ایک فضائی میزبان کی آپ بیتی: جہاز کے باتھ روم کی ڈھولکی (آٹھویں قسط)

اپ ڈیٹ 10 ستمبر 2021

اس سلسلے کی گزشتہ اقساط یہاں پڑھیے۔


آپ اس نوکری کے منفرد اور آزمائشی ہونے کا اندازہ اس بات سے لگا لیں کہ روز نیا باس، نئی ٹیم اور نئے لوگوں سے واسطہ پڑتا ہے۔ پھر ظاہر ہے کہ لوگوں کے 'نخراجات' بھی ایسے ہوتے ہیں جن پر وہ خود تو کوئی خاص 'اخراجات' نہیں کرتے لیکن جہاز پر آکر ان کو سب یاد آجاتا ہے۔ البتہ بعض اوقات شکایت خالص بھی نکل آتی ہے۔

ایک پرواز کے دوران مجھے 2 اصحاب کے برابر ایک صاحب نے مِنتی اشارے سے بلایا۔ میں نے ان سے دُور جاکر مدعا پوچھا (کیونکہ قریب جانے کی کوئی خاص جگہ نہیں تھی) تو کہنے لگے کہ میں تبصرہ کرنا چاہتا ہوں۔ میں نے کہا ابھی تو میں نے کتاب لکھی ہی نہیں بس چھوٹے پتلے (پتلے اس لیے کہا کہ اس کے متضاد پر بُرا نہ مان جائیں) کالم لکھ لیتا ہوں لیکن پھر بھی چلیں آپ کا تبصرہ سر آنکھوں پر۔ مجھے لگا میں نے اپنا سب سے بڑا فین ڈھونڈ لیا ہے اور وہ بھی اڑتی پرواز میں۔

انہوں نے میری طرف غور سے دیکھا اور میری تمام تر خوش گفتاری و گمانی کو یک جنبشِ قلم مثل جابر کوتوال کے موقوف کرتے ہوئے فرمانے لگے کہ 'برخوردار، تبصرے والی کاپی لے کر آئیے، تاکہ بیت الخلا کے بارے میں شکایت درج کی جاوے'۔ معلوم ہوا جناب 'کمنٹ کارڈ' حاصل کرنے کے متمنی ہیں۔

میرے ارمانوں کے ڈرائینگ روم میں چنیوٹ سے درآمد شدہ لکڑی کی میز پر دھرا ملتان کی بلیو پاٹری کا گلدان خوش فہمی ایک دم چھناکے سے ٹوٹ کر جہاز کی راہداری میں بکھر گیا۔

میں نے جلدی سے جاکر اپنے سینئر کو یہ ساری کارستانی ڈی کوڈ کرکے بتائی اور کاپی ہائے تبصرہ لے کر دل میں وائے وائے کرتا ان کے پاس واپس پہنچا۔ کارڈ ان کو دے کر میں نے گیلی (گے-لی) میں واپس آکر سوچا کہ خدا جانے اب وہ کیا لکھ دیں کارڈ کے اندر؟ کہیں میری شکایت نہ ہوجائے؟ ہائے پھر کیا ہوگا؟

آخر میں نے ہمت کی، سوچا اب جو ہوگا خدا کی مرضی، مجھے ایسے نہیں بیٹھے رہنا چاہیے۔ چنانچہ میں نے فوراً اٹھ کر اسپیشل چائے بنائی تاکہ ان صاحب کو پیش کرکے کچھ معاملہ سلجھایا جاسکے۔ چائے اتنی اچھی بن گئی کہ میرا دل للچایا گیا۔ چنانچہ سارا کپ میں خود ہی پی گیا اور پھر ان کی نشست کی طرف چل پڑا۔

خوش قسمتی سے اطراف میں کچھ نشستیں خالی تھیں تو میں نے حد درجہ قریب ہونے کی مکمل ناکام کوشش کرکے ان سے پوچھا کہ کیا وجہ بنی اس شکایت کی۔ حالانکہ میں نے پورا خیال رکھا تھا کہ بیت الخلا میں صابن اور کاغذی تولیے ہمہ وقت موجود ہوں۔ تو پھر کیا شکایت ہے۔ جناب وہ کارڈ تہہ کرتے ہوئے فرمانے لگے کہ 'بھئی آپ کا یہ بیت الخلا بہت چھوٹا ہے۔ بندہ پورا ہی نہیں آتا اس میں تو استعمال کیا خاک کرے گا'۔

اب میری سمجھ میں ساری بات آگئی تھی کہ اصل بات کیا ہے۔ سب سے پہلے میں نے ان سے فوراً معذرت کی جو کہ اس نوکری کا اصول نمبر ایک ہے اور ہنگامی انسانی بنیادوں پر ان کو معذور افراد کے لیے موجود بیت الخلا کی راہ دکھائی۔

جہاز کا بیت الخلا—شٹراسٹاک
جہاز کا بیت الخلا—شٹراسٹاک

جی ہاں، جہاز میں جو بیت الخلا معذور افراد کے لیے ہوتا ہے وہ عام بیت الخلا سے نسبتاً بڑا ہوتا ہے لہٰذا فربہ اندام عوام وہ حمام استعمال کرسکتے ہیں۔

