آئین و قانون کی حدوں کو پھلانگ کر اسلام آباد پر دھاوا بولنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، حکمراں اتحاد

اپ ڈیٹ 06 اکتوبر 2022
<p>— فوٹو: اسکرین شاٹ</p>

— فوٹو: اسکرین شاٹ

<p>— فوٹو: اسکرین شاٹ</p>

— فوٹو: اسکرین شاٹ

<p>— فوٹو: اسکرین شاٹ</p>

— فوٹو: اسکرین شاٹ

وزیراعظم شہبازشریف کی زیرصدارت حکومت میں شامل اتحادی جماعتوں کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ آئین اور قانون کی حدوں کو پھلانگ کر وفاقی دارالحکومت پر دھاوا بولنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

اعلامیے کے مطابق 5 اکتوبر کو وزیراعظم شہبازشریف کی زیرصدارت حکومت میں شامل اتحادی جماعتوں کے قائدین اور رہنماﺅں کا اہم اجلاس وزیر اعظم ہاؤس میں منعقد ہوا، جس میں ملک کی مجموعی سیاسی ، معاشی، داخلی اور خارجہ محاذ سے متعلق صورتحال پر تفصیلی غور کیاگیا جبکہ مستقبل کے لئے لائحہ عمل کی منظوری دی گئی۔

اجلاس میں پنجاب اور خیبرپختونخوا کی حکومتوں کو وارننگ دی گئی ہے کہ عمران خان کے آلہ کار بن کر فساد کی راہ ہموار کرنے سے بازرہیں۔

یہ بھی پڑھیں: 23 مارچ تک تھر کول کو ریلوے نظام سے منسلک کرنے کی بھرپور کوشش ہوگی، شہباز شریف

اعلامیے میں بتایا گیا کہ اجلاس میں 14 جون 2022 سے ملک میں تباہ کن تاریخی سیلاب سے ہونے والی اموات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے فاتحہ خوانی کی گئی اور اہل خانہ سے ہمدردی کی گئی۔

مزید کہا گیا کہ وزیراعظم شہبازشریف کی جانب سے “نیشنل فلڈ ریسپانس اینڈ کوآرڈینیشن سینٹر’ کے مرکزی اشتراکی ادارے کی تشکیل کو بروقت اقدام قرار دیتے ہوئے سیلاب متاثرین کے ریسکیو، ریلیف اور بحالی کے لئے اقدامات پر اطمینان کا اظہار کیا۔

— فوٹو: اسکرین شاٹ
— فوٹو: اسکرین شاٹ

اجلاس نے وزیراعظم شہبازشریف کی قائدانہ صلاحیتوں، دن رات محنت اور سیلاب متاثرین کی مدد کے لئے تندہی اور توجہ کو سراہا اور ان کے جذبے کی تعریف کی۔

اعلامیے کے مطابق اجلاس نے وفاقی ، صوبائی حکومتوں، اداروں، ایڈمنسٹریشن خاص طورپر آرمی، نیوی اور بحریہ کے کردار کو خراج تحسین پیش کیا، اجلاس نے مخیر حضرات ، اداروں اور انجمنوں کی طرف سے عطیات اور امدادی کاموں میں ہاتھ بٹانے کے جذبے کی تحسین کی۔

مزید پڑھیں: عمران خان سزا سے بچنے کے لیے ریاستی اداروں میں انتشار پھیلانا چاہتے ہیں، شہباز شریف

وزیرخزانہ سینیٹر اسحٰق ڈار نے اجلاس کو ملک کی معاشی صورتحال، مالیاتی اداروں خاص طورپر ’آئی ایم ایف‘ کے ساتھ ہونے والی بات چیت اور معیشت کی بحالی کے لئے اقدامات کے بارے میں بریفنگ دی اوربتایا کہ سابق حکومت کی چار سال کی تباہ کن پالیسیوں کی وجہ سے قومی معیشت کا کوئی اعشاریہ مثبت نہیں رہا۔

