’کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ترکی تیار تھا!‘

03 اپريل 2020

ای میل

چند سال پہلے جب استنبول جانے کا اتفاق ہوا تو اس وقت اس شہرِ دلربا کی رنگینیاں عروج پر تھیں اور کوچۂ و بازار اوراقِ مصور کی مانند سجیلے سیاحوں سے بھرے ہوئے تھے لیکن آج بابا بلھے شاہ کے الفاظ میں

گلیاں ہوجان سنجیان

وچ مرزا یار پھرے

(گلیاں ویران ہوجائیں اور ان میں میرا محبوب بے خوف گھومتا پھرے) کے مصداق استنبول کے گلی کوچے سنسان ہوچکے ہیں اور ان میں کوئی محبوب گھومتا پھرتا نظر نہیں آتا۔

آج یہی صورتحال میرے پیارے شہر کراچی اور دنیا بھر کی ہے۔ کورونا وائرس کی وبا نے اربوں انسانوں کو گھر میں مقید کردیا ہے۔ ہر گلی کوچہ سنسان اور ہنستے بستے انسانوں سے خالی ہے، ہر جانب موت کے سیاہ سائے منڈلاتے نظر آرہے ہیں۔

استنبول کا خالی میٹرو اسٹیشن
استنبول کا خالی میٹرو اسٹیشن

چین، اٹلی، اسپین، امریکا، کوریا، ایران اور پاکستان کہیں سے بھی اچھی خبریں نہیں آرہی ہیں۔ سائنس و ٹیکنالوجی کی ترقی کے باوجود کورونا وائرس قابو سے باہر ہوتا جارہا ہے۔ طبّی عملہ اس جنگ میں ہراول دستہ بنا اپنی جان پر کھیل کر دوسروں کی جان بچا رہا ہے۔ لیبارٹریوں میں سائنسداں دن رات اس وائرس کا توڑ ڈھونڈنے میں مصروف ہیں۔ پوری دنیا میں ایک افراتفری کا عالم ہے۔

ایسے میں ہمارا دوست ترکی واحد ایسا ملک نظر آتا ہے جہاں کا منظرنامہ کسی حد تک پُرسکون سا ہے، ایسا نہیں ہے کہ وہاں کورونا وائرس کے تاریک سائے نہیں پھیلے لیکن اس کے باوجود کوئی افراتفری نظر نہیں آتی۔ ترکی اس مشکل وقت سے کیسے نبرد آزما ہورہا ہے، اس کی حکمتِ عملی کیا ہے؟ ان سوالوں کے جوابات میں ہمارے سیکھنے کے لیے بہت کچھ ہے۔

ترکی کی نیوز ایجنسی اناطولیہ کے مطابق اگرچہ کورونا وائرس سے متاثرہ افراد ترکی میں بھی موجود ہیں مگر 2 درجن سے زیادہ ممالک نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ترکی کے ساتھ مشترکہ حکمتِ عملی پر کام کرنے کے لیے رابطہ کیا ہے، کیونکہ ترکی کی کامیاب حکمتِ عملی کی بدولت متاثرہ افراد کی تعداد دن بہ دن کم ہوتی جارہی ہے۔

اس حوالے سے 26 ممالک کے سفارت خانوں اور ان کے وزرائے صحت نے براہِ راست ترکی سے معاونت کی درخواست کی ہے۔ ان ممالک میں ایران، اٹلی اور جنوبی کوریا جیسے بُری طرح سے متاثر ہونے والے ممالک شامل ہیں۔

مشرقی پڑوسی ایران میں کورونا کے بدترین پھیلاؤ کے باوجود اگر ترکی میں کورونا تیزی سے نہیں پھیلا تو اس میں کسی خوش قسمتی یا کسی اتفاق کا دخل نہیں ہے بلکہ یہ ترک قیادت کی بصیرت ہے کہ وبا کے ابتدائی دنوں میں جب بہت سے ممالک ابھی احتیاطی اقدامات اٹھانے سے متعلق سوچ و بچار میں مصروف تھے تب ترک حکومت نے سرحدیں بند کردی تھیں۔ جب دیگر ممالک میں اکا دکا کیس ہی سامنے آرہے تھے ترکی نے انہی دنوں میں اپنی سرحدوں پر تھرمل اسکریننگ شروع کردی تھی۔

