• KHI: Maghrib 7:15pm Isha 8:42pm
  • LHR: Maghrib 7:00pm Isha 8:36pm
  • ISB: Maghrib 7:10pm Isha 8:50pm
  • KHI: Maghrib 7:15pm Isha 8:42pm
  • LHR: Maghrib 7:00pm Isha 8:36pm
  • ISB: Maghrib 7:10pm Isha 8:50pm

آئی ایم ایف سے مذاکرات کی کامیابی پر پُرامید ہوں، شوکت ترین

شائع October 14, 2021 اپ ڈیٹ October 15, 2021
انہوں نے کہا کہ آخری مرحلے پر آئی ایم ایف میں سینئرز کے ساتھ ملاقاتیں ہوں گی—فوٹو: یو ایس آئی بی اسکرین شاٹ
انہوں نے کہا کہ آخری مرحلے پر آئی ایم ایف میں سینئرز کے ساتھ ملاقاتیں ہوں گی—فوٹو: یو ایس آئی بی اسکرین شاٹ

وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے امید ظاہر کی ہے کہ پاکستان اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے درمیان اعلیٰ سطح کے مذاکرات کامیاب ہوں گے اور 6 ارب ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) دوبارہ بحال ہوجائیں گے۔

سرکاری نیوز ایجنسی ’اے پی پی‘ کے مطابق امریکا کے انسٹی ٹیوٹ آف پیس کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ ہم نے آج تک جو پیشرفت کی ہے وہ واقعی حوصلہ افزا ہے اور اس دورے میں یہ ہوتا ہوا دیکھ رہا ہوں۔

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کا چھٹا دور امریکا کے دورے کا سب سے اہم حصہ تھا، کئی ورچوئل ملاقاتیں ہو چکی ہیں جبکہ تکنیکی سطح پر بات چیت بھی ختم ہو چکی ہے۔

مزید پڑھیں: شوکت ترین، نو تشکیل شدہ ایکنک کی سربراہی کریں گے

انہوں نے کہا کہ آخری مرحلے پر آئی ایم ایف میں سینئرز کے ساتھ ملاقاتیں ہوں گی جن میں فنڈ کے منیجنگ ڈائریکٹر بھی شامل ہیں۔

شوکت ترین نے کہا کہ ان کی حکومت کو یقین ہے کہ آئی ایم ایف کی جانب سے بجلی کے نرخوں میں اضافے کا مطالبہ افراط زر کو ہوا دے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ نکتہ فنڈ کے ساتھ تکنیکی بحث میں کیا گیا جس میں یہ بھی بتایا گیا کہ ٹیرف میں اضافہ بتدریج کیا جائے گا تاکہ افراط زر پر کوئی اچانک اثر نہ پڑے۔

شوکت ترین نے کہا کہ پاور سیکٹر میں کچھ مسائل تھے جس کے لیے حکومت کو ادائیگی کرنا پڑی۔

وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ ڈسٹری بیوشن اور جنریشن کمپنیوں کی کارکردگی کو بھی بہتر بنایا جا رہا ہے، یہ سب آئی ایم ایف کے ساتھ کامیابی سے بات چیت ہو رہی ہے۔

معشیت اور ترقی

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ ترقی میں کوئی رکاوٹ نہیں ہے اور پاکستانی معیشت مالی سال 22-2021 کے دوران 5 فیصد سے زیادہ ترقی کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ 1960 کی دہائی میں پاکستان کی معیشت ایشیا میں چوتھی بڑی تھی لیکن ذوالفقار علی بھٹو کی نیشنلائزیشن پالیسی اور 1979 میں افغان جنگ نے معاشی ترقی کو متاثر کیا۔

شوکت ترین نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے ایک ایسی معیشت سنبھالی جو 2018 میں 20 ارب ڈالر کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے اور غیر مستحکم مالیاتی خسارے کے ساتھ جدوجہد کر رہی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان کو دو افغان جنگوں کے اثرات کا سامنا ہے، شوکت ترین

انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم کو آئی ایم ایف کے سخت پروگرام کے علاوہ کرنسی کی قدر میں کمی سمیت کچھ غیر سیاسی فیصلے کرنے پڑے۔

