ساڑھے 9 برس کی ماہواری اور مردانہ پیڈز!

52 برس میں سے اگر 12 منفی کریں تو جواب آئے گا 40۔

40 برس میں دیکھیے کتنے ماہ ہوتے ہیں؟ 40 ضرب 12 = 480 مہینے۔

ہر مہینے کا ایک ہفتہ، مطلب 480 ہفتے۔

480 ہفتوں کو برسوں میں تبدیل کردیجیے تو تقریباً ساڑھے 9 برس یا ساڑھے 3 ہزار دن!

پریشان نہ ہوئیے، مسئلہ فیثا غورث پڑھانے کا ہمارا کوئی ارادہ نہیں۔ ہم تو سیدھا سیدھا حساب کر رہے ہیں کہ ایک عورت زندگی کے کتنے ہفتے یا برس یا دن خون میں لت پت ہوکر گزارتی ہے۔

ساڑھے 9 برس ماہواری کی تکلیف سے گزرتے ہوئے وہ زندگی یوں بسر کرتی ہے کہ کوئی حرف شکایت زبان پر نہیں آتا۔

عورت تو اسے اپنی قسمت کا لکھا سمجھ کر برداشت کرتی ہی ہے لیکن اس کے اردگرد رہنے والے اس کی تکلیف سے ناصرف انجان رہتے ہیں بلکہ سمجھنا بھی نہیں چاہتے۔ ان کے نزدیک اسے ان مراحل سے گزرنا ہی ہے۔

درست کہ یہ مشیت الہٰی ہے، جسم کی بناوٹ ہے، زندگی کی نمو کا تقاضا ہے، لیکن کیا ایسا نہیں ہوسکتا کہ عورت کی تکلیف اور درد کو محسوس کیا جائے؟ اس کے ان دنوں کو سہل بنایا جائے؟ ہارمونز کے زیرِ اثر جس جذباتی بحران اور تلاطم کا شکار وہ بنتی ہے، اس کو سہارا دیا جائے۔

مزید پڑھیے: پھٹی ہوئی آنول، اندھیرا اور راز!

یہ سب کچھ اس وقت تک نہیں ہوسکتا جب تک اس وقت کو خود پر گزارا نہ جائے۔ فیض صاحب کو اگر دل کا دورہ نہ ہوا ہوتا، دورے کے درد کی شدت محسوس نہ کی ہوتی تو وہ یہ کیسے کہتے؟

درد اتنا تھا کہ اس رات دل وحشی نے
ہر رگ جاں سے الجھنا چاہا
ہر بن مو سے ٹپکنا چاہا
اور کہیں دور ترے صحن میں گویا
پتا پتا مرے افسردہ لہو میں دھل کر
حسن مہتاب سے آزردہ نظر آنے لگا
میرے ویرانۂ تن میں گویا
سارے دکھتے ہوئے ریشوں کی طنابیں کھل کر
سلسلہ وار پتا دینے لگیں

درد سے یاد آیا کہ کچھ لوگوں نے تحقیق کرتے ہوئے یہ جاننا چاہا کہ ماہواری کے درد کا تجربہ ایک مشین کے ذریعے اگر لڑکوں پر کیا جائے تو کیا ہوگا؟ رپورٹ کے مطابق مشین کے ذریعے پیدا کیے جانے والے ان درد کے جھٹکوں کو زیادہ تر لڑکے برداشت نہ کرسکے۔ لوٹ پوٹ ہوکر یہی کہتے رہے، یہ درد بھلا کوئی کیسے سہہ سکتا ہے؟ وہیں موجود لڑکیوں کو جب اس تجربے سے گزارا گیا تو ہر کسی کا کہنا تھا، اصل درد کے سامنے تو یہ کچھ بھی نہیں۔

اب ایسی تحقیق پڑھ کر اگر غیب سے کچھ مضامین آنے لگیں تو بتائیے ہم کیا کریں؟ تخیل کچھ ایسے منظر دکھانے لگے جو ماورائے عقل ہوں تو سر دھننے میں کیا حرج ہے؟

عورت کی مشکلات اور تکالیف محسوس کرنے کا نسخہ ہمیں نوئیل نے سجھایا۔ بی بی نوئیل سے بہت برسوں پہلے ملاقات ہوئی جب انہیں دیکھتے ہوئے ہماری آنکھیں حیرت سے پھٹی جاتی تھیں کہ کیا کرشماتی بی بی ہے بھئی؟