استنبول—اے ایف پی
استنبول—اے ایف پی

جنوری میں وزارتِ صحت نے استنبول کے ایئر پورٹ پر 3 تھرمل کیمرے بھی نصب کردیے تھے۔ یاد رہے کہ استنبول کو دنیا کا گیٹ وے بھی کہا جاتا ہے جہاں لاکھوں سیاح استنبول گھومنے تو آتے ہی ہیں لیکن یہاں لاکھوں کی تعداد میں ایسے لوگ بھی آتے ہیں جو یہاں سے اپنی اگلی منزل کے لیے فلائٹ تبدیل کرتے ہیں۔

بعدازاں احتیاطی تدابیر کو صرف اسکریننگ تک محدود نہیں رکھا گیا بلکہ چین سے آنے والے ہر مسافر کو قرنطینہ میں بھی رکھا جانے لگا۔ بعد میں یہ احتیاطی تدابیر دیگر ممالک سے آنے والوں کے لیے بھی بڑھا دی گئیں۔ صورتحال جیسے جیسے تشویشناک ہوئی تو کھانسی و بخار سے متاثرہ ہر مسافر کا انفرادی چیک اپ بھی کیا جاتا رہا۔

ایران کی خراب ہوتی صورتحال میں ترکی نے اپنے تمام شہریوں کو وہاں سے بلوالیا اور ایک خصوصی پرواز سے عملے کے علاوہ 142 ترک شہری واپس لائے گئے اور سب کو قرنطینہ میں رکھا گیا۔

تمام سرحدیں بند کردینے اور ملک میں آنے والے ہر مسافر کی کڑی نگرانی کے باوجود احتیاطی تدابیر کے طور پر استنبول میونسپلٹی نے میٹرو بس کے 44 اسٹیشن پر ہینڈ سینیٹائزر لگادیے۔ ہنر مند اسکولوں کو سینیٹائزر کی تیاری پر لگا دیا گیا۔ اساتذہ طلبا کو اس حوالے سے آگاہی دیتے رہے اور والدین کو بھی سختی سے ہدایت دی جاتی رہی کہ وہ بچوں کو پُرہجوم جگہوں سے دُور رکھیں۔ اگرچہ لاک ڈاؤن کا اعلان نہیں کیا گیا مگر لوگوں کو بلاضرورت گھر سے نکلنے سے روک دیا گیا ہے۔

اسی خبر رساں ایجنسی نے یہ دعوٰی بھی کیا کہ ترکی ایسی کورونا وائرس کی ٹیسٹ کٹ تیار کرچکا ہے جس کے نتائج 90 سے 120منٹ میں آجاتے ہیں اور ان نتائج کی درستگی 99.6 فیصد ہے۔ آذربائیجان، جاپان، کرغزستان، قطر، ترکمانستان اور ویتنام سمیت 7 ممالک نے اس ٹیسٹ کٹ کو خریدنے میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔

پروفیسر ڈاکٹر خلیل طوقار نامی ترک شہری سے ہمارا بھائیوں جیسا رشتہ ہے۔ وہ 50 سے زائد کتب کے مصنف اور مترجم ہیں، جن میں سے 30 اردو میں ہیں۔ انہیں حکومتِ پاکستان کی جانب سے2017ء میں اردو زبان و ادب کی خدمات کی بنا پر ’ستارہ امتیاز‘ سے نوازا گیا ہے۔ وہ اگرچہ ترک شہری ہیں مگر اردو زبان میں ان کی گراں قدر خدمات اور پاکستان سے محبت کو دیکھ کر ترکی میں لوگ انہیں پاکستان کا سفیر قرار دیتے ہیں۔ ان کی اہلیہ بھی پاکستانی ہیں۔ ڈاکٹر خلیل طوقار آج کل استنبول یونیورسٹی میں شعبۂ اردو کے سربراہ ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ’ترکی تیار تھا!‘

