1965ء کی جنگ پاکستانی سخن وروں کے سنگ

06 ستمبر 2021

تاریخ کتنے ہی ایسے واقعات سے بھری پڑی ہے جن کا ہونا دنیا کو زیر و زبر کردیتا ہے۔ نفع و نقصان اور خیر و شر کے پیمانے تبدیل ہوجاتے ہیں اور زندگی اپنے آپ کو ایک نئے روپ میں تشکیل دیتی ہے۔

یہ نئے خدوخال صرف تاریخ کے دھارے کو موڑتے نہیں بلکہ اس کی کیفیت میں افراد اور قوم ہمیشہ غرقاب رہتے ہیں۔ اس کے بعد کی دنیا خواہ کیسی ہی کیوں نہ ہو گزرے ہوئے انقلاب کا ہر لمحہ ان کی زندگی کے محسوسات میں موجود رہتا ہے۔

1965ء کی 17 روزہ پاک بھارت جنگ بھی کچھ ایسی ہی کیفیت لیے ہوئے ہے۔ یہ واقعہ ملکِ پاکستان اور ملتِ اسلامیہ کی تاریخ میں ناقابلِ فراموش حیثیت سے ابھرا اور اہلِ پاکستان کے دل میں اپنی چھاپ چھوڑ گیا۔

یہ جنگ پاکستان کے لیے ایک کڑی آزمائش تھی۔ یوں سمجھ لیں کہ ایک کروٹ تھی جس نے پانی کی شفاف سطح پر بے کرانی پیدا کردی۔ یہ سمندر کی ایک ایسی موج ثابت ہوئی جس میں نالہ و شیون اور شور و غوغا ہی نہیں تھا بلکہ اس میں نبضِ قوم کے ڈوبتے اور ابھرتے ہوئے فن کارانہ تخیل کا اظہار بھی تھا۔ اس میں عقیدت و محبت کے جذبات بھی تھے اور ایسے رسیلے گیت بھی جس نے وطن کی فضا سے انسیت کے جذبے کو پروان چڑھایا۔

ان نغموں میں کہیں قصیدے کی جھلک تھی تو کہیں مرثیے کے عناصر اور کہیں دعاؤں کی مالا جپ کر آنکھوں سے موتیوں کی لڑی پیوستہ ہوتی ہوئی دکھائی دیتی ہے۔ نعیم صدیقی صاحب نے کیا خوبصورت بات کہی کہ:

’جس داعیہ کو 1947ء میں آگ اور خون کے طوفان بھی پوری طرح بروئے کار نہ لاسکے وہ داعیہ اور احساس 1965ء میں ایک محیطِ بے کراں بن کر اُمڈا اور خواص و عوام کے ایک ایک فرد پر چھا گیا۔‘
1965ء کی جنگ کے دوران چناب سیکٹر میں ٹینکس پیش قدمی کر رہے ہیں۔ — ڈان فائل فوٹو
1965ء کی جنگ کے دوران چناب سیکٹر میں ٹینکس پیش قدمی کر رہے ہیں۔ — ڈان فائل فوٹو

1965ء کی جنگ میں غور طلب بات یہ ہے کہ اس معرکے میں شعرا اور ادبا میں ہر قسم کے نظریات سے وابستہ لوگوں نے حصہ لیا۔ اس میں ترقی پسند بھی تھے، اسلامی ادب سے تعلق رکھنے والے ادیب بھی اور جدید شاعری کے علم بردار بھی۔ وسیع تر قومی مفاد میں پاکستان کی دفاع کے لیے تمام تر شاعروں نے ایسے نغمے کہے کہ خاموش بستیوں اور سہمے ہوئے دلوں میں بیداری پیدا ہوگئی۔ تمام قوم کے دل میں ان اشعار سے ایک ایسی حرکت پیدا ہوئی، جس نے سونے والوں کو جگایا اور جو تھک گئے تھے انہیں نئی جان بخشی۔ اس کی ایک جھلک ظہیر کاشمیری کی نظم 'آج کا کھیل' میں ملاحظہ کرسکتے ہیں:

