کراچی کنگز کو شکست، کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی دوسری فتح

اپ ڈیٹ 23 فروری 2020

ای میل

ٹائمل ملز نے بابر اعظم کو بولڈ کر کے پویلین واپسی پر مجبور کیا— فوٹو: اے ایف پی
ٹائمل ملز نے بابر اعظم کو بولڈ کر کے پویلین واپسی پر مجبور کیا— فوٹو: اے ایف پی

پاکستان سپر لیگ کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے کپتان سرفراز احمد اور اعظم خان کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت کراچی کنگز کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد 5وکٹوں سے شکست دے دی۔

کراچی کے نیشنل اسٹیڈیم میں کھیلے گئے میچ میں ہوم ٹیم کراچی کنگز نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کا آغاز کیا تو بابر اعظم کے ساتھ شرجیل خان میدان میں اترے۔

دونوں کھلاڑیوں نے اپنی ٹیم کو 31رنز کا آغاز فراہم کیا تاہم گزشتہ میچ کے برعکس ابتدائی اوورز میں کراچی کنگز کے بلے بازوں کو زیادہ کھل کر بیٹنگ کرنے میں مشکلات کا سامنا رہا۔

میچ کے دوران اس وقت ایک تنازع کھڑا ہوا جب نسیم شاہ کی گیند پر بابر اعظم کا کیچ ہوا۔

گلیڈی ایٹرز نے بابر اعظم کے خلاف کیچ کی اپیل کی لیکن امپائر کی جانب سے آؤٹ نہ دیے جانے پر ریویو لے لیا تاہم اس اصل ڈرامائی صورتحال اس وقت پیدا ہوئی جب امپائر نے کافی دیر انتظار کے باوجود اسنیکو ٹیکنالوجی دستیاب نہ ہونے پر شک کا فائدہ بلے باز کو دیتے ہوئے انہیں ناٹ آؤٹ قرار دے دیا۔

اس مرحلے پر کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے کھلاڑیوں اور اسٹیڈیم میں موجود شائقین نے بھی امپائر کے فیصلے پر ناراضی کا اظہار کیا جبکہ سرفراز نے بھی معاملے پر امپائرز سے کافی بحث کی لیکن فیصلہ تبدیل نہ ہوا۔

البتہ اگلے اوور میں ٹائمل ملز نے بابر اعظم کی وکٹیں بکھیر کر اپنی ٹیم کو پہلی کامیابی دلا دی، بابراعظم نے آؤٹ ہونے سے قبل 26 رنز بنائے۔

شرجیل خان پوری اننگز کے دوران جدوجہد کرتے نظر آئے اور 12 گیندوں پر 6 رنز بنانے کے بعد محمد نواز کی گیند پر انہی کو کیچ دے بیٹھے۔

ایلکس ہیلز نے ایک اینڈ سے اطمینان سے بیٹنگ کی لیکن دوسرے اینڈ سے کیمرون ڈیلپورٹ نے اننگز کے آغاز سے ہی جارحانہ انداز اپنایا اور اس دوران وہ آؤٹ ہونے سے بھی بال بال بچے جب باؤنڈری پر سہیل خان ان کا کیچ لینے میں ناکام رہے اور وہ باؤنڈری کے پار چلی گئی۔

تاہم وہ اس موقع سے فائدہ نہ اٹھا سکے اور اگلے اوور میں چھکا مارنے کی کوشش میں سہیل خان کی گیند پر نواز کو کیچ دے بیٹھے جبکہ اگلے اوور میں حسنین کی کاوش سے چیڈوک والٹن بھی رن آؤٹ ہو کر پویلین لوٹے۔

کراچی کنگز کو مشکل وقت میں ایلکس ہیلز سے بڑی اننگز کی امید تھی لیکن وہ بھی صرف 29 رنز بنانے کے بعد محمد حسنین کی وکٹ بن گئے۔

