کووڈ کے مریضوں کے لیے بروفن کا استعمال نقصان دہ نہیں، تحقیق

08 مئ 2021
— شٹر اسٹاک فوٹو
— شٹر اسٹاک فوٹو

ورم کش ادویات جیسے بروفن کا استعمال کووڈ 19 کے مریضوں کی حالت کو زیادہ خراب یا موت کا خطرہ نہیں بڑھاتا۔

یہ بات ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

طبی جریدے دی لانسیٹ Rheumatology جرنل میں شائع تحقیق میں 72 ہزار سے زیادہ افراد کو شامل کیا گیا ہے۔

ورم کش ادویات عموماً شدید تکلیف اور جوڑوں میں ورم سے متعلق امراض کے لیے زیادہ استعمال کی جاتی ہیں اور کورونا وائرس کی وبا کے آغاز میں یہ بحث سامنے آئی تھی کہ ان ادویات کا استعمال کووڈ 19 کی شدت میں اضافے کا باعث تو نہیں بنتا۔

برطانیہ میں ہونے والی یہ تحقیق اس حوالے سے اب تک کی سب سے بڑی تھی اور اس میں واضح شواہد سامنے آئے جن سے عندیہ ملتا ہے کہ ورم کش ادویات کا استعمال کووڈ 19 کے مریضوں کے لیے محفوظ ہوتا ہے۔

تحقیق کے دوران ایک تہائی مریضوں (4211 میں سے 1279) نے کووڈ 19 کے باعث ہسپتال میں داخلے سے قبل ان ادویات کا استعمال کیا تھا اور ان کا انتقال ہوا۔

مگر ان ادویات کا استعمال نہ کرنے والے افراد ایک تہائی مریضوں (67968 میں سے 21256) میں بھی اموات کی شرح یہی تھی۔

جوڑوں کے امراض کے شکار کووڈ کے مریضوں میں ان ادویات کے استعمال سے اموات کی شرح میں اضافہ نہیں ہوا۔

ایڈنبرگ یونیورسٹی کے پروفیسر ایون ہیریسن اس تحقیقی ٹیم کے سربراہ تھے اور انہوں نے بتایا کہ ان ادویات کا استعمال دنیا بھر میں مختلف امراض کے لیے عام ہوتا ہے، بیشتر افراد کو روزمرہ کی سرگرمیوں کے لیے ان پر انحصار کرنا پڑتا ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ کورونا کی وبا کے آغاز میں ہمیں یہ یقینی بنانے کی ضرورت تھی کہ یہ عام ادویات کووڈ کے مریضوں کی حالت زیادہ خراب کرنے کا باعث تو نہیں بنتیں، اب ہمارے پاس واضح شواہد ہیں کہ یہ ادویات کووڈ کے مریضوں کے لیے محفوظ ہین۔

تحقیق کے دوران ایسے مریضوں کا ڈیٹا کا اکٹھا کیا گیا جن کو ان ادویات تجویز کی گئی تھیں اور وہ ان کا استعمال ہسپتال میں داخلے سے 14 پہلے تک کررہے تھے۔

یہ مریض انگلینڈ، اسکاٹ لینڈ اور ویلز کے 255 طبی مراکز میں جنوری سے اگست 2020 کے دوران داخل ہوئے تھے۔

تحقیق میں شامل 72 ہزار سے زیادہ مریضوں میں سے 5.8 فیصد نے ہسپتال میں داخلے سے قبل ان ادویات کا استعمال کیا تھا۔

تمام تر عوامل کا تجزیہ کرنے کے بعد دریافت کیا گیا کہ ورم کش ادویات استعمال نہ کرنے والے افراد کے مقابلے میں انہیں کھانے والے افراد میں آئی سی یو میں داخلے، وینٹی لیشن یا آکسیجن کی ضرورت کا امکان کم ہوتا ہے۔

محققین نے تسلیم کیا کہ تحقیق کے کچھ پہلو محدود ہیں کیونکہ اس میں اس عرصے میں برطانیہ میں ہسپتالل میں زیرعلاج صرف 60 فیصد مریضوں کے ڈیٹا کو شامل کیا گیا جبکہ ایسے مریض اس کا حصہ نہیں تھے جن میں مرضج کی شدت زیادہ تھی مگر وہ ہسپتال میں داخل نہیں ہوئے۔

اسی طرح تحقیق میں پہلو بھی جانچا نہیں گیا کہ ہسپتال میں داخلے سے پہلے کتنے عرصے تک مریضوں کی جانب سے ورم کش ادویات کا استعمال کیا گیا، جبکہ جن افراد نے استعمال کیا ان میں طویل المعیاد یا مختصر المدت ریلیف کی شرح کیا تھی۔

تبصرے (0) بند ہیں