کم نوعیت کے کورونا وائرس کے کیسز کو گھروں تک محدود کیا جائے گا، ڈاکٹر ظفر مرزا

اپ ڈیٹ 08 مارچ 2020

ای میل

پاکستان میں اب تک کورونا وائرس کے 6 کیسز سامنے آئے ہیں جن میں سے ایک مریض مکمل صحت یاب بھی ہوچکا ہے — فائل فوٹو: ڈان نیوز
پاکستان میں اب تک کورونا وائرس کے 6 کیسز سامنے آئے ہیں جن میں سے ایک مریض مکمل صحت یاب بھی ہوچکا ہے — فائل فوٹو: ڈان نیوز

اسلام آباد: حکومت نے ملک میں نئے کورونا وائرس یا کووڈ-19کے کیسز کی تعداد اچانک بڑھنے پر نیا منصوبہ تشکیل دیا ہے جس کے تحت کم نوعیت کے مریضوں کو گھروں میں قرنطینہ میں رکھا جائے گا جبکہ تشویش ناک صورتحال کا سامنا کرنے والے مریضوں کو ہسپتال میں داخل کیا جائے گا۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق 31 دسمبر کو ووہان سے پھیلنے والا کورونا وائرس اب تک 98 ممالک میں پھیل چکا ہے جس سے ایک لاکھ 4 ہزار 25 افراد متاثر ہوچکے ہیں جبکہ 3 ہزار 526 افراد ہلاک بھی ہوچکے ہیں۔

اس نئے وائرس سے اب تک 58 ہزار 527 افراد مکمل طور پر صحت یاب بھی ہوچکے ہیں۔

مزید پڑھیں: کورونا وائرس کے بارے میں وہ انکشافات اور تفصیلات جنہیں جاننا بہت ضروری ہے

پاکستان میں اب تک کورونا وائرس کے 6 کیسز سامنے آئے ہیں جن میں سے ایک مریض کو مکمل صحت یابی کے بعد اپنے اہلخانہ سے ملنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے ڈان سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ یہ ممکن ہے کہ درجہ حرارت کے بڑھنے سے وائرس ختم ہو سکتا ہے۔

تاہم ان کا کہنا تھا کہ 'یہ ایک نیا وائرس ہے اور پہلی دفعہ دنیا میں پھیلا ہے تو ہم یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ یہ درجہ حرارت کے بڑھنے پر ختم جائے گا، اسی دوران ہم متبادل انتظامات کر رہے ہیں تاکہ اچانک کیسز کی تعداد بڑھنے پر مریضوں کی دیکھ بھال کی جاسکے'۔

انہوں نے کہا کہ اس مرض سے ہلاکتوں کی شرح 2 فیصد سے بھی کم ہے جس کی وجہ سے یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ اگر کیسز کی تعداد میں اضافہ ہوتا ہے تو کم نوعیت کے مریضوں کو گھروں میں رکھا جائے گا، یا تو ان کا اپنا یا حکومت کی جانب سے اس کام کے لیے منتخب کی گئی عمارتوں میں، انہیں آئیسولیشن وارڈز بنایا جائے گا۔

انہوں نے بتایا کہ صرف 20 فیصد مریضوں کی حالت تشویش ناک ہوتی ہے، انہیں ہسپتالوں میں داخل کرکے مکمل دیکھ بھال فراہم کی جائے گی جبکہ جو مریض، جن کی عمر، قوت مدافعت یا پہلے سے کسی اور بیماری میں بھی مبتلا ہیں ان کو تشویش ناک سمجھا جائے گا۔

ڈاکٹر ظفر مرزا کا کہنا تھا کہ ملک میں 6 میں سے ایک مریض کی مکمل صحت یابی ایک اچھی خبر ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ’کورونا وائرس ترقی پذیر ایشیائی ممالک کی معیشتوں پر نمایاں اثرات مرتب کرے گا‘

مائیکروبائیولوجسٹ ڈاکٹر جاوید عثمان کا کہنا تھا کہ نوول کورونا وائرس پولیس یا ہیپاٹائٹس وائرسز کی طرح نہیں، یہ درجہ حرارت کے بڑھنے پر مزید ایکٹو ہوجاتے ہیں کیونکہ یہ پانی میں رہتے ہیں اور ڈیٹرجنٹ کو برداشت بھی کرسکتے ہیں۔

انہوں نے کورونا وائرس کو 'ایچ آئی وی' جیسے وائرس سے ملایا اور کہا کہ 'امریکی پروفیسر کے مطابق ایچ آئی وی بہت خطر ناک اور اتنا نازک ہے کہ یہ کسی کی بری نظر سے بھی ختم سکتا ہے، بڑی تعداد وائرسز کورونا وائرس کے خاندان سے ہیں اور وہ درجہ حرارت کے بڑھنے پر ختم ہو جاتے ہیں'۔

ان کا کہنا تھا کہ 'امید کی جاسکتی ہے کہ کووڈ-19 کا کیس بھی ایسا ہی ہوگا اور یہ درجہ حرارت کے بڑھنے پر بچ نہیں پائے گا'۔

ڈاکٹر جاوید عثمان کا کہنا تھا کہ 'حالیہ لٹریچر کے مطابق اگر درجہ حرارت 26 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچ گیا تو وائرس بچ نہیں پائے گا، پاکستان میں اچانک بارشیں ہوگئی ہیں ورنہ درجہ حرارت 26 ڈگری سینٹی گریڈ تک ہوچکا ہوتا'۔

وبا کے پھیلاؤ کے حوالے سے پاکستان کی تیاری کے سوال پر ڈاکٹر جاوید عثمان کا کہنا تھا کہ ترقی یافتہ ممالک بھی ہسپتالوں میں اتنی بڑی تعداد میں مریضوں کی دیکھ بھال کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتے ہیں۔

تاہم انہوں نے کہا کہ عوام میں خوف و ہراس ختم کرنا ہوگا تاکہ قوت مدافعت کو بڑھایا جاسکے۔

انہوں نے تجویز دی کہ حکومت کو ایک ایسا یونٹ تیار کرنا چاہیے جہاں ڈینگی سمیت ایسے تمام امور دیکھے جائیں کیونکہ ڈینگی بھی ملک کا ایک مستقل مسئلہ بن چکا ہے۔