ایران میں 6.1 شدت کا زلزلہ، پانچ افراد ہلاک

اپ ڈیٹ 02 جولائ 2022
صوبہ کرمان میں 6.6 شدت کے زلزلے کے نتیجے میں 31ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو گئے تھے— فائل فوٹو: اے ایف پی
صوبہ کرمان میں 6.6 شدت کے زلزلے کے نتیجے میں 31ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو گئے تھے— فائل فوٹو: اے ایف پی

جنوبی ایران میں 6.1شدت کے زلزلے میں کم از کم پانچ افراد ہلاک اور ایک درجن سے زائد زخمی ہو گئے۔

خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق اس زلزلے کے بعد ملک میں 6.3شدت کے مزید دو زلزلے بھی آئے۔

مزید پڑھیں: ایران میں زلزلہ، 700 سے زائد افراد زخمی

ایران کے سرکاری ٹی وی کے مطابق صوبہ ہرمزگان میں ایمرجنسی مینجمنٹ کے سربراہ مہرداد حسین زادہ نے بتایا کہ زلزلے میں پانچ افراد مارے گئے جبکہ اب تک 12 سے زائد زخمیوں کو ہسپتال میں داخل کرایا جا چکا ہے، ریسکیو کا کام جاری ہے اور ہم ایمرجنسی بنیادوں پر رہائش کے لیے ٹینٹ فراہم کررہے ہیں۔

سرکاری نیوز ایجنسی ارنا کے مطابق 6.3 اور 6.1 شدت کے زلزلوں سے قبل ایک 6.1شدت کا ایک اور زلزلہ بھی آیا تھا جس سے ایرانی گاؤں سائے خوش بری طرح متاثر ہوا اور کئی مکان زمین بوس ہو گئے، اس کے بعد ایک درجن سے زائد آفٹر شاکس بھی آئے۔

بندر لینگے کے گورنر فواد مراد زادہ نے کہا کہ تمام افراد پہلے زلزلے میں ہی ہلاک ہوئے اور بعد میں آنے والے دو زلزلوں میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا کیونکہ لوگ پہلے ہی خوف کے مارے اپنے گھروں میں آ گئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں: ایران کے مغربی علاقے میں زلزلہ، 115 افراد زخمی

ادھر خلیج ٹائمز کے مطابق متحدہ عرب امارات میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے۔

ایران کی اہم جغرافیائی فالٹ لائنز پر گزرے سالوں کے دوران کئی تباہ کن زلزلے آئے ہیں اور 2003 میں صوبہ کرمان میں 6.6 شدت کے زلزلے کے نتیجے میں 31ہزار سے زائد افراد ہلاک اور شہر بام صفحہ ہستی سے مٹ گیا تھا۔

متحدہ عرب امارات میں بھی زلزلے کے جھٹکے

متحدہ عرب امارات کے رہائشیوں نے جمعہ اور ہفتے کی درمیانی شب دو مرتبہ زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے اور خوف کے عالم میں شہری زڑکوں پر نکل آئے۔

کچھ شہریوں نے یہ دعویٰ تک کیا کہ وہ زلزلے کے جھٹکوں کی وجہ سے نیند سے جاگ گئے جبکہ کچھ نے فرنیچر اور دیگر سامان ہلنے تک کا دعویٰ کیا۔

یہ جھٹکے دبئی سے شارجہ اور ابوظبی سے راس الخیمہ تک ایک بڑے علاقے میں محسوس کیے گئے جہاں کچھ ٹوئٹر صارفین کے مطابق یہ جھٹکے پانچ منٹ تک محسوس کیے جاتے رہے۔

معروف پاکستانی میزبان فخر عالم نے ٹوئٹ کرتے ہوئے زلزلے کو انتہائی خطرناک قرار دیا اور کہا کہ انہوں نے دبئی میں 20سال رہائش کے دوران اتنے طویل زلزلے کے جھٹکے محسوس نہیں کیے۔

انہوں نے دوبارہ ٹوئٹ کرتے ہوئے ایک اور زلزلے کے جھٹکے کی اطلاع دی اور بتایا کہ یہ پہلے والے جھٹکوں جتنا ہی طویل تھا، لوگوں نے ان کے آس پاس عمارتیں خالی کرنی شروع کردی ہیں اور وہ بھی خود پارکنگ لاٹ میں بیٹھے ہوئے ہیں۔

ضرور پڑھیں

تبصرے (0) بند ہیں