ڈالر 200 روپے سے نیچے آئے گا، اسحٰق ڈار

ان کا کہنا تھا کہ 20 ہزار ارب کا تاریخی قرض محض چار سال میں ملک پر مسلط کرنے والے معیشت کو دیوالیہ ہونے کی نہج پر چھوڑ کر گئے ہیں، گزشتہ پیر سے اب تک ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں نمایاں اضافہ ہوا ہے اور انہیں امید ہے کہ ڈالر 200 روپے سے نیچے آئے گا۔

— فوٹو: اسکرین شاٹ
— فوٹو: اسکرین شاٹ

انہوں نے کہاکہ ہمارے سابق دور میں مہنگائی تین فیصد اور ترقی کی شرح 6.3 فیصد پر تھی، پاکستان کو معاشی استحکام دینے کے لئے تسلسل اور کڑے مالیاتی نظم وضبط کی ضرورت ہوگی۔

حکومت کی اتحادی جماعتوں نے وزیرخزانہ کے اقدامات پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے ان کی کارکردگی کو سراہا، وزیراعظم اور حکومت کی اتحادی جماعتوں کے قائدین نے بجلی کی قیمت میں کمی کو یقینی بنانے کا فیصلہ کیا۔

یہ بھی پڑھیں: سیلاب متاثرین کیلئے بنایا گیا ڈیش بورڈ غیر معیاری قرار، وزیر اعظم کا افتتاح سے انکار

اجلاس میں کہا گیا کہ عوام کی زندگیوں میں سابق حکومت کے اقدامات کی وجہ سے آنے والی تلخیوں میں جلد کمی لانے کے لئے حتی المقدور تیزی سے اقدامات کئے جائیں۔

اعلامیے کے مطابق اجلاس نے ڈپلومیٹک سائفر پر سابق وزیراعظم اور ان کے قریبی ساتھیوں کی منظر عام پر آنے والی آڈیوز کے معاملے پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ملکی سلامتی اور قومی مفادات کے ساتھ سنگین کھیل کھیلنے کی شدید مذمت کی۔

— فوٹو: اسکرین شاٹ
— فوٹو: اسکرین شاٹ

اجلاس نے اس ضمن میں 30ستمبر 2022 کو کابینہ کے اجلاس میں ہونے والے فیصلوں اور حکومتی اقدامات کی مکمل تائیدوحمایت کی اور زور دیا کہ وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کی تحقیقاتی ٹیم ریاست کے خلاف سرزد ہونے والے جرائم اورقومی مفادات پر کاری ضرب لگانے کے معاملے پر تحقیقات جلد مکمل کرے اور آئین وقانون کے مطابق ملوث کرداروں کے خلاف قانونی تقاضے پورے کرنے کا عمل تیز کرے۔

اجلاس میں قومی اداروں پر حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت

اجلاس نے قومی اداروں پر حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے واضح کیا کہ آئین کی کھینچی ہوئی سرخ لکیر کو جو پامال یا عبور کرنے کی کوشش کرے گا، 22 کروڑ عوام اور قانون کی طاقت سے اس کا راستہ روکیں گے۔

مزید پڑھیں: عمران خان کی آڈیو لیک نے غیر ملکی سازش کے بیانیے کو ’چور چور‘ کردیا، وزیراعظم

اداروں کو آئین کی راہ سے ہٹانے والا غدار ، سازشی اور فسادی ہے ۔ اداروں کو آئین کی پامالی کے لئے اکسانے والا پاکستان کو سنگین بحرانوں میں دھکیلنا چاہتا ہے، اس آئین شکن کو قانونی نکیل ڈالنا خود آئین کا تقاضا ہے۔

اجلاس نے فیصلہ کیا کہ آئین اور قانون کی حدوں کو پھلانگ کر وفاقی دارالحکومت پر دھاوا بولنے کی اجازت نہیں دی جائے گی جبکہ صوبہ پنجاب اور خیبرپختونخوا کی صوبائی حکومتوں کو وارننگ دی گئی کہ وہ عمران خان کے آلہ کار بن کر فساد کی راہ ہموار کرنے سے بازرہیں، آئینی لکیر پار کرنے پر قانون کا سامنا کرنا ہوگا۔

تبصرے (0) بند ہیں