میرا اندازہ صحیح نکلا۔ واپسی پر وہ صاحب اتنا خوش تھے کہ انہوں نے نہ صرف تبصرہ کاپی پھاڑ کر پرزے پرزے کرکے جہاز کی راہداری میں 'پرزہ پاشی' کی بلکہ میرے سینئر سے لوگوں کی ہیجانی کیفیت بوجوہ حوائج ضروریہ، بروقت جانچنے کی میری خداداد صلاحیتوں کی تعریف بھی کی۔ اس خوشی میں، مَیں نے ان کے لیے ایک اور کپ چائے بنائی اور اس بار ان کو بھی دی۔

حمام سے کیا خوب یاد آیا۔ نئی نئی نوکری شروع کی تھی۔ دبئی یا دمام کی پرواز تھی۔ ایک صاحب میری پرسنل اسپیس پھلانگتے ہوئے اتنا قریب آگئے کہ میں نے غیر ارادی طور پر دائیاں ہاتھ ذرا اوپر کو سامنے کی طرف کیا تو وہ سمجھے میں مصافحہ کرنا چاہتا ہوں، جھٹ میرا ہاتھ تھام کر 2 کلومیٹر لمبا سلام ٹھوک کر کہنے لگے 'بھائی جان، حمام؟' ساتھ میں ہاتھ کو دبایا اور سورج کی روشنی نہ پانے والے ایمازون کے گھنے جنگلات اور پاکستانی تارکول جیسی چمکتی ہوئی گھنی بھنویں بھی اچکائیں۔ ایک سیکنڈ کے ہزارویں حصے میں مجھے ایک خیال آیا اور میرے سارے رونگٹے کھڑے ہوگئے۔ اس سے پہلے مجھے یہی معلوم تھا کہ حمام یا تو محلے کے نائی کی دکان میں ہوتا ہے یا وہ جس میں سب 'پورے لباس میں ملبوس ہوتے ہیں'۔

میں نے بھائی صاحب سے اپنا دبا ہوا ہاتھ واپس لیتے ہوئے ان کو سمجھایا کہ جہاز میں نہانے کا انتظام نہیں ہوتا اور اپنی نشست پر بیٹھ گیا۔ لیکن پھر انہوں نے الفاظ کا دامن چھوڑ کر خود اپنا دامن تھام لیا اور اپنی حرکات و سکنات سے جو مجھے سمجھانے کی کوشش کی وہ سمجھ کر اس بار سیکنڈ کے ہزارویں حصے میں کھڑا ہوا اور اپنے رونگٹوں کو آرام کرنے کا موقع دیا اور ان کو بیت الخلا کی راہ دکھائی۔

جہاز کا بیت الخلا—شٹراسٹاک
جہاز کا بیت الخلا—شٹراسٹاک

اب بات چل نکلی ہے تو آپ کو فوکر جہاز کے ڈبی نما بیت الخلا کا قصہ بھی سنا دیا جائے۔ یہ بھی شروع کے ہی دن تھے۔ اسلام آباد سے گلگت کی پرواز تھی۔ ایک دوست بھی ساتھ تھا۔ دورانِ پرواز اسے تقاضا ہوا تو مجھے بتاکر جہاز کے آخری حصے میں موجود بیت الخلا کو سنوارنے جا پہنچا۔ اچھا فوکر ایک چھوٹا جہاز ہوتا تھا، آج کل کے اے ٹی آر کی طرح، یعنی 2 پنکھوں والا۔ اس کی اپنی ہی ایک کمال وحشت ہوتی تھی جس کا ذکر اگلی بار انشا اللہ۔

تو جناب کیا دیکھتا ہوں تھوڑی ہی دیر بعد میرا ساتھی مضمحل کیفیت سے دوچار واپس آگیا ہے۔ صاف معلوم ہو رہا تھا کہ مذاکرات کامیاب نہیں ہوئے۔ کہنے لگا یار ایک تو ہلچل اتنی ہے (خراب موسم کی وجہ سے ٹربیولینس) کہ بندے کا ارتکاز ڈانواں ڈول ہوجاتا ہے۔ دوسرا ساتھ ساتھ ڈھولکی بجتی رہتی ہے تو میں تو گانے ہی بوجھتا رہا سارا وقت۔ معلوم ہوا کہ ایک ریک کا پیچ کچھ ڈھیلا تھا تو اس کے مسلسل ہلنے کی وجہ سے میرے ساتھی کو اندر انتاکشری کھیلنا پڑی۔

اپنی رائے دیجئے

4
تبصرے
1000 حروف
Masood Ahmed Jul 08, 2021 02:17pm
خاور جمال صاحب، آپ بہت اچھا لکھتے ہیں۔خاص طور پر اردو الفاظ کا متبادل یا ذومعنی استعمال بہت اچھا کرتے ہیں۔
انجنیئر حا مد شفیق Jul 08, 2021 09:37pm
آپ کی ہر قسط لاجواب ہے مجھے ببے صبری سے انتظار ہو تا ہے نئ قسط کا
Naqi Akbar Jul 09, 2021 02:21pm
Must be for Akeel Kareem Dehdi
خاور جمال Jul 10, 2021 11:47am
بہت بہت شکریہ آپ لوگوں کا۔ میری حوصلہ افزائی کرنے کا اور تحاریر پسند کرنے کا۔ :)