ان کا کہنا تھا کہ مالی سال 2021 کے دوران ترقی گزشتہ سال 0.5 فیصد کے مقابلے میں 4 فیصد سے زیادہ ریکارڈ کی گئی۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان کی تقریبا 60 فیصد آبادی 30 سال سے کم عمر کی ہے، انہیں نوکریوں کی ضرورت ہے لہذا حکومت نے زراعت، صنعت، برآمدات اور رہائش کو دوبارہ بحال کیا ہے۔

مثبت معاشی نمو

شوکت ترین نے کہا کہ حکومت اس بات کو بھی یقینی بنارہی ہے کہ پسماندہ لوگوں کو نظر انداز نہ کیا جائے اور ان پر مثبت معاشی نمو کے اثر کا انتظار کیا جائے لہذا حکومت نے پائیدار اور جامع ترقی کو یقینی بنانے کے لیے نیچے سے اوپر کے طریقے استعمال کیے تھے۔

انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے لیے حکومت کسانوں اور کم آمدنی والے خاندانوں کو ہیلتھ کارڈ جاری کرنے اور تقریباً 40 لاکھ گھرانوں کی مدد کے لیے تکنیکی تربیت دے رہی ہے۔

جیو اکنامکس

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ وزیر اعظم نے ملک کی توجہ کو جیو پولیٹکس سے جیو اکنامکس میں تبدیل کردیا ہے تاکہ لوگوں کی معاشی فلاح کو یقینی بنایا جا سکے۔

یہ بھی پڑھیں: وزیر خزانہ کا آئندہ چند دنوں میں آٹے کی قیمت میں ’غیر معمولی‘ کمی کا عندیہ

انہوں نے کہا کہ ’اس قسم کی تبدیلی کا مطلب ہے کہ خارجہ پالیسی، اقتصادی پالیسی، داخلی سلامتی اور پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات کے لحاظ سب کچھ بدل جاتا ہے‘۔

بھارت کے ساتھ تجارت

شوکت ترین نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک بنیادی مسئلہ ہے اور وہ کشمیر ہے، موجودہ بھارتی حکومت اس کی متنازع نوعیت کو قبول نہیں کررہی ہے اور اس نے کشمیریوں کو مختلف حقوق سے محروم کرتے ہوئے کچھ یکطرفہ فیصلے کیے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے مابین تجارتی اور معاشی سرگرمیاں متاثر ہو رہی ہیں، وزیراعظم عمران خان نے بھارت کو کئی مرتبہ کہا کہ اگر وہ ایک قدم اٹھاتے ہیں تو پاکستان دو قدم اٹھائے گا اور بھارتی حکومت پر زور دیا کہ وہ مثبت جواب دے۔

مزید پڑھیں: آئی ایم ایف پروگرام ختم کرنا اب ممکن نہیں، شوکت ترین

وفاقی وزیر نے کہا کہ سیاسی سطح پر معیشت اور دونوں ممالک کے لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے کچھ جگہ فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات ہیں لیکن بھارت کے ساتھ مسائل ہیں جنہیں حل کرنے کی ضرورت ہے۔

افغانستان کی صورتحال

وفاقی وزیر خزانہ شوکت نے کہا کہ دیگر ممالک کی طرح پاکستان بھی افغانستان میں ایک جامع حکومت چاہتا ہے اور اس کے لیے کوشش کر رہا ہے۔

انہوں نے خبردار کیا کہ طالبان کے پاس نقد رقم ختم ہو رہی ہے اور اگر دنیا انسانی بنیادوں پر ان کی مدد کرنے کے لیے نہیں آئی تو مکمل انتشار ہو گا جو پاکستان اور دیگر ممالک میں پھیل جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ چونکہ طالبان کہہ رہے تھے کہ وہ دنیا کے ساتھ تعاون کریں گے، ایک ذمہ دار ملک بنیں گے، انسانی حقوق کا خیال رکھیں گے، خواتین کے حقوق کا تحفظ کریں گے اور دہشت گردی کو فروغ نہ دینے کا عہد کریں گے، ہمیں قدم قدم پر ان کی مدد کرنی چاہیے اور انہیں وعدوں کی تکمیل کے لیے حوصلہ دینا چاہیے۔

شوکت ترین نے کہا کہ اگر افغانستان کے حالات خراب ہوئے تو یہ پاکستان کو سب سے زیادہ متاثر کرے گا۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان کو یقین ہے کہ اگر افغانستان کے حالات خراب ہوئے تو ہم براہ راست متاثر ہوں گے۔