ہم ایک میڈیکل کانفرنس میں شرکت کرنے بیلفاسٹ میں موجود تھے جب نوئیل سے ایک کمپنی کے اسٹال پر ہماری ملاقات ہوئی۔

کراہتی، چیختی، مدد کے لیے پکارتی، منٹ منٹ پر اپنی تکلیف کا اظہار کرتی، درد زہ میں مبتلا نوئیل۔ ایسی حالت میں ایک عورت اور ہجوم عاشقاں… مطلب …ہجوم ڈاکٹرز، کیوں بھلا؟

نوئیل ایک ایسی عورت جو سانس لیتی تھی، جس کا جسم نرم و گرم اور پیٹ میں بچہ تھا، درد کا اظہار کرتی تھی، جس کی نبض اور بلڈ پریشر ریکارڈ ہوتا تھا مگر پھر بھی وہ زندہ نہیں تھی۔ نوئیل ایک ڈمی، جو میڈیکل کے طالب علموں کو زچگی کا عمل سمجھانے کے لیے بنائی گئی۔ کیا عورت تھی بھئی! ہمارا مطلب ہے، ڈمی!

ڈمی اور سیمولیشن سائنس پڑھانے کا ایک جدید طریقہ ہے جو بہت سے شعبوں میں استعمال کیا جا رہا ہے۔ سرِفہرست ہوابازی ہے جس میں پائلٹ سیمولیٹر پر گھنٹوں جہاز اڑانے کی پریکٹس کرتا ہے۔ سیمولیٹرز امیدوار کو حقیقی دنیا جیسی کیفیات سے گزارتے ہیں۔ یعنی زمین پر بیٹھا ہوا اپنے آپ کو اسپیس شٹل میں محسوس کرسکتا ہے۔ اسی طرح ڈاکٹر بھی سیمولیٹرز کے ذریعے زچگی کا عمل سیکھ سکتے ہیں۔

پنجابی میں ضرب المثل ہے، راہ پے جانیے یا واا پے جانیے۔ یعنی جس راہ پر آپ چلے نہ ہوں یا جس صورتحال سے واسطہ نہ پڑا ہو، وہ کوئی بھی نہیں سمجھ سکتا۔

زچگی اور ماہواری کی مشکلات کا شور چاہے جتنا بھی مچایا جائے، مرد حضرات اس سے وابستہ تکلیف کا اندازہ نہیں لگا سکتے۔ سو کیسا رہے اگر ہم سیمولیٹرز کی مدد لیں تو؟

مزید پڑھیے: منشی پریم چند کی بدھیا اور اکیسویں صدی کی عورت!

ہمارا خیال یہ ہے کہ 12 کلو وزنی کشن پیٹ پر استعمال کیا جاسکتا ہے کہ ایک حمل کا اوسطاً وزن 12 کلو ہوتا ہے۔ 12 کلو میں بچے کا وزن، بچے کے گرد پانی، آنول اور نال کا وزن بھی شامل ہے۔ اس سے زیادہ بھی ممکن ہے لیکن ہم اوسط وزن ہی کی بات کریں گے۔

اس کشن کو شوہر حضرات کے پیٹ پر اگر باندھا جائے، تو شرط لگا لیجیے کہ انوکھے لاڈلے 9 ماہ چھوڑیے، 3 ماہ بھی برداشت نہیں کر پائیں گے سو ترس کھاتے ہوئے مدت کچھ گھٹا دیتے ہیں۔ چلیے صرف ایک ماہ کے لیے سہی یعنی 24 گھنٹے، دن رات۔

کرنا یہ ہوگا کہ اس کشن کو کسی وقت بھی جسم سے علیحدہ نہیں کرنا۔ کشن کے ساتھ وہ اٹھیں بیٹھیں، گھر کا کام کاج کریں، شاپنگ کریں، دوسرے بچوں کو سنبھالیں، بزرگوں کا خیال رکھیں، کھانا بنائیں، نہائیں سوئیں اور ہاں شوہر، میرا مطلب ہے بیوی کی خدمت بھی ویسے کریں جیسے ان کی بیوی کرتی ہے۔

