میرے خلاف منظم سازش ہوئی،راستہ روکنے کیلئے گھٹیا طریقہ اپنایا گیا، اجمل وزیر

12 جولائ 2020

ای میل

جس معاملے پر مجھے تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے اس سے میرا تعلق ہی نہیں، اجمل وزیر — فائل فوٹو / ڈان نیوز
جس معاملے پر مجھے تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے اس سے میرا تعلق ہی نہیں، اجمل وزیر — فائل فوٹو / ڈان نیوز

سابق مشیر اطلاعات خیبر پختونخوا اجمل وزیر نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کے خلاف منظم سازش ہوئی اور سازشیوں نے ان کا راستہ روکنے کے لیے گھٹیا طریقہ اپنایا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بیان میں اجمل وزیر نے کہا کہ 'میں خود اس چیز کا قائل ہوں کہ جو بھی ہو اور جس پر بھی الزام لگے اسے اس کا سامنا کرنا ہوگا۔'

انہوں نے کہا کہ 'یہ وزیر اعظم عمران خان کا وژن ہے کہ ہماری پارٹی پر یا وزیر پر کوئی الزام لگے تو وہ جوابدہ ہے، ایسا نہیں ہے کہ جب حکومتوں میں ہوتے ہیں تو کوئی جوابدہ نہیں ہوتا۔'

تاہم ان کا کہنا تھا کہ 'میرے خلاف منظم سازش ہوئی اور سازشیوں نے راستہ روکنے کے لیے گھٹیا طریقہ اپنایا، میرے خلاف آڈیو کو ایڈٹ کرکے پیش کیا گیا اور مختلف اجلاسوں اور بریفنگز کو کٹ کٹ کرکے من گھڑت آڈیوں تیار کرائی گئی۔'

مزید پڑھیں: 'آڈیو کلپ لیک ہونے پر' اجمل وزیر مشیر اطلاعات خیبرپختونخوا کے عہدے سے فارغ

اجمل وزیر نے کہا کہ 'جس معاملے پر مجھے تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے اس سے میرا تعلق ہی نہیں، اشتہار محکمہ صحت کا تھا جس کا چیئرمین وزیر صحت ہوتا ہے، میں اسٹیرنگ کمیٹی کا اعزازی رکن تھا اس لیے میرے پاس فیصلے کا اختیار ہی نہیں تھا۔'

انہوں نے کہا کہ 'تمام چیزیں ایک بار دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجائیں پھر میں سازش کرنے والوں کو سامنے لاؤں گا جو میرا کام کے حوالے سے مقابلہ نہیں کر سکتے اس لیے انہوں نے سازش کا سہارا لیا۔'

واضح رہے کہ وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے مبینہ طور پر ایک آڈیو لیک ہونے کے بعد اجمل وزیر سے مشیر اطلاعات کا قلمدان واپس لے لیا اور ان کی جگہ معاون خصوصی برائے بلدیات کامران بنگش کو مشیر اطلاعات کا اضافی چارج سونپ دیا تھا۔

اس حوالے سے چیف سیکریٹری خیبرپختونخوا کی جانب سے جاری کردہ اعلامیے میں کہا گیا کہ وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے اجمل خان وزیر سے فوری طور پر مشیر برائے اطلاعات اور تعلقات عامہ کا قلمدان واپس لے لیا۔

اجمل وزیر کو عہدے سے ہٹانے کی وجہ مبینہ طور پر لیک شدہ آڈیو کلپ بتائی گئی اور ان پر ایڈورٹائزنگ ایجنسی سے کمیشن وصول کرنے کا الزام ہے۔

یہ بھی پڑھیں: صوبے کے ہسپتالوں میں بستروں اور وینٹی لیٹرز کی کمی نہیں، اجمل وزیر

خیال رہے کہ اجمل وزیر کو رواں برس مارچ میں وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کا مشیر مقرر کیا گیا تھا۔

انہیں اس وقت کے صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی کی جگہ تعینات کیا گیا تھا جبکہ اجمل وزیر اس وقت وزیراعلیٰ کے مشیر برائے ضم شدہ اضلاع تھے۔

رپورٹس کے مطابق شوکت یوسفزئی اور اجمل وزیر کے درمیان تلخ تعلقات کے باعث وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے دونوں کے قلمدان تبدیل کردیے تھے۔