Dawn News Television Logo

خواتین کی جسامت پر لکھے مضمون میں تصویر استعمال کرنے پر اداکارہ جریدے پر برہم

دی اکانومسٹ کی جانب سے عرب خواتین کی جسامت پر لکھے مضمون میں عراقی اداکارہ انس طالب کی تصویر استعمال کی گئی تھی۔
اپ ڈیٹ 12 اگست 2022 07:51pm

برطانوی جریدے کی جانب سے عرب خواتین کی جسامت اور موٹاپے پر لکھے گئے ایک مضمون میں اجازت کے بغیر تصویر استعمال کرنے پر عراقی اداکارہ 42 سالہ انس طالب نے جریدے کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے کا اعلان کردیا۔

’دی اکانومسٹ‘ نے گزشتہ ماہ 28 جولائی کو ’مرد حضرات کے مقابلے عرب خواتین موٹاپے کا شکار کیوں ہوتی ہیں‘ کے عنوان سے ایک مضمون شائع کیا تھا، جس میں مشرق وسطی خواتین کی جسامت پر بات کی گئی تھی۔

مذکورہ مضمون میں جریدے نے عراقی اداکارہ انس طالب کی تصویر فرنٹ پر شائع کی تھی، جس میں وہ فربہ دکھائی دے رہی تھیں۔

دی اکانومنسٹ نے انس طالب کی تصویر استعمال کی تھی—اسکرین شاٹ
دی اکانومنسٹ نے انس طالب کی تصویر استعمال کی تھی—اسکرین شاٹ

جریدے نے مضمون میں عرب ممالک کی خواتین کے موٹاپے کی متعدد وجوہات بیان کی تھیں، جس میں سے ایک وجہ یہ بھی تھی کہ شاید عرب مرد حضرات کو فربہ یا بھاری بھر کم جسم رکھنے والی خواتین زیادہ پسند ہوتی ہیں۔

مضمون میں یہ بھی بتایا گیا تھا کہ عام طور پر عرب ممالک میں سماجی رویوں کی وجہ سے خواتین زیادہ تر گھروں تک محدود رہتی ہیں، جس کی وجہ سے ان میں موٹاپا عام ہے۔

انس طالب نے جریدے کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا آغاز کردیا—Courtesy of Enas / New Lines
انس طالب نے جریدے کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا آغاز کردیا—Courtesy of Enas / New Lines

مضمون میں ایک طرح سے عرب خواتین کی جسامت کو موضوع بحث بنا کر اس حوالے سے کئی باتیں لکھی گئی تھیں، جس پر جریدے کو تنقید کا سامنا بھی رہا۔

تاہم جریدے کی مشکلات میں اس وقت اضافہ ہوا جب عراقی اداکارہ انس طالب نے ’دی اکانومسٹ‘ کے خلاف ہتک عزت کی قانونی چارہ جوئی کا اعلان کیا۔

انس طالب نے ’نیو لائنز‘ میگزین سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ برطانوی جریدے کی جانب سے ان کی فربہ جسامت کی تصاویر شائع کرنے پر انہیں ذہنی و جذباتی صدمہ ہوا ہے اور ان کی اجازت کے بغیر ان کی تصویر شائع کی گئی اور اب وہ جریدے کے خلاف برطانیہ میں ہرجانے کی قانونی چارہ جوئی کریں گی۔

ان کے مطابق ان سے مداح کئی سال سے محبت کرتے آ رہے ہیں، ان کے مداح ان کی جسامت کی پروا کیے بغیر ان کی عزت کرتے ہیں مگر جریدے میں ان کی تصویر شائع ہونے کے بعد انہیں آن لائن تنقید کا بھی سامنا رہا۔

انس طالب نے اسی حوالے سے مختلف عرب ٹی وی چینلز اور ویب سائٹس سے بھی بات کی اور بتایا کہ ان کی ٹیم نے برطانوی جریدے کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی تیاری شروع کردی ہے۔

انس طالب کے مطابق جریدے میں شائع کی گئی ان کی تصویر کو فوٹو شاپ کے ذریعے ایڈٹ کرکے انہیں مزید موٹا دکھایا گیا ہے۔