والدہ کو نائٹ کلب میں ڈانس کے طعنے دینے والے بیٹے کو سزا

اپ ڈیٹ 15 اکتوبر 2019

ای میل

عدالت نے بیٹے کو جیل بھیج دیا—فائل فوٹو: فیس بک
عدالت نے بیٹے کو جیل بھیج دیا—فائل فوٹو: فیس بک

متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کی ریاست فجیرہ کی ایک عدالت نے والدہ کو گھر سے نکالنے کی دھمکیاں دینے اور انہیں ’نائٹ کلب‘ میں جاکر ڈانس کرنے کے طعنے دینے پر جیل بھیج دیا۔

عدالت نے جس شخص کو جیل بھیجا اس پر الزام تھا کہ وہ اپنی والدہ کو بار بار گھر سے نکل کر ’نائٹ کلب‘ میں جاکر ڈانس کرنے کے طعنے دیتا تھا۔

عرب اخبار ’خلیج ٹائمز‘ کے مطابق فجیرہ کی عدالت میں نافرمان بیٹے کی والدہ نے درخواست دائر کرتے ہوئے بیٹے پر کم سے کم 50 ہزار درہم جرمانہ عائد کرنے کی درخواست دائر کی تھی۔

والدہ کی جانب سے مقدمہ دائر کیے جانے کے بعد بیٹے نے عدالت میں پیش ہوکر ماں کی جانب سے لگائے گئے الزامات کو مسترد کیا اور دعویٰ کیا کہ انہوں نے والدہ کی نافرمانی نہیں کی۔

بیٹے نے عدالت کو بتایا کہ ان کی والدہ اور والد کے درمیان طلاق کے حوالے سے عدالت میں کیس زیر سماعت ہے اور وہ اس کیس میں اپنے والد کی حمایت کرتے ہیں۔

بیٹے کے مطابق ماں نے ان پر جھوٹا الزام لگایا، کیوں کہ وہ نہیں چاہتیں کہ میں اپنے والد کی طرفداری کریں۔

بیٹے کے خلاف مقدمہ دائر کرنے والی خاتون کے مطابق بیٹا ان سے گھر سے نکل جانے کی دھمکیاں دینے سمیت انہیں ’نائٹ کلب‘ میں جاکر ڈانس کرنے کے طعنے دیتا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ والدہ کو نائٹ کلب میں جاکر ڈانس کرنے کے طعنے دینے والے بیٹے اور خاتون کی شہریت گلف ممالک کی ہے اور عدالت نے بیٹے کو والدہ کی تذلیل کرنے کا مجرم قرار دیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ عدالت نے بیٹے کو مجرم قرار دیتے ہوئے انہیں ایک ماہ تک جیل بھیج دیا۔

خاتون کے وکیل نے عدالت سے درخواست کی کہ نافرمان بیٹے پر 50 ہزار درہم کا جرمانہ بھی عائد کیا جائے، تاہم عدالت نے بیٹے کو صرف جیل بھیج دیا۔