ناروے کے معروف ڈراما نگار جون فوسی نے 2023 کا نوبل انعام برائے ادب جیت لیا

اپ ڈیٹ 06 اکتوبر 2023
جان فوس کے ایک ڈراما ’اینڈ وی ول نیور بی پارٹڈ‘ کو 1994 میں عالمی سطح پر شہرت حاصل ہوئی تھی: فوٹو: اے ایف پی
جان فوس کے ایک ڈراما ’اینڈ وی ول نیور بی پارٹڈ‘ کو 1994 میں عالمی سطح پر شہرت حاصل ہوئی تھی: فوٹو: اے ایف پی

ناروے سے تعلق رکھنے والے معروف ڈراما نگار جون فوسی کو ادب کے نوبل انعام سے نوازا گیا، جو ان ڈراما نگاروں میں شامل ہیں جن کے ڈرامے دنیا میں سب سے زیادہ پیش کیے گئے ہیں۔

غیر ملکی خبر ایجنسی ’اے ایف پی‘ کی رپورٹ کے مطابق جون فوس کا موازنہ ایک اور نوبل انعام یافتہ ڈراما نگار سیموئیل بیکٹ سے کیا جاتا ہے کیونکہ ان کا کام مختصر اور سلیس زبان پر مبنی ہے جو منفرد انداز میں خاموشی سے اپنا پیغام پہنچاتا ہے۔

نوبل انعام دینے والی سویڈش اکیڈمی نے کہا کہ 64 سالہ جون فوس کو ان کے منفرد ڈراموں اور نثر کے لیے نوبل انعام سے نوازا گیا ہے جن کے ڈرامے اور نثر سے بے آوازوں کو آواز ملتی ہے کیونکہ ان کی تحریر کا جائزہ مواد کے بجائے طرزکے طور پر لیا جاتا ہے، جس میں جو موجود ہے اس کے بجائے وہ بیان کیا جاتا ہے جو نہیں کہا گیا ہو۔

جون فوس نے کہا کہ ’میں پرجوش اور مشکور ہوں، میں اس کو ادب کے لیے انعام سمجھتا ہوں جس کا اولین اور بنیادی مقصد بھی ادب ہے‘۔

ناروے کے سرکاری نشریاتی ادارے ’این آر کے‘ سے بات کرتے ہوئے جون فوس نے کہا کہ وہ حیران بھی ہیں اور نہیں بھی، کیونکہ گزشتہ کئی برسوں سے ان کا نام نوبل انعام کی فہرست میں شامل کیا جاتا رہا تھا۔

جون فوس کے سب سے زیادہ مشہور ڈراموں میں 1989 میں لکھا گیا ’باتھ ہاؤس‘ اور 1995 میں لکھا گیا ڈراما ’میلان چولی‘ (ون اینڈ ٹو) شامل ہیں۔

پلے رائٹنگ میرے لیے ہی بنی تھی، جون فوسی

نوبل پرائیز کمیٹی نے کہا کہ آج جہاں وہ دنیا میں سب سے زیادہ پرفارم کرنے والے ڈراما نگاروں میں شامل ہیں وہیں وہ اپنے نثر کے لیے بھی مقبول ہیں۔

جون فوسی ایک ایسے خاندان میں بڑے ہوئے جو لوتھرانزم کی سخت شکل کی پیروی کرتا تھا لیکن انہوں نے ایک بینڈ میں کام کرکے خود کو ملحد قرار دے کر اس سے بغاوت کی اور 2013 میں کیتھولک مذہب اختیار کرلیا۔

ادب کا مطالعہ کرنے کے بعد انہوں نے 1983 میں پہلا ناول ’ریڈ، بلیک‘ لکھ کر ادبی دنیا میں قدم رکھا تھا۔

نیم سوانح پر مبنی ان کی حالیہ کتاب ’سیپٹالوجی‘ بغیر کسی فل اسٹاپ کے ایک ہزار 250 صفحات پر مشتمل ہے، ان کی اس کتاب کی تیسری جلد 2022 میں ہونے والے انٹرنیشنل بکر پرائز کے لیے شارٹ لسٹ ہوئی تھی۔

1990 کی دہائی کے اوائل میں ایک مصنف کی حیثیت سے کامیابی کے لیے کوشش کے دوران جون فوسی سے ایک ڈرامے کا ابتدائیہ لکھنے کو کہا گیا تھا۔

ایک بار فرینچ تھیٹر ویب سائٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے جون فوسی نے کہا تھا کہ ’مجھے پتا تھا، میں نے محسوس کیا کہ اس طرح کی رائٹنگ میرے لیے بنی ہے‘۔

جون فوسی کے ایک ڈرامے ’اینڈ وی ول نیور بی پارٹڈ‘ کو 1994 میں عالمی سطح پر شہرت حاصل ہوئی تھی۔

ناروے میں ان کے پبلشر کے مطابق ان کا ایک ڈراما ’سملاگیٹ‘ دنیا بھر میں ایک ہزار سے زائد مرتبہ پیش کیا جا چکا ہے اور ان کے ادبی کام کو 50 سے زائد زبانوں میں ترجمہ کیا گیا ہے۔

جون فوس نے 2003 میں فرانسیسی اخبار کو انٹرویو میں کہا تھا کہ ’میں کرداروں کو روایتی الفاظ میں میں نہیں لکھتا، میں انسانیت کے بارے میں لکھتا ہوں‘۔

خیال رہے کہ سویڈش اکیڈمی مغرب کے لکھاریوں کو زیادہ اہمیت دینے پر تنقید کی زد میں رہی ہے۔

تاہم 2018 میں عالمی سطح پر ’می ٹو‘ مہم سامنے آنے کے بعد عالمی ادارے نے چند اصلاحات کرتے ہوئے صنفی برابری کی بنیاد پر نوبل انعام برائے ادب دینے کا عزم کیا تھا۔

اس مہم کے بعد اکیڈمی نے تین خواتین بشمول فرانس کی اینی ایرناکس، امریکی شاعرہ لوئیس گلک اور پولینڈ کی اولگا ٹوکارزوک جبکہ تین مردوں بشمول آسٹریا کے مصنف پیٹر ہینڈکے، تنزانیا کے مصنف عبدالرازق گورنا اور جون فوسی کو نوبل انعام برائے ادب سے نوازا ہے۔

ضرور پڑھیں

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزیراعظم کا انتخاب کس طرح ہوتا ہے؟

وزارت عظمیٰ کے لیے اگر کوئی بھی امیدوار ووٹ کی مطلوبہ تعداد حاصل کرنے میں ناکام رہا تو ایوان زیریں کی تمام کارروائی دوبارہ سے شروع کی جائے گی۔

تبصرے (0) بند ہیں