عوام کورونا ویکسین سے متعلق گمراہ کن باتوں پر کان نہ دھریں، معاون خصوصی

اپ ڈیٹ 22 فروری 2021

ای میل

معاون خصوصی نے کہا کہ تمام منظور کی جانے والی ویکسینز کی شدید بیماری میں افادیت کی سطح 90 فیصد سے زائد ہے جو بہترین ہے — فوٹو: ڈان نیوز
معاون خصوصی نے کہا کہ تمام منظور کی جانے والی ویکسینز کی شدید بیماری میں افادیت کی سطح 90 فیصد سے زائد ہے جو بہترین ہے — فوٹو: ڈان نیوز

وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا ہے کہ عوام کورونا ویکسین سے متعلق گمراہ کن اور جھوٹی باتوں پر کان نہ دھریں اور ویکسین لگوانے میں سستی سے کام نہ لیں۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ معمر افراد کو ویکسین لگانے کے لیے رجسٹریشن کا سلسلہ چل رہا ہے، پہلے ہم نے 65 سال سے زائد عمر کے افراد کے لیے رجسٹریشن کا آغاز کیا تھا اب دو روز قبل 60 سال سے زائد عمر کے افراد کی رجسٹریشن کا بھی آغاز ہوچکا ہے اور امید ہے کہ ان افراد کو مارچ کے پہلے ہفتے سے ویکسین لگانا شروع کردی جائے گی اور انہیں ایسٹرازینیکا ویکسین لگائی جائے گی۔

انہوں نے ہیلتھ کیئر ورکرز اور ویکسین کے اہل تمام افراد سے اپیل کی کہ وہ آگے بڑھ کر ناصرف اپنے بچاؤ بلکہ ارد گرد وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے یہ ویکسین لگوائیں۔

مختلف ویکسینز کی افادیت سے متعلق اٹھائے جانے والے سوالات کے حوالے سے ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ تمام منظور کی جانے والی ویکسینز کی شدید بیماری میں افادیت کی سطح 90 فیصد سے زائد ہے جو بہترین ہے، لہٰذا لوگ یہ ویکسینز لگوانے سے نہ ہچکچائیں۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان میں 72 ہزار سے زائد فرنٹ لائن طبی عملے کو ویکسین لگادی گئیں

انہوں نے کہا کہ 60 سال سے زائد عمر کے ہیلتھ کیئر ورکرز کو بھی ترجیحی بنیادوں پر ایسٹرازینیکا ویکسین لگائی جائے گی۔

معاون خصوصی نے عوام سے اپیل کی کہ وہ ویکسین سے متعلق گمراہ کن اور جھوٹی باتوں پر کان نہ دھریں اور ویکسین لگوانے میں سستی سے کام نہ لیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ویکسین لگوانے کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ہم کورونا سے متعلق احتیاطی تدابیر بھول جائیں، احتیاط اب بھی ضروری ہے۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ ہم نے کورونا ویکسین کے متعلق ابھی بڑے پیمانے پر مہم اس لیے نہیں چلائی کیونکہ ابھی خوراکین زیادہ تعداد میں نہیں تھیں، تاہم آنے والے دنوں میں بڑے پیمانے پر مہم چلانے کا منصوبہ بنا لیا گیا ہے۔

عالمی سطح پر ایسٹرازینیکا ویکسین کے نتائج کے حوالے سے پائے جانے والے شکوک و شبہات پر ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ اس سے متعلق سامنے آنے والی معلومات نامکمل ہے جس کے باعث عوام ابہام کا شکار ہیں۔

یہ بھی دیکھیں: 'ویکسین لگنے کے بعد بھی ماسک کا استعمال نہ چھوڑیں'

خیال رہے کہ وزیر اعظم کے معاون خصوصی صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا تھا کہ پاکستان کے لیے ابتدائی طور پر کورونا ویکسین کی 2 کروڑ خوراکیں حاصل کی جائیں گی۔

ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی پاکستان (ڈریپ) نے جنوری میں چینی سرکاری کمپنی سائنوفام کی تیار کردہ ایک اور کووڈ 19 ویکسین کی منظوری دی تھی۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاکستان پہلے ہی سائنوفام کی کووڈ 19 ویکسین کی 11 لاکھ خواروں کی پیشگی بکنگ کرچکا ہے۔

16 جنوری کو ڈریپ نے ایسٹرازینیکا کی کووڈ 19 ویکسین کی پاکستان میں ہنگامی استعمال کی اجازت دی تھی۔

ڈاکٹر فیصل سلطان نے ایک بیان میں کہا تھا کہ ڈریپ نے مبینہ طور پر ایسٹرازینیکا کی ویکسین منظور کی جو بھارت کی جانب سے تیار کی جارہی ہے، پاکستان 20 فیصد آبادی کے لیے یہ ویکسین کوویکس کے ذریعے حاصل کرے گا۔