صحافی عاصہ شیرازی کےخلاف غلط خبر پر نجی چینل کو معافی نشر کرنے، ہرجانہ ادا کرنے کا حکم

04 دسمبر 2023
عدالت نے سینئر صحافی عاصمہ شیرازی کی اپیل منظور کرلی — فائل فوٹو: عاصمہ شیرازی ایکس
عدالت نے سینئر صحافی عاصمہ شیرازی کی اپیل منظور کرلی — فائل فوٹو: عاصمہ شیرازی ایکس

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سینئر صحافی عاصمہ شیرازی کے خلاف غلط خبر نشر کرنے پر نجی چینل ’اے آر وائی نیوز‘ کو معافی نشر کرنے اور 50 ہزار روپے ہرجانہ ادا کرنے کا حکم دے دیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے پیمرا کی کونسل آف کمپلینٹس کے 21 دسمبر 2022 کے فیصلے کے خلاف سینئر صحافی عاصمہ شیرازی کی اپیل منظور کرتے ہوئے 14 صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کر دیا۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں لکھا کہ اپیل کنندہ کے مطابق اے آر وائی نیوز نے ازخود نوٹس کیس کی عدالتی کارروائی نشر کرتے ہوئے تصویر اور نام چلا کر ناظرین کو یہ غلط تاثر دینے کی کوشش کی کہ ججز نے صحافی عاصمہ شیرازی کی صحافت کو تنقید کا نشانہ بنایا اور ان کے خلاف ریمارکس دیے جبکہ حقیقت میں عدالت میں اپیل کنندہ کا کوئی ذکر نہیں ہوا تھا۔

یاد رہے کہ نجی چینل نے 19 اور 20 جنوری 2022 کو متعدد بار یہ خبر نشر کی تھی جس کے خلاف پیمرا کی کونسل آف کمپلینٹس کو درخواست دی گئی، جو یہ کہہ مسترد کردی گئی تھی کہ درخواست گزار کے پاس ہرجانے کا دعویٰ دائر کرنے کے لیے فورم موجود ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ پیمرا قانون کے تحت چینلز کی ذمہ داری ہے کہ خبر کو درست انداز میں نشر کیا جائے، پیمرا آرڈیننس کے تحت کسی کے خلاف غلط، ہراسانی پر مبنی، ہتک آمیز خبر نہیں چلائی جا سکتی۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ غلط خبر کی وضاحت کے لیے ’اے آر وائی نیوز‘ معافی نشر کرے اور صحافی عاصمہ شیرازی کو 50 ہزار روپے ہرجانے کی ادائیگی کرے، جبکہ عاصمہ شیرازی چاہیں تو چینل کے خلاف ہتک عزت کا دعویٰ بھی دائر کر سکتی ہیں۔

ضرور پڑھیں

تبصرے (0) بند ہیں