ای میل

ٹوکیو اولمپک کے میڈلز کی تیاری کے لیے جاپان کی منفرد حکمت عملی جانتے ہیں؟

دنیا بھر کے ایتھلیٹس کے لیے ایک اولمپک گولڈ میڈل کا حصول سب سے بڑا خواب ہوتا ہے۔

جاپان کے شہر ٹوکیو میں اولمپک مقابلے جاری ہیں جس کے لیے 5 ہزار کے لگ بھگ اولمپک اور پیرا اولمپک میڈلز تیار کیے گئے ہیں۔

مگر ان میڈلز کی تیاری کی داستان بھی کافی دلچسپ ہے کیونکہ جاپان نے اس کے لیے بھی بہت منفرد حکمت عملی پر عمل کیا۔

ویسے تو گولڈ، سلور اور برونز میڈلز کافی حد تک سابقہ گیمز سے ملتے جلتے ہیں مگر ہر میزبان شہر کی جانب سے کچھ منفرد بھی کیا جاتا ہے تاکہ میڈلز دیگر گیمز سے مختلف نظر آئیں۔

اس بار بھی ایسا ہی ہوا ہے۔

میڈلز کیسے نظر آتے ہیں؟

رائٹرز فوٹو
رائٹرز فوٹو

تمام میڈلز میں کچھ مخصوص علامات ہوتی ہیں، انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی کے مطابق میڈلز میں قدیم یونان میں کامیابی کی دیوی سمجھے جانے والی نائیکی کی شبیہ کو پانچ اولمپک دائروں کے ساتھ کندہ کیا جاتا ہے جبکہ گیمز کے آفیشل نام کو درج کرنا لازمی ہے۔

اس مرتبہ کے گیمز کو XXXII Olympiad Tokyo 2020 کا نام دیا گیا ہے جو ان میڈلز پر درج ہوگا۔

اس سال کا منفرد عنصر میڈلز پر تھیم کی عکاسی ہے جسے لائٹ اینڈ بریلینس کا نام دیا گیا ہے، جس کا مطلب خام پتھر ہیں جن کو اب پالش کردیا گیا ہے۔

انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی کے مطابق میڈل میں لائٹ کا پیٹرن کسی ایتھلیٹ کی توانائی اور ان کی معاونت کرنے والوں کی نمائندگی کرتا ہے جبکہ بریلینس دوستی کی گرم جوشی کی نمائندگی کرتا ہے۔

اے پی فوٹو
اے پی فوٹو

جس کھیل کے لیے تمغہ تیار کیا جاتا ہے اس کا نام بھی ایک سرے پر کندہ کیا جاتا ہے۔

ان تمغوں پر ربن یا فیتہ موجود ہوتا ہے جس کو جاپان کی عکاسی کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے جبکہ ان کو جیتنے والے کھلاڑیوں کو منفرد لکڑی کے میڈل کیس بھی دیئے جاتے ہیں اور ہر کیس دوسرے سے منفرد ہے۔

میڈلز کا حجم کیا ہے؟

رائٹرز فوٹو
رائٹرز فوٹو

میڈل کا قطر 3.35 ہے، میڈل کا سب سے پتلا حصہ 7.7 ملی میٹر لمبا ہے جبکہ سب سے موٹا حصہ 12.1 ملی میٹر لمبا ہے، گولڈ میڈل کا وزن 556 گرام، سلور کا 550 گرام اور برونز کا 450 گرام ہے۔

میڈل کو ڈیزائن کس نے کیا؟

رائٹرز فوٹو
رائٹرز فوٹو

ان میڈلز کو جاپان سائن ڈیزائن ایسوسی ایشن اور اوساکا ڈیزائن سوسائٹی کے ڈائریکٹر جیونشی کاوانیشی نے ڈیزائن کیا، انہیں یہ اعزاز 400 سے زیادہ پروفیشنل ڈیزائنر اور ڈیزائن طالبعلموں کو شکست دے کر حاصل ہوا۔

کس سے تیار کیا گیا؟

رائٹرز فوٹو
رائٹرز فوٹو

اگر آپ کا خیال ہے کہ گولڈ میڈل کو مکمل طور پر سونے سے تیار کیا گیا ہے تو جان لیں کہ ایسا نہیں، گولڈ میڈلز میں صرف 6 گرام سونا استعمال ہوا ہے جو چڑھانے یا ملمع کاری کے لیے استعمال کیا گیا جبکہ اس کا بیشتر حصہ خالص چاندی پر مشتمل ہے۔

سلور میڈل خالص چاندی سے تیار کیا گیا ہے جبکہ برونز میڈل کے لیے 95 فیصد کاپر اور 5 فیصد زنک کو استعمال کیا گیا۔

تو یہ دھاتیں کیسے اکٹھی کی گئیں؟

اس مقصد کے لیے لیے ٹوکیو 2020 میڈل پراجیکٹ اپریل 2017 میں شروع کیا گیا جو مارچ 2019 تک جاری رہا، جس دوران میڈلز کو تیار کیا گیا۔

دھاتوں کے حصول کے لیے 78 ٹن سے زیادہ پرانے اسمارٹ فونز، لیپ ٹاپ اور دیگر برقی ڈیوائسز کو اکٹھا کیا گیا، جن سے 32 کلو سے زیادہ سونا، لگ بھگ ساڑھے 3 ہزار کلو چاندی اور 22 سو کلو کانسی کو حاصل کیا گیا۔