جرمنی کا صنعتی ادارے نے ’وولفینسٹائن‘ فرنچائز، جس میں گیمرز نازی افواج سے لڑتے دکھائے دیتے ہیں، پر بحث کے بعد سواسٹیکا اور دیگر نازی کے نشانوں کو ویڈیو گیمز میں استعمال کرنے کی اجازت دے دی۔

واضح رہے کہ اس گیم پر جرمنی کے کرمنل کوڈ کی خلاف ورزی کے الزامات لگائے گئے تھے جس کے مطابق غیر آئینی نشانوں کے استعمال پر پابندی عائد تھی جس میں نازی سواسٹیکا کا نشان بھی شامل ہے۔

اسی طرح وولفنسٹائن ٹو میں ہٹلر کی تصویر کو تبدیل کرتے ہوئے اس کی مونچھیں ہٹائی گئی تھیں جبکہ نازی کے جھنڈے کو تبدیل کرکے تکون نشان دکھایا گیا تھا۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق اس تبدیلی نے گیم کھیلنے والے افراد نے غم و غصے کا اظہار کیا تھا اور کہا تھا کہ گیمز کے ساتھ بھی فلموں جیسا سلوک ہونا چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ فلم کو آرٹ کا عکس مانا جاتا ہے اس لیے اس پر پابندی عائد نہیں ہوتی اور تحقیق، تاریخی اور سائنسی مقاصد کے لیے استعمال ہونے والے مواد پر بھی پابندی نہیں ہوتی۔

خیال رہے کہ جرمنی میں عالمی جنگ دوئم پر مبنی فلموں کو نازی کا نشان دکھانے کی اجازت ہے۔

انٹرٹینمنٹ سوفٹ ویئر ریگولیشن ادارے کا کہنا تھا کہ ویڈیو گیمز کو مستقبل میں جانچا جائے گا کہ آیا وہ اس پابندی سے استثنا پر پوری اترتی ہیں یا نہیں۔