کج کلاہوں کو زمیں بوس کیا ہے ہم نے

شہر یاروں سے صدا باج لیا ہے ہم نے

ظلم کو موت کا پیغام دیا ہے ہم نے

جب کبھی اُٹھے ہیں ہم جذبۂ بے دار کے ساتھ

آج کا کھیل رہے برش تلوار کے ساتھ

ہم نے اغیار کے شمشیر سناں دیکھے ہیں

ہم نے طاغوت کے انبوہ رواں دیکھے ہیں

ہم نے باطل سے سبھی لشکر یاں دیکھے ہیں

جنگ کی بات شہادت کے طلب گار کے ساتھ

آج کا کھیل رہے برش کی تلوار کے ساتھ

ظہیر کاشمیری
ظہیر کاشمیری

اس جنگ میں پاکستان کی عسکری کامیابیوں اور ناکامیوں کے تجزیے سے قطع نظر اس جنگ کا حاصل اصل میں وہ اتحاد و یکجہتی تھی جو پورے پاکستان میں نمایاں طور پر ہر قلب نے محسوس کی۔ اتنے بڑے پیمانے پر اتحاد و یکجہتی کو پھر کبھی محسوس نہیں کیا گیا۔

اس دور میں اتنی زیادہ شاعری منظرِ عام پر آئی کہ اس کا احاطہ کرنا آسان نہیں۔ 'جنگ ترنگ' اور 'جاگ رہا ہے پاکستان' جو 1965ء کی جنگ کے حوالے سے شاعری کے ضخیم مجموعے ہیں، ان کے مرتبین کا ایک محدود اندازہ ہے کہ تقریباً 2 ہزار نظمیں صرف اردو زبان میں لکھی گئی ہیں جبکہ دیگر زبانوں میں کی گئی شاعری الگ ہے لیکن بعدازاں یونیورسٹیوں میں ایم فل اور پی ایچ ڈی کی سطح پر ہونے والے تحقیقی کام سے پتا چلتا ہے کہ ان کی تعداد اس سے بھی کئی گنا زیادہ ہے۔

1965ء کی جنگ میں غور طلب بات یہ ہے کہ اس معرکے میں شعرا اور ادبا میں ہر قسم کے نظریات سے وابستہ لوگوں نے حصہ لیا
1965ء کی جنگ میں غور طلب بات یہ ہے کہ اس معرکے میں شعرا اور ادبا میں ہر قسم کے نظریات سے وابستہ لوگوں نے حصہ لیا

شعرا کے شعری مجموعوں، رسائل وجرائد اور اخبارات میں اس حوالے سے کئی نظمیں موجود ہیں۔ 1965ء کے ان 17 دنوں نے اہلِ پاکستان کو کچھ نہ کچھ سوچنے پر آمادہ ضرور کیا۔ اس سوچ کی کیفیات اور جذبات کو شاعروں نے بخوبی پیش کیا ہے۔ حقیقت تو یہ ہے کہ پاکستانی ادب پہلی دفعہ سچے دل سے ان نظموں میں گویا ہوا تھا۔ یوں بھی رزمیہ شاعری انسانی جذبات اور نفسیات کی عکاس ہوتی ہے۔ خاص کر میدانِ جنگ میں شاعرانہ الفاظ ایک سپاہی کے دل میں موج زن جذبات کو ارفع کردیتے ہیں، وہ اپنے آپ کو بہتر محسوس کرتا اور آنے والے مشکل لمحوں کو طے کرنے میں اسے آسانی میسر آجاتی ہے۔ احسان دانش کی نظم کچھ اسی انداز کی حامل ہے۔

تم مردِ میداں، تم جانِ لشکر

آئین دیں ہیں سب تم کو ازبر

احکامِ باری، قولِ پیمبرﷺ

اللہ اکبر، اللہ اکبر

روحِ شجاعت، فخر وغا ہو

جان وفا ہو، صدق و صفا ہو

رکھتے ہو دل میں سوزِ پیمبرﷺ

اللہ اکبر، اللہ اکبر

احسان دانش
احسان دانش

صرف اردو ادب ہی نہیں بلکہ عالمی ادب کے مطالعے سے بھی یہ بات عیاں ہوتی ہے کہ دنیا کا تقریباً ہر بڑا ادب رزمیہ عناصر سے متاثر ہوا ہے اور دنیا کے ہر ادب میں شاہکار فن پارے رزمیہ وصف کے حامل ہیں۔ اصل میں رزم اپنے اندر سماجی اور تہذیبی اعتبار سے انسانی جذبات و احساسات کی شعوری کیفیت لیے ہوئے ہے۔ اسی لیے فردوسی کا 'شاہ نامہ'، والمیکی کی 'رامائن'، ویاس کی 'مہابھارت' یا گوئٹے کی 'فاؤسٹ' میں رزم اور بزم دونوں کی جلوہ گری موجود ہے۔