پاکستان چین تعلقات

شوکت ترین نے کہا کہ پاکستان، امریکا اور چین سمیت ہر ملک کے ساتھ دوستانہ تعلقات چاہتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کی امریکا کے ساتھ ’بڑی اسٹریٹجک پارٹنرشپ‘ ہے اور ’ہمیں یقین ہے کہ ہم دونوں طاقتوں کے ساتھ یکساں طور پر کام کر سکتے ہیں‘۔

وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ چین نے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر میں ملک کی مدد کی لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ پاکستان چین کا مرکز بن گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: قومی اقتصادی سروے: معیشت کے استحکام کے بجائے اب نمو پر توجہ دینی ہے، وزیر خزانہ

انہوں نے کہا کہ ہم چین، امریکا، یورپ، جاپان، کوریا کے ساتھ کاروبار کرنا چاہتے ہیں، ہم (ایک) اوپن ملک ہیں، کوئی غلط فہمی نہیں ہونی چاہیے۔

چین پاکستان اقتصادی راہداری پر شوکت ترین نے کہا کہ پاکستان کو بیرونی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے انفرا اسٹرکچر بنانے کی ضرورت ہے۔

گوادر پورٹ

شوکت ترین نے زور دیا کہ گوادر بندرگاہ چین پر منحصر نہیں ہے اور یہ جاپانی، جنوبی کوریا اور یورپی باشندوں سمیت ہر ایک کے استعمال کے لیے کھلا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر کوئی افریقی ممالک یا وسطی ایشیائی ریاستوں کے ساتھ کاروبار کرنا چاہتا ہے تو گوادر صحیح جگہ ہے جبکہ چین کا فاصلہ بندرگاہ سے مختصر ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ کوئی بھی ملک پاکستان میں آ کر سرمایہ کاری کر سکتا ہے۔

شوکت ترین نے کہا کہ ایک مستحکم افغانستان سب کے لیے اچھا ہے اور دنیا پر زور دیا کہ وہ ملک کو ہر ایک کے فائدے کے لیے قابل انتظام بنانے میں مدد کرے۔

ایف اے ٹی ایف

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی شرائط پر وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ پاکستان نے 27 میں سے 26 شرائط پوری کی ہیں اور 27 ویں شرائط بھی آدھی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس صورتحال میں کسی بھی دوسرے ملک کو گرے لسٹ سے نکال دیا جاتا لیکن پاکستان کو کچھ ممالک اقتصادی وجوہات کی بنا پر مختلف وجوہات کی بنا پر سزا دے رہے ہیں۔

مزید پڑھیں: قومی اقتصادی سروے: معیشت کے استحکام کے بجائے اب نمو پر توجہ دینی ہے، وزیر خزانہ

شوکت ترین نے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ ایک منتر ہے کہ پاکستان ایک دہشت گرد ریاست ہے اور پاکستان دہشت گردی کی حوصلہ افزائی کرتا ہے جبکہ یہ عمل مسلسل الزام لگایا جا رہا ہے۔

آف شور کمپنیاں

وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ ملک سے دارالحکومت کی پرواز کے لیے لوگوں سے تفتیش کی جا رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کسی کو بھی نہیں بخشا جائے گا اور جس نے بھی کوئی غلط کام کیا اسے نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔

شوکت ترین نے کہا کہ حکومت کے زیر انتظام تقریباً 85 کمپنیاں ہیں جن میں سے 15 کا خسارہ جی ڈی پی کے تقریباً ایک فیصد کے برابر ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ان میں ایئر لائن، ریلوے، اسٹیل ملز اور بجلی کی تقسیم کار کمپنیاں شامل ہیں۔

نجکاری

وفاقی وزیر نے کہا کہ ان کمپنیوں کو وزارتوں سے الگ کر دیا جائے گا اور ان کا کنٹرول پیشہ ور افراد کے حوالے کیا جائے گا تاکہ ان کی اصلاح کی جائے اور 5 سال کے اندر ان کی نجکاری کی جائے گی۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک میں حکومت کے پاس کاروبار نہیں ہے۔

کارٹون

کارٹون : 27 مئی 2024
کارٹون : 26 مئی 2024