گوکہ یہ اصل حمل جتنا تکلیف دہ نہیں ہوگا جس میں بچہ پیٹ میں اچھلتا کودتا اور چھلانگیں لگاتا ہے، کھانے پینے میں دقّت ہوتی ہے لیکن چلیے کچھ تھوڑا سا اندازہ ہی سہی۔

اسی طرح ماہواری کے گیلے پیڈز مرد حضرات کو پہننے کے لیے دیے جائیں ایک ہفتے کے لیے۔ سخت گرمی کا موسم ہو تو کیا کہنے۔ 7 دن مسلسل گیلے پیڈز پہن کر زندگی ویسی گزاری جائے جیسی خواتین گزارتی ہیں، روز مرہ کے کام، چلنا پھرنا، نوکری، گرمی سردی سب کچھ ویسے، جیسے کچھ ہوا ہی نہ ہو۔

توبہ توبہ، پیڈز اور مرد؟ کیسی باتیں کرتی ہو؟ انڈے بیچو جوتا لو۔ معاف کیجیے گا، کیسی باتیں کرتی ہو سے پہلی جماعت میں یاد کی گئی نظم ہمیں یاد آگئی۔ اللہ غریق رحمت کرے صوفی تبسم کو، کیا نظمیں لکھیں بچوں کے لیے۔ 5 چوہے اور ٹوٹ بٹوٹ تو بھولتی نہیں۔ دیکھیے بُرا نہ مانیے گا اگر ہم موضوع سے کچھ بھٹک جائیں تو۔ کیا کریں ایسی بہت سی باتیں ہمیں باتوں باتوں میں یاد آجاتی ہیں۔

مزید پڑھیے: باکرہ بیوی چاہیے!

تو ہم کہہ رہے تھے کہ مرد حضرات کو پیڈز کے نام سے گھبرانے اور بدکنے کی قطعی ضرورت نہیں۔ مارکیٹ میں ان کے لیے ایک اسپیشل قسم کے پیڈز پہلے سے دستیاب ہیں جن کا مقصد ماہواری نہیں بلکہ بڑھتی عمر کے ساتھ خطا ہونے والے پیشاب کا انتظام کرنا ہے۔

ہماری تجویز کے مطابق پہنے جانے والے گیلے پیڈ شدید گرمی اور برسات میں کیا رنگ دکھائیں گے، یہ ہم تو جانتے ہیں، وہ نہیں سو بتائے دیتے ہیں کہ بعد میں گلہ نہ کریں۔

رانوں کے بیچ رگڑ کھاتے گیلے پیڈز زخم بنائیں گے، بُری طرح چبھیں گے، چپچپاہٹ کے ساتھ کھجانے کو جی چاہے گا۔ کھجانا شاید مشکل نہ ہو کہ ان لوگوں نے پہلے سے ہی کافی پریکٹس کر رکھی ہے۔ یہ تو بے چاری عورت ہے جس کا اپنا جسم اس کے لیے ہی نوگو ایریا ہے۔

یاد رہے کہ یہ صرف پیڈز کی تکلیف ہوگی، جسم سے خارج ہونے والے خون اور لوتھڑوں سے ہونے والی اذیت کو محسوس کرانے والا سیمولیٹر ابھی ہماری عقل ایجاد کرنے سے قاصر ہے۔

ہم امید رکھتے ہیں کہ عورت کی برسہا برس کی تکلیف محسوس کرنے کے لیے آپ اس تجربے میں شامل ہونا پسند کریں گے۔ ایک ایڈونچر ہی سہی۔