65ء کی جنگ کے 17 دنوں میں فنکاروں نے ایسی تخلیقات چھوڑیں جو فن کے اعلیٰ ترین معیار پر پہنچتی ہیں۔ بعض مقامات پر ان نظموں اور غزلوں میں شدتِ تاثر اتنا گہرا ہے کہ آج ماہ و سال کی گردشوں نے ان کی جاذبیت کو کسی طور پر بھی کم نہیں کیا ہے۔ اس موضوع کے تعلق سے لکھی جانے والی یہ نگارشات ہمیں ماضی سے جڑے رہنے اور اعلیٰ ادب کی آبیاری کرنے کا موقع فراہم کرتی ہیں۔ انور حسین انور کی نظم ملاحظہ کریں:

بڑھے چلو مجاہدو خدا تمہارے ساتھ ہے

تمہارے عزم بے کراں میں قوم کی حیات ہے

بلند حوصلے رہیں رکے نہ گردش لہو

تمہارے عزم سے ہے پاک سرزمیں کی آبرو

عدو نہ سر اُٹھا سکے جھپٹ کے جاؤ چار سو

بڑھے چلو مجاہدو خدا تمہارے ساتھ ہے

تمہارے عزم بے کراں میں قوم کی حیات ہے

جنگِ ستمبر نے پاکستانی قوم کو متحد کردیا تھا۔ ایک مدت سے جاری پاک بھارت چپلقش نے پوری پاکستانی ملت کو اپنی سالمیت اور بقا کی جدوجہد کے لیے آمادہ کیا۔ ہر شاعر کی آواز وطن کی سالمیت اور بقا کی دعا میں ڈھل گئی۔ یہ جنگ محض جغرافیائی سرحدوں کی حفاظت تک محدود نہ رہی بلکہ نظریہ، تاریخ اور سلامتی کی آرزو نے مل کر پوری قوم کو اس جارحیت کے خلاف صف آرا کیا۔

ان نظموں کا بیانیہ کم و بیش تخیل اور جذبے کے ایک ہی طرز احساس میں ڈوبا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ حبیب سبحانی کی نظم قوم کی آبرو اور محاذِ جنگ پر موجود دلاوروں کی بہادری کو مہمیز دیتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ یہ نظم دشمن کے سر غرور کو توڑتی اور چمن کی آبرو کو خون سے سینچنے کی تلقین کرتی ہے۔

بڑھے چلو بڑھے چلو دلاورو! مجاہدو!

محاذِ کفر توڑ دو

ستم کے رُخ کو موڑ دو

سر غرور پھوڑ دو

قدم اٹھاؤ تیز تر مسلمو! بہادرو!

بڑھے چلو بڑھے چلو دلاورو! مجاہدو!

اسی طرح محشر بدایونی نے 'جاگ رہا ہے پاکستان' جیسی باکمال نظم لکھی۔ یہ نظم پیکر ایمان آرزو ہے۔ واقعاتی نوعیت کے باوجود اس میں ایک ایسی لہر موجود ہے جس میں ملتِ پاکستان کی مستقل کیفیات کو ہر لمحے کے لحاظ سے سمو دیا گیا ہے۔

اپنی قوت اپنی جان، لا الا اللہ محمد رسول اللہ

ہر پل ہر ساعت ہر آن، جاگ رہا ہے پاکستان

نکلے ہیں مردانِ حق، سینوں میں لے کر قرآن

ہم سے رہے باطل ہشیار، جاگ رہا ہے پاکستان

جنگِ ستمبر میں اہلِ سخن نے گیتوں، غزلوں، نظموں اور رباعیوں کے ذریعے میدانِ جنگ میں پیش کی جانے والی دادِ شجاعت کی کہانی اس طرح پیش کی کہ اس کی گونج بھارت میں بھی سنائی دینے لگی۔ ان نغموں کے تاثر سے بے چین ہوکر آل انڈیا ریڈیو نے اردو زبان میں ایک خصوصی پروگرام نشر کیا جس میں شاعر شری جگن ناتھ آزاد نے پاکستانی شعرا کے نام طعن و تشنیع سے بھری ایک نظم کہی جس کے جواب میں رئیس امروہوی نے 'جواب آں غزل' نے نام سے عمدہ غزل کہی۔

