• KHI: Fajr 4:30am Sunrise 5:55am
  • LHR: Fajr 3:38am Sunrise 5:13am
  • ISB: Fajr 3:35am Sunrise 5:13am
  • KHI: Fajr 4:30am Sunrise 5:55am
  • LHR: Fajr 3:38am Sunrise 5:13am
  • ISB: Fajr 3:35am Sunrise 5:13am

حکومت، سنی اتحاد کونسل میں عدم اتفاق، چیئرمین پی اے سی کا عہدہ پیپلز پارٹی کو دینے پر غور

شائع May 21, 2024
—فائل فوٹو
—فائل فوٹو

قومی اسمبلی میں پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) کی چئیرمین شپ کے حوالے سے سنی اتحاد کونسل اور وفاقی حکومت میں تاحال اتفاق نہ ہوسکا جس کے بعد اہم پارلیمانی عہدہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی ) کو دیے جانے پر غور شروع کردیا گیا ہے۔

’ڈان نیوز‘ کی رپورٹ کے مطابق پی ٹی آئی کی جانب سے نامزد کردہ رکن قومی اسمبلی شیخ وقاص اکرم کو متوقع طور پر ملنے والی پوزیشن خطرے میں پڑ گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق پی اےسی چئیرمین شپ کا عہدہ بھی سنی اتحاد کونسل کے ہاتھ سےجانے کا امکان ہے، پی اے سی چئیرمین شپ کے لیے سنی اتحاد اور حکومت میں تاحال اتفاق نہ ہو سکا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ عدم اتفاق کے باعث حکومت نے پی اے سی کی چئیرمین شپ پیپلز پارٹی کو دینے پر غور شروع کردیا ہے۔

ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ پی اے سی کا چئیرمین پہلی مرتبہ باقاعدہ ووٹنگ سے بنائے جانے کا امکان ہے، قومی اسمبلی سیکریٹریٹ کے مطابق ماضی میں کبھی چیئرمین پی اے سی کےعہدے کے لیے ووٹنگ نہیں ہوئی۔

ووٹنگ کرائے جانے کی صورت میں حکومت باآسانی اپنے کسی بھی نامزد رکن اسمبلی کو چیئرمین منتخب کروالےگی، پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں حکومت کے 16 اور اپوزیشن کے 8 ارکان کی شمولیت کا امکان ہے۔

رواں ماہ کے شروع میں پی ٹی آئی نے پی اے سی کے چیئرمین کے عہدے کے لیے شیر افضل خان مروت کی جگہ شیخ وقاص اکرم کو نامزد کردیا تھا، عمر ایوب کی سربراہی میں 19 رکنی کمیٹی میں سے 9 نے شیخ وقاص کو، 7 نے افضل مروت کو ووٹ دیا تھا۔

کارٹون

کارٹون : 21 جولائی 2024
کارٹون : 20 جولائی 2024