اپنی رائے دیجئے

11
تبصرے
1000 حروف
امۃ السمیع Jul 27, 2022 08:02am
عورت کے مسائل کو تہذیب کے دائرے میں رہ کر بیان کرنا ہی متوازن راستہ ہے۔ عورت کے مسائل اجاگر کرنے ہوئے مرد کی بے توقیری بھی ایک غلط رویہ ہی ہے۔ ایک غلطی کو درست کرنے کے لیے دوسری غلطی کرنا حماقت ہے۔ ویسے تو عورت کے مسائل پر ہمارے دین میں سیر حاصل معلومات اور عدل وحکمت پر مبنی تعلیمات نہایت متوازن، مہذب انداز میں موجود ہیں، جن سے مدد لی جا سکتی ہے۔ تاکہ زبان وبیان کی شائستگی اور خوبصورتی قائم رہے اور ساتھ ساتھ دین کے تقدس سے بھی فائدہ اٹھایا جائے۔ دوسری طرف مرد اور عورت کے طبعی فروق کو بنیاد بنا کر عورت کی آزمائشیں بیان کرتے ہوئے زمین وآسمان کے قلابے ملانا بھی کوئی دانشمندانہ عمل نہیں۔ ٹھیک ہے عورت مخصوص طبعی تقاضوں سے گزرتے ہوئے تکلیف اور مشکلات سے گزرتی ہے، لیکن اس میں مرد کو مورد الزام ٹھہرانا، یا اس کا مذاق بنانا کون سا اچھا وصف ہے۔ اور عورت بھی اس قدر کمزور نہیں ہوتی کہ اتنا واویلا مچایا جائے۔ جن طبعی آزمائشوں سے وہ گزرتی ہے، قدرت نے بڑی حد تک اس میں ان کو برداشت کرنے کی طاقت رکھی ہے۔ نیز اس کی انہی کمزوریوں کو مد نظر رکھتے ہوئے محرم مردوں کو اس کا نگہبان بنایا ہے۔ اور مرد سے زیادہ اس کے ساتھ نرمی اور حسن سلوک کی تلقین کی ہے۔ ان خوبصورت، متوازن، اور آفاقی اصولوں کو چھوڑ کر تہذیب کے دائرے سے باہر نکلنا صاف چشمے کے پانی سے چہرہ دھونے کی بجائے گندے نالے سے منھ پر چھینٹے مار لینے کے مترادف ہے ۔
صابرہ Jul 27, 2022 11:07am
ڈاکٹر طاہرہ کاظمی بہت اچھا لکھتئ ہیں آپ کی اکثر تحریریں پڑھ چکی ہوں بس ایک شکوہ آپ سے یہ ہے کہ بعض اوقات آپ مضموں لکھتے ہوئے اس کو ایسا رنگ دے دیتی ہیں کہ وہ مضموں انساں کو قدرت سے شکوہ کناں کر دیتا ہے اور یوں انسان خدا کی رحمت سے محروم ہو جاتا ہے۔ جیسا کہ زیر نظر مضموں میں آپ نے ماہواری کو یوں نمایاں کیا ہے جیسے قدرت کی طرف سے وہ ایک سزا ہے جبکہ حقیقت تو یہ ہے کہ یہ خالق کائنات کی منشاء ہے۔ اور خالق کائنات کی کوئی تخلیق حکمت سے خالی نہیں، واسلام ۔۔
kamran Jul 28, 2022 02:29pm
بہت عمدہ تحریر۔ مرد ہونے کے ناطے پہلی بار اس زاوئے سے اس موضوع کے بارے میں سوچا۔ شکریہ
Ayesha Jul 28, 2022 07:27pm
Extremely useless article . Each gender has its own problems and benefits .crying about them is nothing more then ranting and trying to play victim card
M.Ali Jul 29, 2022 12:44pm
اسی کی وجہ سے آپ کو باپ کی نسبت 75 فی صد اچھے سلوک کا حقدار کیا ہے۔ فکر معاش سے آزاد کیا گیا ہے۔ دنیا کے گوڑ گھمسان سے بھی آزاد کیا گیا ہے۔ عبادات میں رعایت دی گئی ہے۔
fozia Jul 29, 2022 04:41pm
app ka yeh article bhot accha ha
Zafar Jul 31, 2022 12:54am
بہت خوب ۔ بہترین !
M. Saeed Jul 31, 2022 06:36pm
It has been calculated scientifically that, if the force of delivery of a child is applied in a cannon with a round of 7 lbs, the average weight of a new born child, and fired, the round would drop to a distance of 400 feet!! It is the internal friction of the body against delivery, that delivers the child very slowly and delicately.
Salazar Aug 01, 2022 02:18pm
To those who are dismissing the problems faced by women especially during their monthly time, this is exactly what the article is referring to. Critics here include women themselves. It's unfathomable that still in the 21st century, these issues and topics are taboo in our society.
Masood Abro Aug 01, 2022 03:04pm
I think a simulator should also be prepared to use on women how a man undergoes working in the scorching heat of sometimes 50 deg C to keep his wife & children's stomachs full with food. If you collect the volume of sweat he sheds during his entire life would be sufficient for an agri-land to grow crops for atleast his coming next two generations to feed.
Akhtar Banbhan Aug 01, 2022 06:26pm
بھترين