جنوبی افریقہ کی پہلی سیاہ فام دوشیزہ مس یونیورس منتخب

صنفی تفریق کے خاتمے کے لیے کام کرنے والی متحرک سماجی کارکن 26 سالہ ززیبنی تنزی نے تاریخ رقم کردی۔
اپ ڈیٹ دسمبر 15, 2019 01:50pm

اگرچہ ماضی میں امریکا سمیت دیگر ممالک سے تعلق رکھنے والی سیاہ فام دوشیزائیں خوبصورتی کے عالمی مقابلے ’مس یونیورس‘ کا اعزاز اپنے نام کر چکی ہیں۔

تاہم اب پہلی بار جنوبی افریقہ ملک سے تعلق رکھنے والی سیاہ فام خاتون نے ’مس یونیورس‘ کا اعزاز حاصل کرلیا۔

یہ بھی پڑھیں: فلپائن کی دوشیزہ مس یونیورس منتخب

صنفی تفریق کے خلاف جدوجہد کرنے والی ’مس جنوبی افریقہ‘ 26 سالہ ززیبنی تنزی نے یورپی ملک جارجیا میں ہونے والے ’مس یونیورس 2019‘ کا مقابلہ جیت کر نئی تاریخ رقم کردی۔

آخری مرحلے سے قبل ہونے والے اہم مرحلے میں تین دوشیزائیں پہنچیں تھیں—فوٹو: رائٹرز
آخری مرحلے سے قبل ہونے والے اہم مرحلے میں تین دوشیزائیں پہنچیں تھیں—فوٹو: رائٹرز

’مس یونیورس 2019‘ کے مقابلے میں بھارت، جنوبی افریقہ، امریکا، برطانیہ، میکسیکو، پیوٹوریکو، ہنڈراس، وینزویلا، فلپائن، آسٹریلیا، چین، جاپان اور اسپین سمیت مجموعی طور پر 90 ممالک کی دوشیزاؤں نے حصہ لیا۔

مقابلے میں 90 دوسیزائیں شریک ہوئیں—فوٹو: اے ایف پی
مقابلے میں 90 دوسیزائیں شریک ہوئیں—فوٹو: اے ایف پی

’مس یونیورس‘ کے مقابلے میں اپنے اپنے ملک کا دفاع کرنے والی دوشیزائیں اپنے ممالک میں خوبصورتی کے مقابلے جیت کر یا پھر ان میں فرسٹ رنر کا اعزاز حاصل کرنے کے بعد عالمی مقابلے میں پہنچی تھیں۔

پہلی بار جنوبی افریقہ سے سیاہ فام لڑکی منتخب ہوئی ہے—فوٹو: اے ایف پی
پہلی بار جنوبی افریقہ سے سیاہ فام لڑکی منتخب ہوئی ہے—فوٹو: اے ایف پی

’مس یونیورس کے آخری مرحلے سے قبل ہونے اہم ترین مرحلے میں جنوبی افریقی دوشیزہ سمیت میکسیکو اور پیوٹو ریکو کی دوشیزہ کے درمیان مقابلہ تھا۔

ززیبنی تنزی نے آخر میں کہا وہ آنے والی نسل کو منفرد زاویے سے خوبصورتی دکھانا چاہتی ہے—فوٹو: رائٹرز
ززیبنی تنزی نے آخر میں کہا وہ آنے والی نسل کو منفرد زاویے سے خوبصورتی دکھانا چاہتی ہے—فوٹو: رائٹرز

مذکورہ مرحلے میں میکسیکو کی دوشیزہ مقابلہ ہار گئیں اور وہ دوسری رنز اپ قرار پائیں۔

’مس یونیورس 2019‘ کے آخری اور فیصلہ کن مرحلے میں پیوٹو ریکو اور جنوبی افریقہ کی دوشیزہ کے درمیان مقابلہ تھا۔

میکسیکو کو دوشیزہ دوسری رنر اپ قرار پائیں—فوٹو: رائٹرز
میکسیکو کو دوشیزہ دوسری رنر اپ قرار پائیں—فوٹو: رائٹرز

پیوٹو ریکو کی دوشیزہ 24 سالہ میڈیسن ایںڈرسن کے حوالے سے خیال کیا جا رہا تھا کہ وہ اس بار ’مس یونیورس‘ کا اعزاز جیتنے میں کامیاب جائیں گی۔

پیوٹو ریکو کی دوشیزہ فرسٹ رنر اپ قرار پائیں—فوٹو: رائٹرز
پیوٹو ریکو کی دوشیزہ فرسٹ رنر اپ قرار پائیں—فوٹو: رائٹرز

جنوبی افریقی دوشیزہ کے مقابلے پیوٹو ریکو کی دوشیزہ کو گوری رنگت اور قدر آور ہونے کی وجہ سے اہمیت حاصل تھیں اور عام لوگوں کا خیال تھا کہ وہیں فاتح قرار پائیں گی۔

سابق مس یونیورس نے ززیبنی تنزی کو تاج پہنایا—فوٹو: رائٹرز
سابق مس یونیورس نے ززیبنی تنزی کو تاج پہنایا—فوٹو: رائٹرز

تاہم مقابلے میں حیران کن طور پر جنوبی افریقی دوشیزہ 26 سالہ ززیبنی تنزی کو ’مس یونیورس 2019‘ کا فاتح قرار دے دیا گیا۔

وہ اپنے ملک کی پہلی سیاہ فام لڑکی ہیں جنہوں نے یہ اعزاز جیتا ہے، اس سے قبل جنوبی افریقہ سے یہ ٹائیٹل جیتنے والی تمام لڑکیاں سفید فام تھیں۔

اعزاز جیتنے کے بعد ززیبنی تنزی جذباتی ہوگئیں—فوٹو: رائٹرز
اعزاز جیتنے کے بعد ززیبنی تنزی جذباتی ہوگئیں—فوٹو: رائٹرز

’مس یونیورس 2019‘ کا اعزاز حاصل کرنے سے قبل انہوں نے اپنے آخری الفاظ میں مقابلے کے دوران کہا کہ وہ چاہتی ہیں کہ انہیں یہ اعزاز دے کر آنے والی نسل کو مختلف زاویے سے خوبصورتی دیکھنا کا موقع دیا جائے۔

ززیبنی تنزی جنوبی افریقہ میں صنفی تفریق کے حوالے سے کام بھی کرتی ہیں—فوٹو: اے ایف پی
ززیبنی تنزی جنوبی افریقہ میں صنفی تفریق کے حوالے سے کام بھی کرتی ہیں—فوٹو: اے ایف پی

مس یونیورس ززیبنی تنزی نے کہا کہ انہیں ان کی رنگت کی وجہ سے خوبصورت نہیں مانا جاتا، تاہم وہ اس رائے سے اتفاق نہیں کرتیں اور وہ چاہتیں ہیں کہ انہیں موقع دیا جائے تاکہ بچے انہیں دیکھ کر خوبصورتی کے نئے زاویے سے بھی واقف ہوں۔ انہیں سابق مس یونیورس فلپائن کی دوشیزہ کیتریونا گرے نے سر پر تاج پہنایا۔

ززیبنی تنزی نے اپنی جیت کو سیاہ فام خواتین کی جیت قرار دیا—فوٹو: اے ایف پی
ززیبنی تنزی نے اپنی جیت کو سیاہ فام خواتین کی جیت قرار دیا—فوٹو: اے ایف پی