آرمی چیف کا دورہ کابل، اشرف غنی سے ملاقات، افغان امن عمل کی حمایت کا اعادہ

اپ ڈیٹ 10 مئ 2021
---فائل فوٹو
---فائل فوٹو

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے اس بات کا اعادہ کیا ہے کہ پاکستان تمام اسٹیک ہولڈرز کے باہمی اتفاق رائے پر مبنی ’افغان امن عمل‘ کی ہمیشہ حمایت کرے گا۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق آج (پیر) کو دورہ کابل کے موقع پر افغان صدر اشرف غنی سے گفتگو کرتے ہوئے آرمی چیف نے کہا کہ پرامن افغانستان کا مطلب بالعموم پرامن خطہ اور بالخصوص پر پُرامن پاکستان ہے۔

مزید پڑھیں: آرمی چیف جنرل قمر باجوہ سرکاری دورے پر سعودی عرب پہنچ گئے

آئی ایس پی آر کے مطابق افغان صدر نے معنی خیز گفتگو پر آرمی چیف کا شکریہ ادا کیا اور افغان امن عمل میں پاکستان کے مخلص اور مثبت کردار کو سراہا۔

علاوہ ازیں اجلاس میں باہمی دلچسپی کے امور، افغان امن عمل میں حالیہ پیشرفت، دوطرفہ سلامتی اور دفاعی تعاون میں اضافہ اور دونوں برادر ممالک کے مابین سرحدی انتظام کے مؤثر انتظام کی ضرورت پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ملاقات کے دوران چیف آف ڈیفنس اسٹاف یوکے جنرل سر نکولس پیٹرک کارٹر بھی موجود تھے۔

مزیدپڑھیں: آرمی چیف کی ریاض میں سعودی ہم منصب سے ملاقات، عسکری تعاون بڑھانے پر تبادلہ خیال

بعدازاں آرمی چیف نے افغانستان کی قومی مصالحت کی اعلیٰ کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ سے بھی ملاقات کی اور افغان امن عمل سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا۔

یاد رہے کہ ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز انٹلی جنس (آئی ایس آئی) لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید بھی سرکاری دورے کے دوران آرمی چیف کے ہمراہ کابل میں موجود ہیں۔

برطانوی چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل سرنکولس پیٹرک سے ملاقات

علاوہ ازیں برطانیہ کے چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل سرنکولس پیٹرک کارٹر نے بھی آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ملاقات کی اور باہمی دلچسپی کے امور اور علاقائی سلامتی کی صورتحال خصوصاً افغان امن عمل میں موجودہ پیش رفت پر تبادلہ خیال کیا۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق ملاقات میں دوطرفہ اور دفاغی تعاون کو مزید فروغ دینے سے متعلق امور پر زیر بحث آئے۔

آرمی چیف نے ڈیوک آف ایڈنبرا شہزادہ فلپ کے انتقال پر تعزیت کی اور کہا کہ دنیا ایک انتہائی قابل احترام دوست سے محروم ہوگئی ہے۔

جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاک فوج برطانیہ کے ساتھ اپنے دوستانہ تعلقات کو انتہائی اہمیت دیتی ہے۔

دورہ افغانستان سے قبل چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سعودی عرب کا دورہ کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: افغان امن معاہدے میں پاکستان کے لیے 'نیا کردار' ممکن ہوسکتا ہے، امریکی تجزیہ کار

جہاں انہوں نے پاکستان اور سعودی عرب کی خودمختاری اور حرمین شریفین کے دفاع کے عزم کا اظہار کیا تھا۔

انہوں نے جدہ میں سعودی ولی عہد محمد بن سلمان، سعودی نائب وزیراعظم و وزیر دفاع شہزادہ خالد بن سلمان اور نائب وزیر دفاع سے ملاقات کی تھی۔

واضح رہے کہ یہ ملاقات ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب امریکا نے افغانستان سے فوج کے شیڈول انخلا سے قبل وہاں سے آلات نکالنے شروع کر دیے ہیں۔

افغانستان سے انخلا کرنے والے فوجیوں کی سیکیورٹی کے لیے بھی منصوبے پر عمل کیا جارہا ہے اور اس حوالے سے خطے میں زیادہ دور تک ہدف کو نشانہ بنانے والے بمبار تعینات کیے گئے ہیں۔

افغانستان سے امریکی فوجیوں کے انخلا کا عمل چند ہفتوں میں شروع ہونے کا امکان ہے۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے 15 اپریل کو افغانستان سے رواں سال 11 ستمبر تک فوج کا مکمل انخلا کرکے ملک کی بیرون ملک سب سے طویل فوجی جنگ کے خاتمے کا اعلان کیا تھا، اس روز نائن الیون حملوں کی 20ویں برسی بھی ہوگی۔

تبصرے (0) بند ہیں