گزشتہ میچ میں نصف سنچری بنانے والے کپتان عماد وسیم بھی اس مرتبہ ناکامی سے دوچار ہوئے اور صرف 8 رنز بنانے کے بعد رن آؤٹ ہو گئے۔

کرس جورڈن نے ٹائمل ملز کو ایک چوکا اور چھکا لگایا لیکن 150کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے کرائی گئی گیند پر دوبارہ اسی کوشش میں انہی کو کیچ دے بیٹھے۔

عمید آصف نے اننگز کے آخری اوور میں محمد حسنین کو لگاتا دو چوکے لگائے لیکن تیسری گیند پر وکٹیں محفوظ نہ رکھ سکے۔

کراچی کنگز نے مقررہ اوورز میں 9وکٹوں کے نقصان پر 156 رنز بنائے، افتخار احمد نے 25رنز بنائے۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی جانب سے محمد حسنین تین وکٹیں لے کر سب سے کامیاب باؤلر رہے جبکہ ٹائمل ملز نے دو وکٹیں لیں۔

157رنز کے ہدف کے تعاقب میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اننگز کا آغاز کیا تو شین واٹسن اور جیسن روئے نے اپنی ٹیم کو 41رنز کا آغاز فراہم کیا۔

واٹسن اچھی فارم میں نظر آئے لیکن ایک موقع پر دو رنز لینے کی کوشش میں وہ رن آؤٹ ہو کر پویلین لوٹ گئے۔

ٹیم کی نصف سنچری مکمل ہوئی تو مستقل جدوجہد کرنے والے جیسن روئے ایک رن لینے کی کوشش میں بلا گراؤنڈ نہ کر سکے اور رن آؤٹ قرار پائے۔

اگلے ہی اوور میں چھکا مارنے کی کوشش میں احمد شہزاد بھی جورڈن کے ہاتھوں کیچ ٹیم کو بیچ منجدھار میں چھوڑ کر پویلین لوٹ گئے۔

اس کے بعد اعظم خان اور کپتان سرفراز احمد وکٹ پر اکٹھا ہوئے اور دونوں نے ذمے دارانہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے اسکور کو آگے بڑھانا شروع کیا۔

دونوں کھلاڑی چوتھی وکٹ کے لیے 85رنز کی شراکت قائم کر کے اپنی ٹیم کو میچ میں واپس لے آئے، اس دوران ارشد اقبال کے ایک اوور میں بنائے گئے 17رنز نے میچ کا نقشہ بدل دیا۔

اعظم نے ایک مرتبہ پھر بہترین کھیل پیش کرتے ہوئے 30گیندوں پر 46رنز کی اننگز کھیلی لیکن ایک غلط فہمی کے نتیجے میں ان کی اننگز بھی رن آؤٹ کی شکل میں اختتام کو پہنچی جبکہ نواز بھی جورڈن کی وکٹ بن گئے۔

تاہم 19ویں اوور میں انور علی نے چوکا اور پھر چھکا لگا کر اپنی ٹیم کو ایک اوور قبل ہی فتح سے ہمکنار کرادیا، سرفراز احمد 37رنز کے ساتھ ناقابل شکست رہے۔

اس میچ میں 5وکٹوں سے فتح کے ساتھ ہی کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے دو قیمتی پوائنٹس بھی حاصل کر لیے۔

میچ کے لیے دونوں ٹیمیں ان کھلاڑیوں پر مشتمل تھیں۔

کراچی کنگز: عماد وسیم (کپتان)، ایلکس ہیلز، بابر اعظم، چیڈوک والٹن، شرجیل خان، افتخار احمد، کیمرون ڈیلپورٹ، عمید آصف، محمد عامر، کرس جورڈن اور ارشد اقبال

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز: سرفراز احمد (کپتان)، جیسن روئے، احمد شہزاد، شین واٹسن، اعظم خان، انور علی، محمد نواز، محمد حسنین، نسیم شاہ، ٹائمل ملز، سہیل خان اور محمد حسنین۔