہوائی آلودگی گنج پن کی جانب لے جانے کے لیے کافی ثابت ہوتی ہے۔