آریہ دیس کے ناحق نگرو نغمہ گرو

حق کے اعلان سے انکار ہمیں ہے کہ تمہیں

سامراجی روش و فکر کے پیغام برو

ہوس فتنہ و پیکار ہمیں ہے کہ تمہیں

تم اہنسا کے پجاری ہے خدارا بتلاؤ

امن عالم سے بھلا پیار ہمیں ہے کہ تمہیں

یہ نظمیں قوم کے ایمان، اتفاق، محبت اور بے لوث خدمت کے احساسات کا نفسیاتی بیان ہے۔ اس جنگ کے زمانے میں پاکستانی قوم کے ذہن و دل نے جو تاثر قائم کیا اس کی شدت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ ایک ماہی گیر بچے جمالی نے بھی نظم کہی۔ یہ نظم کسی شعری اصول سے لگا تو نہیں کھاتی لیکن اس میں دنیا کے عظیم ترین ادب کی تمام جھلکیاں دکھائی دیتی ہیں۔

آج میرے جال میں بہت مچھلیاں ہیں۔ اگرچہ میرے بازو کمزور ہیں

مگر میں سندھ سے پلا مچھلی بھی پکڑسکتا ہوں

جب آسمان کے اوپر پاکستان کے سپاہی شور مچاتے ہوئے جاتے ہیں

تو میرا دل چاہتا ہے کہ میں انہیں پلا مچھلی بھون کر کھلاؤں

اور ان کی ٹوپیوں میں نہر کا ٹھنڈا پانی بھر کے پلاؤں

میں خود بھی سپاہی کی ٹوپی میں پانی بھر کر پینا چاہتا ہوں

میں نے اپنی شیشے کے کام والی ٹوپی میں تو سینکڑوں مرتبہ پانی بھر کر پیا ہے

اے بھٹ شاہ کے سائیں! اگر تیرے حکم سے میری نہر کا پانی کراچی کے سمندر کی طرح آسمان تک پہنچ جائے

تو میں اس کی سیڑھی پر چڑھ کر پاکستان کے سپاہی کو بھونی ہوئی پلا مچھلی کھلا سکتا ہوں

نہر کا پانی پلا سکتا ہوں

ہر آدمی بڑا شاعر اور ادیب نہیں بن سکتا کیونکہ یہ تو قدرت کی عطا ہے لیکن جذبات سے بھرے ہوئے دل حالتِ جنگ میں ترنگ کی مجذوبانہ کیفیت سے فطری طور پر بھر جاتے ہیں۔ یہ عمل بذات خود ایک معجزہ ہے۔ ایسا ہی طرزِ عمل قوموں کی زندگی میں گونگوں کو گویائی، اندھوں کو راستہ سجھانے اور نیند کے ماتوں کو بیدار کرنے کا کام انجام دیتا ہے۔ اہلِ سخن اور کم سخن دونوں کی جانب سے اس جنگ میں ایسے نغمے پھوٹے کہ جس نے واماندہ دماغ کو اظہار کا سلیقہ بخش دیا۔

ضرور پڑھیں

اپنی رائے دیجئے

7
تبصرے
1000 حروف
Syeda Amna Sep 06, 2021 10:25am
But umda tehrir. بڑھے چلو مجاہدو خدا تمہارے ساتھ ہے تمہارے عزم بے کراں میں قوم کی حیات ہے
Syeda Amna Sep 06, 2021 10:26am
Bht Umda tehrir بڑھے چلو مجاہدو خدا تمہارے ساتھ ہے تمہارے عزم بے کراں میں قوم کی حیات ہے
محمد عبد المعز Sep 06, 2021 12:47pm
ماشاء اللہ ایمان افروز اور جذبۂ حب الوطنی سے سرشاری کالم۔ "اپنی قوت اپنی جان" اکثر گنگناتے رہتے ہیں ہم۔ آج اس کے تخلیق کار کا بھی علم ہو گیا۔ جزاک اللہ!
ڈاکٹر نعمان انصاری Sep 06, 2021 12:51pm
بہت اچھا اور تحقیقی مضمون لکھا
جاوید احمد خورشید Sep 06, 2021 07:48pm
یہ تحریر معلوماتی اور سلیقے کی مظہر ہے جس میں قارئین کے سامنے اس واقعے کا ایک اہم حوالہ آسکا ہے۔ بہت خوب!
سید عون عباس Sep 08, 2021 04:58pm
بہت خوب اور معلوماتی تحریر ۔۔۔ اسی طرح لکھتے رہیں
قدسیہ عندلیب Sep 10, 2021 11:08pm
بہت اعلی اور معلوماتی مضمون ہے ۔