غیر ملکی سرمایہ کاری میں 22 فیصد تک کمی

اپ ڈیٹ 22 اگست 2019

ای میل

دیکھا جائے تو مالی سال 19-2018 پیسے کی آمد کے حوالے سے مایوس کن رہا—فائل فوٹو: اے ایف پی
دیکھا جائے تو مالی سال 19-2018 پیسے کی آمد کے حوالے سے مایوس کن رہا—فائل فوٹو: اے ایف پی

کراچی: اسٹیٹ بینک کی رپورٹ کے مطابق رواں مالی سال کے پہلے ماہ میں غیر ملکی سرمایہ کاری میں 22 فیصد کمی ہوئی۔

رواں برس جولائی میں ہونے والی سرمایہ کاری کا مجموعی حجم 10 کروڑ 72 لاکھ ڈالر رہا جو گزشتہ برس اسی ماہ میں ہونے والی 13 کروڑ 68 لاکھ ڈالر کی سرمایہ کاری سے 21.64 فیصد کم ہے۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق یہ صورتحال ممکنہ طور پر حکومت کے لیے پریشان کن ہوسکتی ہے جسے اقتدار سنبھالنے کے وقت سے اب تک کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کی وجہ سے ڈالرز کی کمی کا سامنا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری میں تقریباً 50 فیصد کمی

اس کی باعث براہِ راست غیر ملکی سرمایہ کاری (ایف ڈی آئی) 17 کروڑ 39 لاکھ ڈالر سے 57.79 فیصد کم ہو کر 7 کروڑ 34 لاکھ ڈالر ہوگئی جبکہ پورٹ فولیو سرمایہ کاری بھی 19.66 فیصد کمی کے بعد 3 کروڑ 39 لاکھ ڈالر ہوگئی، جو گزشتہ برس جولائی میں 4 کروڑ 22 لاکھ ڈالر تھی۔

اگر دیکھا جائے تو مالی سال 19-2018 پیسے کی آمد کے حوالے سے مایوس کن رہا جس میں سالانہ ایف ڈی آئی مالی سال 2018 کے 3 ارب 23 کروڑ ڈالر کے مقابلے 61 فیصد کمی کے باعث ایک ارب 25 کروڑ 10 لاکھ ڈالر کی سطح تک کم ہوئی۔

یہ واضح کمی سرمایہ کاروں کے لیے منفی تاثر کو ابھار رہی ہے جو اپنی سرمایہ کاری کے حوالے سے محتاط ہیں جبکہ یہ سطح کئی سالوں سے نیچے کی جانب جارہی ہے۔

مزید پڑھیں: براہ راست غیرملکی سرمایہ کاری 4 سال کی کم ترین سطح پر آگئی

اس کے ساتھ ہی چین کی جانب سے ہونے والی سرمایہ کاری میں کمی دکھی گئی جو پاک چین اقتصادی راہداری (سی پیک) کے تناظر میں بلند ترین سطح پر جاپہنچی تھی۔

جولائی میں چینی سرمایہ کاری مجموعی طور پر 45 لاکھ ڈالر رہی جو گزشتہ برس اسی عرصے کے دوران 9 کروڑ 6 لاکھ ڈالر تھی۔

اس ضمن میں وزیراعظم عمران خان نے چند روز قبل سی پیک کے تمام منصوبوں کی بروقت تکمیل پر زور دیا تھا لیکن کاروباری حلقوں میں یہ تاثر فروغ پارہا ہے کہ چین نے یہاں اقتصادی سرگرمیوں کی رفتار سست کردی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم نے مالی خسارے میں واضح کمی کو بڑی کامیابی قرار دے دیا

واضح رہے کہ آئل اینڈ گیس سیکٹر کو جولائی میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری سب سے زیادہ ایک کروڑ 32 لاکھ ڈالر رہی جو گزشتہ برس اسی عرصے کے دوران ایک کروڑ 96 لاکھ ڈالر تھی۔

اس کے بعد ٹیکسٹائل کے شعبے میں ایک کروڑ 7 لاکھ ڈالر، ادویہ سازی اور او ٹی سی مصنوعات میں ایک کروڑ 3 لاکھ جبکہ توانائی کے شعبے میں آؤٹ فلو ایک کروڑ 44 لاکھ ڈالر رہا۔