• KHI: Maghrib 7:24pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:09pm Isha 8:45pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 8:59pm
  • KHI: Maghrib 7:24pm Isha 8:51pm
  • LHR: Maghrib 7:09pm Isha 8:45pm
  • ISB: Maghrib 7:19pm Isha 8:59pm

جان بوجھ کر سیاسی افراتفری کی کوشش کی گئی، اتحادی حکومت نے سازشوں کو دفن کیا، وزیراعظم

شائع May 26, 2023
وزیراعظم نے کہا کہ سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے شہر کے ساتھ پانی پر سیاست جائز نہیں — فوٹو: ڈان نیوز
وزیراعظم نے کہا کہ سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے شہر کے ساتھ پانی پر سیاست جائز نہیں — فوٹو: ڈان نیوز

وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ ملک میں جان بوجھ کر سیاسی افراتفری پیدا کرنے کی بھرپور کوشش کی گئی جس کا 9 مئی کے واقعات پر اختتام ہوا۔

کراچی میں پانی کے منصوبے ’کے فور‘ کے سنگِ بنیاد کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے شہباز شریف نے کہا کہ 9 مئی کا دن پاکستان کی تاریخ میں تاریک ترین دن تھا لیکن اتحادی حکومت کی تمام مشترکہ کاوشوں اور باہمی مشاورت نے ان سازشوں کو دفن کردیا۔

انہوں نے کہا کہ 9 مئی کو جس طرح سے عمران نیازی کے جتھوں نے فوجی تنصیبات پر حملے کیے، شہدا کی یادگاروں کی بے حرمتی کی وہ تاریخ کا سیاہ باب تھا۔

وزیراعظم نے کہا کہ اس سازش کے تانے بانے سمندر پار جا ملتے ہیں اور سیاسی افراتفری کے باعث پاکستان معاشی ترقی نہ کر سکا۔

انہوں نے کہا کہ 9 مئی کے واقعات پر انصاف کا طریقہ یہ ہے کہ جس طرح 6 جنوری 2021 کو امریکا میں ہوا اور وہاں جو سزائیں دی گئیں اگر یہاں بھی شہدا کے ساتھ انصاف کے لیے قانون کے تحت سزائیں ملتی ہیں تو کسی کو اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔

’عمران خان کی ہر شعبے میں فتنے پر مبنی سوچ تھی‘

کے فور منصوبے پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جس طرح اس منصوبے کو سرد خانے کی نظر کیا گیا اور اس پر سیاست کی گئی وہ انتہائی افسوس ناک بات ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ سابق وزیراعظم کی پاکستان کے ہر شعبے میں فتنے پر مبنی سوچ تھی، اتنے اناپرست تھے کہ اگر میں ہوں تو سب کچھ ہے ورنہ کچھ نہیں۔

انہوں نے کہا کہ جو شخص 4 برس چور اور ڈاکو کے نعرے لگاتا رہا، آج جب وہ خود کرپشن کے کیس میں آیا تو کہنے لگا جلاؤ گھیراؤ کرو، فوجی تنصیبات پر حملہ کردو۔

وزیراعظم نے کہا کہ اگر عمران خان نے بدنیتی کی بنیاد پر اس منصوبے کو مؤخر کیا تھا تو اس وقت کوئی چیلنج نہیں تھا لیکن آج چلینج ہے مگر اس کو فوری طور پر مکمل کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ میرے لیے یہ منصوبہ اس لیے تمام منصوبوں سے اہمیت کا حامل ہے کہ اگر پینے کا صاف پانی میسر نہیں تو پھر آسودہ زندگی کیسے ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے شہر کے ساتھ پانی پر سیاست جائز نہیں، آئندہ بجٹ میں اس منصوبے کو ترجیح دی جائے گی۔

کارٹون

کارٹون : 15 جولائی 2024
کارٹون : 14 جولائی 2024