الطاف حسین کے بغیر ایم کیو ایم کچھ نہیں: ندیم نصرت

اپ ڈیٹ 20 ستمبر 2016

ای میل

کراچی: متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) لندن کے رہنما ندیم نصرت کا کہنا ہے کہ الطاف حسین نے مہاجروں کو شناخت دی اور ان کے بغیر ایم کیو ایم کچھ نہیں ہے۔

لندن سے جاری اپنے بیان میں ندیم نصرت نے کہا کہ بانی ایم کیو ایم اپنی ذات میں ایم کیوایم ہیں اور ان کے بغیر ایم کیوایم کچھ نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بانی ایم کیو ایم نے ہی مہاجروں کو شناخت دی۔

دوسری جانب لندن میں ہی موجود ایم کیو ایم کے ایک اور رہنما سلیم شہزاد کا کہنا ہے کہ ندیم نصرت اور لندن میں موجود رابطہ کمیٹی پارٹی کو نقصان پہنچانے کے ذمہ دار ہیں۔

سلیم شہزاد نے ایم کیوایم پاکستان کے سربراہ فاروق ستار سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر ندیم نصرت اور دیگرسے اپنی لاتعلقی کا اعلان کریں۔

ایم کیو ایم پاکستان کی بیان سے لاتعلقی

بعد ازاں ایم کیو ایم پاکستان کا ایک اجلاس ہوا جس میں ندیم نصرت کے بیانات کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کے بعد لندن سے جاری ہونے والے ندیم نصرت کے بیان سے لاتعلقی کا اظہار کیا گیا اور واضح کیا گیا کہ اس بیان کو ایم کیو ایم پاکستان کا بیان نہ سمجھا جائے۔

ایم کیو ایم پاکستان کا کہنا تھا کہ ہم 22 اگست کے واقعے کے بعد لندن سے اظہار لاتعلقی کرچکے ہیں۔

مزید پڑھیں:ایم کیو ایم کے فیصلے اب پاکستان میں ہوں گے، فاروق ستار

واضح رہے گذشتہ ماہ 22 اگست کو بانی ایم کیو ایم الطاف حسین نے کراچی پریس کلب پر بھوک ہڑتالی کیمپ میں بیٹھے کارکنوں سے خطاب میں پاکستان مخالف نعرے لگوائے تھے، جس پر کارکنوں نے مشتعل ہوکر نجی نیوز چینل اے آر وائی نیوز کے دفتر پر حملہ کردیا تھا۔

پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ہوائی فائرنگ کی اورآنسو گیس کا استعمال کیا، اس موقع پر فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہوا تھا۔

اسی روز الطاف حسین نے امریکا میں بھی کارکنان سے خطاب کیا تھا، جس کی آڈیو کلپ انٹرنیٹ پر سامنے آئی جس میں الطاف حسین نے کہا کہ 'امریکا، اسرائیل ساتھ دے تو داعش، القاعدہ اور طالبان پیدا کرنے والی آئی ایس آئی اور پاکستانی فوج سے خود لڑنے کے لیے جاؤں گا'۔

بعدازاں 23 اگست کو دیگر رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق ستار نے پارٹی کے تمام فیصلے پاکستان میں کرنے کا اعلان کیا، بعدازاں پارٹی کی جانب سے اپنے بانی اور قائد سے قطع تعلقی کا بھی اعلان کردیا گیا اور ترمیم کرکے تحریک کے بانی الطاف حسین کا نام پارٹی کے آئین اور جھنڈے سے بھی نکال دیا گیا، اسی روز سے ڈاکٹر فاروق ستار نے متحدہ قومی موومنٹ کی سربراہی سنبھال لی تھی۔

الطاف حسین کے پاکستان مخالف بیان پر حکومت متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کے بانی کے خلاف کارروائی کے لیے ریفرنس برطانیہ بھیج چکی ہے۔

وزارت داخلہ کے ترجمان کے مطابق ریفرنس میں برطانیہ سے عوام کو تشدد پر اکسانے اور بدامنی پھیلانے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

ایم کیو ایم کے بانی الطاف حسین کے خلاف قومی اسمبلی میں بھی متفقہ قرارداد منظور ہو چکی ہے، ایوان میں متحدہ قومی موومنٹ کی جانب سے بھی اس قرار داد کی حمایت کی گئی تھی.

یہ بھی پڑھیں: اے آر وائی کے دفتر پر حملہ، فائرنگ سے ایک شخص ہلاک

دوسری جانب ان واقعات کے بعد رینجرز اور پولیس نے شہر بھر میں کارروائیاں کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے مرکزی دفتر نائن زیرو سمیت متعدد سیکٹر اور یونٹ کے دفاتر کو بند کرنے کے ساتھ ساتھ پارٹی کی ویب سائٹ کو بھی بند کردیا تھا۔

ایم کیو ایم پاکستان نے لندن سے لاتعلقی کے بعد اپنی نئی ویب سائٹ بنانے کا بھی اعلان کیا ہے۔