شرجیل میمن کی وطن آتے ہی گرفتاری و رہائی

اپ ڈیٹ 19 مارچ 2017

ای میل

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے رہنما اور سندھ کے سابق وزیر شرجیل میمن کو قریبا 2 سال بعد وطن واپس آتے ہی ایئرپورٹ سے گرفتار کرنے کے بعد رہا کردیا گیا۔

شرجیل انعام میمن نے 2015 میں خود ساختہ جلا وطنی اختیار کرلی تھی، قریبا 2 سال تک وہ بیرون ملک رہنے کے بعد 18 اور 19 مارچ کی درمیانی شب وفاقی دارالحکومت اسلام آباد پہنچے تو انہیں قومی احتساب بیورو (نیب) کے اہلکاروں نے ایئرپورٹ سے ہی گرفتار کرلیا۔

ڈان نیوز کی رپورٹ کے مطابق نیب راولپنڈی کے اہلکاروں نے شرجیل میمن سے 2 گھنٹے پوچھ گچھ کرنے اور ضمانتی کاغذات دیکھنے کے بعد رہا کردیا۔

خیال رہے کہ سابق صوبائی وزیر اطلاعات شرجیل میمن 20 مارچ 2017 تک اسلام آباد ہائی کورٹ کی حفاظتی ضمانت پر تھے، انہیں عدالت میں پیش ہونا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: 'شرجیل میمن کیخلاف کروڑوں کے غبن کی انکوائری'
شرجیل میمن کو ایئرپورٹ پر حراست میں لیا گیا—فوٹو: ڈان نیوز
شرجیل میمن کو ایئرپورٹ پر حراست میں لیا گیا—فوٹو: ڈان نیوز

شرجیل میمن کے وکیل شکیل عباسی نے ڈان نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ نیب نے شرجیل میمن کو غیرقانونی طور پر حراست میں لیا، کیوں کہ سابق صوبائی وزیر عدالت کی حفاظتی ضمانت پر تھے۔

شرجیل میمن کے وکیل کا کہنا تھا کہ نیب نے ان کے مؤکل کے ضمانتی کاغذات دیکھنے کے بعد انہیں رہا کیا، اب وہ 20 مارچ کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیش ہوں گے۔

یاد رہے کہ سابق صوبائی وزیر اطلاعات پر کروڑوں روپے کی کرپشن کے الزامات ہیں اور ان کے خلاف نیب کی تحقیقات جاری تھیں،مگر انہوں نے قبل از گرفتاری ضمانت حاصل کر رکھی تھی۔

جب کہ شرجیل میمن کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں شامل تھا۔

شرجیل میمن نے اپنے وکیل کے توسط سے گذشتہ سال قبل از گرفتاری ضمانت اور ای سی ایل سے نام نکالے جانے کے حوالے سے سندھ ہائی کورٹ میں 2 درخواستیں دائر کی تھیں.

مزید پڑھیں: شرجیل میمن کے خلاف'کرپشن' تحقیقات کی تفصیلات طلب

درخواستوں میں مؤقف اختیار کیا گیا کہ جب سے قانون نافذ کرنے والے اداروں اور انسداد کرپشن ایجنسیز نے سیاستدانوں کے خلاف کریک ڈاؤن کا آغاز کیا ہے میڈیا کے ذریعے اُن کے علم میں یہ بات آئی ہے کہ نیب نے ان کی حالیہ وزارت کے دور میں مبینہ کرپشن کے حوالے سے ایک انکوائری کا آغاز کردیا ہے۔

درخواست میں عدالت سے استدعا کی گئی کہ انہیں پاکستان آمد پر گرفتار نہ کیا جائے اور نہ ہی اُن کے بیرونی دوروں پر پابندی عائد کی جائے۔

جس کے بعد سندھ ہائی کورٹ نے نیب، وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) اور دیگر سے شرجیل انعام میمن کے خلاف کی جانے والی 'کرپشن' سے متعلق تحقیقات کی رپورٹ عدالت میں جمع کروانے کی ہدایت کی تھی،اور انہوں نے اسلام آباد ہائی کورٹ سے حفاظتی ضمانت حاصل کر رکھی تھی۔

شرجیل انعام میمن کی گرفتاری پر پیپلز پارٹی کے مختلف رہنماؤں نے رد عمل اظہار کرتے ہوئے ان کی گرفتاری کو غیر قانونی قرار دیا، جب کہ ان سابق صوبائی وزیر کے بیٹے اسے مضحکہ خیز قرار دیا۔

شرجیل انعام میمن کے بیٹے راول شرجیل نے ایک سے زائد ٹوئیٹ میں کہا کہ ان کے والد کی ایئرپورٹ کے رن وے پر گرفتاری مضحکہ خیز ہے۔

راول شرجیل میمن نے والد کی غیر قانونی گرفتاری کے خلاف سوشل میڈیا پر آواز اٹھانے پر عوام کا شکریہ بھی ادا کیا۔