پاکستانی معیشت بیمار ہے، اس کا بائی پاس ہو رہا ہے، وزیر خزانہ

28 ستمبر 2018

ای میل

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ پاکستانی معیشت بیمار ہے جس کا بائی پاس ہو رہا ہے، کامیاب بائی پاس کے بعد معیشت نہ صرف ٹریک پر آجائے گی بلکہ دوڑے گی۔

اسلام آباد میں ایکسپو ڈسپلے سینٹر کے افتتاح کے بعد اسد عمر نے چیمبر آف کامرس کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 'ملک میں کچھ علاقے ایسے ہیں جن کی معیشت قدرتی عناصر کی بنیاد پر ترقی کرتی ہے، جیسے کراچی ایک پورٹ ہے تو جتنی تجارت ہوگی اس سے شہر میں ترقی آئے گی لیکن اسلام آباد میں ایسا کچھ نہیں تھا کہ یہ ایک بڑا شہر بنتا۔

انہوں نے کہا کہ اسلام آباد کی ترقی کے لیے ماسٹر اکنامک پلان بنایا جائے گا جس کا خاکہ اسلام آباد چیمبر بنائے کہ یہاں معیشت کو کیسے ترقی دی جاسکتے ہے جس سے یہاں روزگار کے مواقع پیدا ہوں اور کاروبار کو فروغ ملے۔

مزید پڑھیں: لگژری گاڑیوں، مہنگے موبائل اور سگریٹ پر ڈیوٹیز میں اضافہ

وزیر خزانہ نے اعلان کیا کہ ملک میں 5 آئی ٹی سینٹرز بنائے جائیں گے، جن میں سے ایک اسلام آباد میں قائم کیا جائے گا۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ اس وقت ملک میں پانی سے سنگین کوئی مسئلہ نہیں، اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے بھی ماسٹر پلان کی ضرورت ہے۔

انہوں نے بتایا کہ وزیر اعظم عمران خان نے دارالحکومت کے لیے یومیہ دو کروڑ گیلن صاف پانی کی فراہمی کی منظوری دے دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: معاشی صورتحال ابتر ہے، فوری 12 ارب ڈالر درکارہوں گے، اسد عمر

وزیر خزانہ نے کہا کہ آئندہ چند دنوں میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے پالیسی ساز اور ٹیکس کلیکشن ڈپارٹمنٹ کو علیحدہ کر دیں گے، ایف بی آر کے پالیسی بورڈ کی سمری ہم نے ارسال کردی ہے جس کے منظور ہونے کے 10 دن میں بورڈ کو علیحدہ کر دیا جائے گا۔