اسپین کی ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ بھی کورونا کا شکار

اپ ڈیٹ 30 مارچ 2020

ای میل

ہیلتھ ایمرجنسی کے سربراہ میں کچھ علامات دکھنے کے بعد ان کا ٹیسٹ کیا گیا—فوٹو: ٹیلی سسنو
ہیلتھ ایمرجنسی کے سربراہ میں کچھ علامات دکھنے کے بعد ان کا ٹیسٹ کیا گیا—فوٹو: ٹیلی سسنو

کورونا وائرس سے تیزی سے متاثر ہونے والے یورپی ملک اسپین کی ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ بھی کورونا وائرس کا شکار بن گئے۔

اسپین کی حکومت نے کورنا وائرس سے نمٹنے کے لیے خصوصی ہیلتھ کمیشن بنائی تھی جو مسلسل وزیر اعظم سمیت دیگر اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ رابطے میں رہنے سمیت ہسپتالوں اور ماہرین صحت سے رابطے میں تھی۔

ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ 57 سالہ فرنانڈو سائمن گزشتہ کئی ہفتوں سے کورونا وائرس کے حوالے سے انتہائی متحرک تھے اور وہ اسپین کے وزیر اعظم سے بھی ملاقاتیں کرتے رہتے تھے۔

خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق 57 سالہ فرنانڈو سائمن کو کورونا وائرس سے متعلق کچھ علامات ظاہر ہوئیں تو انہوں نے اپنا ٹیسٹ کروایا جو کہ مثبت آیا۔

فرنانڈو سائمن کے کورونا کے شکار ہونے کے بعد ان کی جگہ ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کی نائب سربراہ خاتون ماریہ جوز سیرا نے ذمہ داریاں سنبھال لیں اور انہوں نے ہی ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ کے کورونا میں شکار ہونے کی خبر کی تصدیق کی۔

خصوصی ہیلتھ ایمرجنسی کمیشن کی سربراہی ماریہ جوز نے سنبھال لیں—فوٹو: لا موریلجا
خصوصی ہیلتھ ایمرجنسی کمیشن کی سربراہی ماریہ جوز نے سنبھال لیں—فوٹو: لا موریلجا

ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کی ذمہ داریاں سنبھالنے والی ماریہ جوز سیرا نے میڈیا کو بتایا کہ اگرچہ اسپین میں کورونا وائرس کے کیسز تیزی سے سامنے آ رہے ہیں مگر ان کی رفتار گزشتہ ہفتے کے مقابلے کم ہوئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ گزشتہ ہفتے تک ہر 24 گھنٹے میں گزشتہ دن کے مقابلے 20 فیصد زیادہ کیسز سامنے آ رہے تھے، تاہم اب ان کی تعداد کم ہوکر 12 فیصد تک جا پہنچی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کورونا وائرس: اسپین میں پہلی بار ریکارڈ 838 ہلاکتیں

ایمرجنسی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ میں کورونا کی تشخیص کے بعد وزیر اعظم سمیت کئی اعلیٰ سرکاری عہدیداروں میں بھی کورونا کا شبہ ظاہر کیا جا رہا ہے، تاہم تاحال حکام نے اس حوالے سے کوئی وضاحت جاری نہیں کی کہ دیگر عہدیدار اپنا ٹیسٹ کروائیں گے یا نہیں۔

اسپین میں آخری تین دن میں 3 ہزار کے قریب ہلاکتیں ہوئیں—فوٹو: ایل پیس
اسپین میں آخری تین دن میں 3 ہزار کے قریب ہلاکتیں ہوئیں—فوٹو: ایل پیس

اسپین میں کورونا وائرس کے مریض 30 مارچ کی دوپہر کو ہی چین سے زیادہ بڑھ گئے تھے اور شام تک وہاں مریضوں کی تعداد بڑھ کر 85 ہزار سے زائد ہوچکی تھی اور وہاں ہلاکتوں کی تعداد بڑھ کر 7 ہزار 340 تک جا پہنچی تھی۔

مزید پڑھیں: کورونا وائرس سے اسپین کی شہزادی ہلاک

اسپین میں گزشتہ تین دن سے یومیہ 700 سے 830 کے درمیان ہلاکتیں ہو رہی ہیں اور محض آخری تین دن میں وہاں 3 ہزار کے قریب ہلاکتیں ہو چکی ہیں۔

اسپین میں شاہی خاندان کا حصہ سمجھے جانے والے خاندان ہاؤس آف بوربون پرما کی ایک شہزادی بھی کورونا وائرس کی وجہ سے ہلاک ہوچکی ہیں۔

یہ خاندان اسپین کے شاہی خاندان کا ہی حصہ ہے اور یہ شاہی خاندان کے ددیال کے خاندانوں پر مشتمل ہے۔

اسی خاندان کی 86 سالہ شہزادی ماریہ ٹیریسا 29 مارچ کو کورونا کے باعث ہلاک ہوگئی تھیں۔

ہلاک ہونے والی 86 سالہ شہزادی اسپین کے بادشاہ فلیپ (4) کی کزن تھیں جبکہ ان کی موت کی تصدیق ان کے بھائی کی جانب سے کی گئی۔

شہزادی ماریہ ٹیریسا کورونا سے ہلاک ہونے والی دنیا کی پہلی شاہی شخصیت بنیں—فوٹو: شٹر اسٹاک
شہزادی ماریہ ٹیریسا کورونا سے ہلاک ہونے والی دنیا کی پہلی شاہی شخصیت بنیں—فوٹو: شٹر اسٹاک