مذاکرات کی نگرانی کے لیے جنرل قمر جاوید باجوہ، اجیت دوول بہتر امتزاج ہیں، سابق بھارتی سفیر

اپ ڈیٹ 06 اپريل 2021

ای میل

سابق بھارتی سفیر ستندر لامبا - فائل فوٹو: اے ایف پی
سابق بھارتی سفیر ستندر لامبا - فائل فوٹو: اے ایف پی

نئی دہلی: پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے لیے سابق بھارتی سفیر نے دونوں ممالک کے درمیان خفیہ مذاکرات کی حمایت کردی۔

بھارتی خبر رساں ادارے دی ہندو کی رپورٹ میں ستندر لامبا کے حوالے سے بتایا گیا ہے، جنہوں نے 2005 سے 2014 تک اسلام آباد کے ساتھ بیک چینل مذاکرات میں سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ کی نمائندگی کی تھی۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق انہوں نے دعوٰی کیا کہ جموں و کشمیر کی حیثیت میں ہونے والی 2019 کی تبدیلیاں مستقبل کے مذاکرات پر منفی اثر نہیں ڈالیں گی۔

واضح رہے کہ بھارت نے 2019 میں متنازع ریاست کا الحاق کرلیا تھا اور اسے دہلی کے زیر اقتدار دو وفاقی اکائیوں میں تبدیل کردیا تھا۔

مزید پڑھیں: مستحکم پاک بھارت تعلقات جنوبی ایشیا کی ترقی کی کنجی ہیں، آرمی چیف

جب ان سے سوال کیا گیا کہ کیا موجودہ رپورٹ کیے گئے بیک چینل کو امریکا نے شروع کرایا ہے تو ستندر مسٹر لامبا نے کہا کہ یہ ممکنہ طور پر دو طرفہ معاملہ ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ 'اس میں (قبل ازیں) کسی تیسرے فریق کی شمولیت نہیں تھی، بل برنس (سی آئی اے کے موجودہ چیف) نے لکھا ہے کہ بھارت ان کے ساتھ تفصیلات شیئر نہیں کرتا تھا اور وہ کوئی ثالثی کا کردار نہیں چاہتا ہے، اگر آپ مجھ سے پوچھتے تو اب بھی یہ شاید دو طرفہ بات چیت ہے حالانکہ یہ جو بائیڈن اثرو رسوخ سے متاثر ہوسکتا ہے'۔

ان سے پوچھا گیا کہ کیا جموں وکشمیر کی حیثیت میں بدلاؤ آنے کے باوجود ان کی جانب سے کرایا گیا جموں و کشمیر سے متعلق معاہدہ ایک دہائی بعد بھی برقرار رہے گا تو انہوں نے جواب دیا کہ 'ہاں بالکل ہم نے حکومت میں کسی مخصوص دور یا سیاسی حکومت کے لیے بات چیت نہیں کی تھی بلکہ دونوں ممالک کے مستقبل کو دھیان میں رکھتے ہوئے مذاکرات کیے تھے۔

انہوں نے کہا کہ 'پاکستان کے ساتھ تعلقات کو سائیڈ پر کریں تو بھی میرا ماننا ہے کہ ہماری سرحد پر جموں و کشمیر کی اہم ریاست مکمل ریاست بننے کی حقدار ہے'۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان اور بھارت کا ایل او سی پر جنگ بندی پر سختی سے عمل کرنے پر اتفاق

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ بات چیت خفیہ رکھنے کی ضرورت ہے، 'دونوں ممالک میں سب سے بڑا چیلنج مقامی مفادات کے ساتھ ساتھ میڈیا لیکس بھی ہے جو مذاکرات کے اصل مقصد کو مسخ کر دیتا ہے، ایک بار مجھے یاد ہے ہمیں بات چیت کے لیے خصوصی طیارے سے لاہور جانے کا ویزا ملا لیکن اس وقت وزیر اعظم نے مجھ سے کہا کہ وہ نہ جائیں، ایک بڑے اخبار نے ایک بڑی سرخی کے ساتھ رپورٹ چلائی جس میں کہا گیا تھا کہ پاکستان سے بات چیت جاری ہے جو حقیقت سے دور تھی اور الجھن کا باعث بنی، یہاں تک کہ جب کوئی ایجنڈا بھی نہیں ہوتا تو لوگ مذاکرات کے بارے میں غلط تاثر پیدا کرسکتے ہیں'۔

ان کا کہنا تھا کہ 'اپوزیشن کو مذاکرات کے بارے میں آگاہ کیا گیا تھا تاہم کسی کو کبھی کوئی مقالہ نہیں دکھایا جاسکا تھا'۔

ستندر لامبا نے کہا کہ 'رازداری ضروری ہے مقامی رد عمل کو ختم کرنے کے لیے جو کسی معاہدے کے ہونے سے قبل ہی سامنے آتے ہیں، پاکستان کا تجارت کے بارے میں حالیہ فیصلہ اس کی عمدہ مثال ہے یہاں تک کہ جب پاکستان کے وزیر اعظم نے درآمدات کھولنے کا فیصلہ کیا تو دوسروں نے اس پر اعتراض کیا اور اسے مؤخر کردیا گیا'۔

ستندر لامبا نے تصدیق کی کہ منموہن سنگھ کے دور میں پاکستان کے اس وقت کے صدر جنرل پرویز مشرف کے درمیان مسئلہ کشمیر کے حوالے سے معاہدے پر دستخط ہونے کے قریب تھے، 'ہم نے تو یہ بھی سوچا تھا کہ اگر ہمارا معاہدہ ہوتا ہے ہم چاہتے تھے کہ تمام سابق وزرائے اعظم کی نمائندگی کی جائے تاکہ ہم یہ ظاہر کرسکیں کہ وسیع اتفاق رائے موجود ہے تاہم جنرل پرویز مشرف کی جانب سے چیف جسٹس افتخار چودھری کو برطرف کرنے کے فیصلے نے معاملات کو پاکستان میں پٹری سے اتار دیا اور ہمارے ساتھ جو معاہدہ ہوا اس پر دستخط نہیں ہوسکے، پاکستان اور بیرونی دنیا کے تجزیہ کاروں نے بھی اسے ناکامی کی ایک وجہ کے طور پر قبول کیا ہے'۔

مزید پڑھیں: پاک-بھارت تعلقات: 2019 سفارتی اور عسکری محاذ آرائیوں کا سال

اگر جنرل قمر جاوید باجوہ اور بھارتی قومی سلامتی کے مشیر اجیت کے درمیان بات چیت ہوتی ہے تو بھارتی نمائندے کو ان کا کیا مشورہ ہوگا؟

ستندر لامبا نے دی ہندو کو بتایا کہ 'میرے پاس ان کے لیے کوئی تجویز نہیں، اگر سچ ہے تو مجھے یقین ہے کہ اجیت اور جنرل قمر جاوید باجوہ کے درمیان بیک چینل مکالمہ ایک اچھا امتزاج ہوگا، ہمارے تمام اختلافات کے پیش نظر وہ بات چیت کرنے والوں کی حیثیت سے یا بات چیت کی نگرانی کے لیے ایک اچھا امتزاج ہوں گے'۔