سیف علی خان کی 'تانڈو' پر تنازع، فلم سازوں نے غیر مشروط معافی مانگ لی

اپ ڈیٹ 19 جنوری 2021

ای میل

ممبئی میں ایمیزون پرائم کے دفتر کے سامنے احتجاج کی دھمکی کے بعد معافی مانگی گئی — فوٹو:ایمیزون پرائم
ممبئی میں ایمیزون پرائم کے دفتر کے سامنے احتجاج کی دھمکی کے بعد معافی مانگی گئی — فوٹو:ایمیزون پرائم

بولی وڈ اداکار سیف علی خان اور ڈمپل کپاڈیا کی ویب سیریز 'تانڈو' پر بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے رہنماؤں کی جانب سے ہندو دیوتاؤں اور دیویوں کی تذلیل کے الزام کے بعد اس کے فلم سازوں نے مذہبی جذبات مجروح کرنے پر غیر مشروط معافی مانگ لی۔

فلم ساز علی عباس ظفر کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایمیزون پرائم شو کی کاسٹ اور عملے کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ بیان جاری کیا گیا۔

انڈیا ٹوڈے کی رپورٹ کے مطابق باضابطہ بیان میں کہا گیا کہ 'ہم تانڈو ویب سیریز سے متعلق ناظرین کے ردعمل کی نگرانی کررہے ہیں اور آج اس حوالے سے بات چیت کے دوران وزارت اطلاعات و نشریات نے ویب سیریز کے مختلف پہلوؤں پر بڑی تعداد میں موصول ہونے والی درخواستوں اور شکایات سے آگاہ کیا'۔

مزید کہا گیا کہ ساتھ ہی اس ویب سیریز کے مواد سے لوگوں کے جذبات مجروح ہونے سے متعلق سنگین خدشات اور تحفظات سے آگاہ کیا گیا۔

ایمیزون پرائم کے فلم سازوں نے اس بات پر زور دیا کہ یہ فکشن تھا جس میں کسی عمل، شخص یا واقعات سے مشابہت خالصتاً اتفاقی تھی، انہوں نے ناظرین کو ناراض کرنے پر افسوس کا اظہار کیا۔

بیان میں کہا گیا کہ 'عملے اور کاسٹ کا مقصد کسی فرد، ذات، برادری، نسل، مذہب یا مذہبی عقائد کو مجروح کرنا یا تذلیل یا کسی ادارے، سیاسی جماعت یا شخص، زندہ یا مردہ کو اشتعال دلانا نہیں تھا'۔

مزید کہا گیا کہ تانڈو کی کاسٹ اور عملے کو لوگوں کے تحفظات سے آگاہ کیا ہے اور اگر غیر ارادی طور پر کسی کے جذبات کو ٹھیس پہنچی ہے تو ہم معذرت خواہ ہیں۔

—فوٹو: ایمیزون پرائم
—فوٹو: ایمیزون پرائم

بعدازاں علی عباس ظفر نے کہا کہ فلم ساز، بھارتی وزارت اطلاعات و نشریات کے ساتھ اس حوالے سے اٹھائے گئے تحفظات کے حل کے لیے مصروف ہیں۔

انہوں نے دہرایا کہ 'ہم آپ کے مسلسل صبر اور تعاون کی قدر کرتے ہیں اور جلد ہی اس کا حل نکالنا چاہیے'۔

خیال رہے کہ مذکورہ معذرت بھارتی کی حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی سے تعلق رکھنے والے مقامی عہدیدار نے ایمیزون پرائم ویب سیریز 'تانڈو' کے خلاف پولیس میں شکایت درج کرانے اور ممبئی میں کمپنی کے دفتر کے سامنے احتجاج کی دھمکی کے بعد سامنے آئی۔

سیف علی خان کو ان کی ویب سیریز تانڈو پر ہونے والے تنازع کے باوجود اضافی سیکیورٹی بھی فراہم کی گئی ہے۔

دہلی میں بنائی گئی ویب سیریز 'تانڈو' فلم ساز علی عباس ظفر نے بنائی ہے جس میں کرداروں میں سیاسی اقتدار سے متعلق اسکیمز دکھائی گئی ہے۔

—فوٹو:انسٹاگرام
—فوٹو:انسٹاگرام

اس سیاسی ڈراما ویب سیریز کو بی جے پی کے دیگر قانون سازوں کی جانب سے تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

خیال رہے کہ ہدایت کار علی عباس ظفر، لکھاری گورو سولنکی، ایمیزون پرائم کی بھارتی مواد کی سربراہ اپرنا پوروہت اور تانڈو کے پروڈیوسر ہیمانشو کرشنا مہرا کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔

خیال رہے کہ بھارت گزشتہ برس کے اواخر میں اسٹریمنگ پلیٹ فارم کو وزارت اطلاعات و نشریات کے زیرِ نگرانی لایا تھا اور کہا تھا کہ وہ ان کے مواد کو ریگولیٹ کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

علاوہ ازیں رائٹرز کے پارٹنر اے این آئی نے 2 روز قبل رپورٹ کیا تھا کہ بھارتی وزارت اطلاعات نے اس تنازع پر ایمیزون پرائم کے ویڈیو حکام کو طلب کیا تھا۔

اسٹریمنگ سروسز نے سستے اسمارٹ فونز اور موبائل ڈیٹا کی وجہ سے بھارت میں بہت زیادہ توجہ حاصل کی ہے۔

ان کی وجہ سے بھارت اب ایمیزون، نیٹ فلیکس اور ڈزنی کے لیے بڑی مارکیٹ بن گیا ہے اور اب یہ اسٹریمنگ سروسز وہاں اپنے مارکیٹ کو توسیع دینے کا ارادہ رکھتی ہیں۔