• KHI: Fajr 4:17am Sunrise 5:44am
  • LHR: Fajr 3:24am Sunrise 5:00am
  • ISB: Fajr 3:21am Sunrise 5:01am
  • KHI: Fajr 4:17am Sunrise 5:44am
  • LHR: Fajr 3:24am Sunrise 5:00am
  • ISB: Fajr 3:21am Sunrise 5:01am

سعودی اور ایرانی وزرائے خارجہ کی ملاقات، پروازیں بحال اور ویزے جاری کرنے پر اتفاق

شائع April 6, 2023
چینی وزیر خارجہ کی میزبانی میں ہونے والی ملاقات کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا—فوٹو: رائٹرز
چینی وزیر خارجہ کی میزبانی میں ہونے والی ملاقات کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا—فوٹو: رائٹرز
شہزادہ فیصل بن فرحان السعود اور ان کے ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان نے ایک دوسرے کا استقبال کیا—فوٹو: رائٹرز
شہزادہ فیصل بن فرحان السعود اور ان کے ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان نے ایک دوسرے کا استقبال کیا—فوٹو: رائٹرز

سعودی عرب اور ایران کے درمیان تعلقات کی بحالی کے بعد دونوں ملکوں وزرائے خارجہ نے 7 برس بعد چین میں اہم ملاقات کی جس میں دونوں ممالک کے درمیان پروازیں بحال اور شہریوں کو ویزا کی سہولیات فراہم کرنے پر اتفاق کیا گیا۔

عرب نیوز پاکستان کی رپورٹ کے مطابق دونوں ممالک کی طرف سے پروازیں بحال کرنے اور عمرہ کے لیے ویزے جاری کرنے کا فیصلہ چین کے دارالحکومت بیجنگ میں سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان السعود اور ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان کے درمیان ہونے والی ملاقات کے بعد کیا گیا ہے۔

چینی وزیر خارجہ کی میزبانی میں ہونے والی ملاقات کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا۔

دونوں ممالک نے اس بات پر اتفاق کیا کہ پروازیں بحال کرنے کے ساتھ ساتھ ریاض اور تہران میں سفارت خانے جبکہ جدہ اور مشہد میں قونصلیٹ بحال کرنے کے انتظامات کیے جائیں گے۔

دونوں ممالک نے سرکاری اور نجی شعبوں کے حکام کے دوروں کے ذریعے تعلقات کی دوبارہ بحالی پر بھی زور دیا۔

مشترکہ بیان میں خطے میں سلامتی اور استحکام کے حصول کے لیے باہمی اعتماد کو بڑھانے اور تعاون کے دائرہ کار کو وسیع کرنے کے لیے معاہدے کو فعال کرنے کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے۔

تعلقات کی تجدید کے معاہدے پر سعودی قومی سلامتی کے مشیر موسیٰ بن محمد العیبان اور ٰ ایرانی سیکیورٹی اہلکار علی شمخانی کی طرف سے دستخط کیے گئے۔

ادھر سعودی عرب کے شہزادہ فیصل بن فرحان السعود نے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی بحالی کے لیے چین کی کوششوں کو سراہا ہے۔

سعودی وزیر خارجہ اور ان کے ایرانی ہم منصب نے مشترکہ مفادات کے حصول اور خطے سمیت دنیا میں امن کے حصول کے لیے کوششوں کو بڑھانے کے طریقوں پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

چین میں ملاقات کے اختتام کے بعد سعودی وزیر خارجہ نے ایرانی ہم منصب کو مملکت کا دورہ کرنے اور ریاض میں دو طرفہ ملاقات کی دعوت کی تجدید کی۔

قبل ازیں چین کے دارالحکومت بیجنگ میں سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان السعود نے اپنے ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان سے ملاقات کی تھی۔

یہ 7 سال سے زائد عرصے کے بعد دونوں ملکوں کے اعلٰی ترین سفارت کاروں کے درمیان پہلی باضابطہ ملاقات ہے جس میں دونوں ممالک کے دیگر اعلیٰ حکام نے بھی شرکت کی۔

یہ پیش رفت حریف تصور کیے جانے والے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی بحالی کے لیے چین کی ثالثی کے نتیجے میں طے پائے جانے والے معاہدے کے بعد سامنے آئی ہے، گزشتہ ماہ ایران اور سعودی عرب نے تعلقات بحال کرنے اور سفارت خانے دوبارہ کھولنے پر اتفاق کرلیا تھا۔

ایران کے سرکاری ٹی وی پر نشر ہونے والی مختصر فوٹیج میں شہزادہ فیصل بن فرحان السعود اور ان کے ایرانی ہم منصب حسین امیرعبداللہیان ساتھ براجمان ہونے سے قبل ایک دوسرے کا استقبال کرتے نظر آئے۔

مارچ میں چین کے صدر شی جن پنگ نے ایران اور سعودی عرب کے درمیان 7 برسوں سے موجود گہری دراڑ کو ختم کرنے اور سفارتی تعلقات کی بحالی کے لیے ایک غیرمعمولی معاہدے میں معاونت کی جوکہ اس خطے میں چین کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ کو عیاں کرتا ہے، شی جن پنگ نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان السعود کے ساتھ فون پر کئی امور پر بات چیت کی تھی۔

ایران کی نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی ’آئی ایس این اے‘ کے مطابق بیجنگ میں ہونے والی تازہ ملاقات کے دوران تعلقات کی بحالی اور دونوں ممالک کے سفیروں کی تعیناتی کے انتظامات پر بات چیت کی گئی۔

ایران اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات کی بحالی میں چین کے کردار نے مشرق وسطیٰ میں اثرورسوخ کا محور بدل کر رکھ دیا، جہاں کئی دہائیوں تک امریکا مرکزی ثالث کا کردار ادا کرتا رہا ہے۔

سعودی عرب کی جانب سے 2016 میں شیعہ عالم نمر النمر کو پھانسی دینے کے بعد ایران میں سعودی سفارتی مشن پر حملہ کیا گیا تھا جس کے بعد سے سعودی عرب اور ایران کے درمیان سفارتی تعلقات ختم ہوگئے تھے۔

اس واقعے کے ردعمل میں سعودی عرب نے ایرانی سفارت کاروں کو 48 گھنٹوں کے اندر اندر ملک چھوڑ دینے کا حکم دے دیا تھا جبکہ ایران سے اپنے سفارت خانے کے عملے کو بھی واپس بلالیا تھا۔

ایک سال قبل سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کی جانب سے یمن جنگ میں مداخلت کے بعد یہ تعلقات مزید خراب ہونے لگے تھے، جہاں ایران کی حمایت یافتہ حوثی تحریک نے سعودی حمایت یافتہ حکومت کو بے دخل کر کے دارالحکومت صنعا پر قبضہ کر لیا تھا۔

سعودی عرب کے لیے ایران کے ساتھ اس تازہ معاہدے کا مطلب سیکیورٹی خدشات میں کمی ہوسکتی ہے، سعودی عرب کی جانب سے ایران پر حوثیوں کو اسلحہ فراہم کرنے کا الزام عائد کیا جاتا رہا ہے جو سعودی عرب کے شہروں اور تیل کی تنصیبات پر میزائل اور ڈرون حملے کر چکے ہیں۔

2019 میں سعودی عرب نے آئل کمپنی ’آرامکو‘ کی تنصیبات پر ایک بڑے حملے کا الزام ایران پر عائد کیا تھا تاہم ایران نے ان الزامات کی تردید کی تھی۔

کارٹون

کارٹون : 26 مئی 2024
کارٹون : 24 مئی 2024