ان کا کہنا ہے کہ ’ترک حکومت ایسی کسی بھی آفت سے نمٹنے کے لیے کافی عرصے سے تیاری کررہی تھی۔ ہمیں خدشہ تھا کہ ترکی پر کوئی بائیولوجکل حملہ ہوسکتا ہے اس لیے تیاریاں اور احتیاطی تدابیر جاری تھیں۔ ہم طبّی محاذ پر بھی تیار تھے۔ ترک وزارتِ صحت کی جانب سے 2018ء میں جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق ترکی میں ہر ایک لاکھ افراد کے لیے 46 انتہائی نگہداشت یونٹ کے بستر موجود ہیں جبکہ امریکا جیسی سپر پاور کے پاس ایک لاکھ افراد کے لیے 37 اور ایک ارب سے زائد آبادی والے ملک بھارت میں ایک لاکھ افراد کے لیے 2 آئی سی یو ہیں۔

تصاویر بشکریہ اے ایف پی

ڈاکٹر خلیل کا کہنا تھا کہ ’اگرچہ ترکی میں بھی اسکول و یونیورسٹیاں بند ہیں مگر آن لائن تدریس جاری ہے، اسی طرح شاپنگ مال، کیفے، ریسٹورینٹ وغیرہ سب بند ہیں۔ 65 برس سے زائد العمر افراد کی گھر سے باہر نکلنے کی ممانعت ہے۔ ترکی کی مساجد بند نہیں ہیں مگر جمعہ کی نماز اور نماز باجماعت کی ممانعت ہے‘۔

انہوں نے بتایا کہ ’ترکی میں یورپ کی طرح افراتفری اور خوف کی فضا نہیں اور نہ ہی لوگوں نے اشیائے ضرورت کی خریداری کے لیے بازاروں پر حملہ کرکے ان کو خالی کیا ہے کیونکہ حکومت نے اعلان کردیا تھا کہ ترکی کے پاس 2 برس کی اشیائے خور ونوش موجود ہیں اس لیے عوام کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں‘۔

ڈاکٹر خلیل نے ایک اور حیران کن بات بتائی کہ ’جتنے بھی ترک ملک سے باہر تھے اور ترکی واپس آنا چاہتے تھے ان سب کو ترکی لانے کا بندوبست کیا گیا ہے اور یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے۔ یورپ کے مختلف شہروں میں زیرِ تعلیم ڈیڑھ ہزار سے زائد ترک طلبا و طالبات کو ترکی پہنچایا گیا البتہ ان کے لیے ہاسٹلوں کو مختص کیا گیا ہے جہاں وہ 14 دن گزاریں گے تاکہ اگر کوئی مسئلہ ہو تو اس کی پیش بندی کی جاسکے۔ اسی طرح عمرے سے واپس آنے والے بھی ہاسٹلوں میں مقیم ہیں‘۔

جتنے بھی ترک ملک سے باہر تھے اور ترکی واپس آنا چاہتے تھے ان سب کو ترکی لانے کا بندوبست کیا گیا ہے—رائٹرز
جتنے بھی ترک ملک سے باہر تھے اور ترکی واپس آنا چاہتے تھے ان سب کو ترکی لانے کا بندوبست کیا گیا ہے—رائٹرز

وہ یہ اچھی خبر بھی سناتے ہیں کہ ’عوام کو ہر طرح کی طبّی سہولت دہلیز پر فراہم کی جارہی ہے۔ سرکاری اداروں میں 60 سال سے اوپر کی عمر کے تمام افراد، حاملہ خواتین، دودھ پلانے والی مائیں، معذور افراد اور دمے جیسی بیماری میں مبتلا افراد کو چھٹیاں دے دی گئی ہیں۔

اس کے علاوہ وائرس سے حفاظت کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کے باعث بے روزگاری کو بڑھنے سے روکنے کے لیے 20 ہزار افراد کو اسکول ٹیچر کی ملازمتیں فراہم کی گئی ہیں۔ سرکاری و غیر سرکاری تمام عمارتوں، تدریسی اداروں، شاپنگ مالز، میٹرو اور ٹرینوں اور رسل و رسائل کے تمام ذرائع حتیٰ کہ سڑکوں پر بھی جراثیم کش محلول کا چھڑکاؤ کیا جاتا ہے۔‘