لاہور کی احتساب عدالت نے آمدن سے زائد اثاثوں کے ریفرنس میں نگران وزیر اعظم کے مشیر اور سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد چیمہ کو بری کر دیا۔

احتساب عدالت کے جج نے محفوظ فیصلہ سنایا، وزیراعظم کے مشیر احد چیمہ عدالت پیش ہوئے۔

عدالت نے احد چیمہ کی بریت کی درخواست کو منظور کرتے ہوئے انہیں آمدن سے زائد اثاثوں کے ریفرنس سے بری کر دیا۔

واضح رہے کہ 27 نومبر کو احد چیمہ کی بریت کی درخواست پر قومی احتساب بیورو (نیب) کی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ سابق بیوروکریٹ کے خلاف آمدن سے زائد اثاثوں کا نیب ریفرنس نہیں بنتا، ان کے تمام اثاثے ان کی آمدن سے مطابقت رکھتے ہیں۔

نیب رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ احد چیمہ کے مبینہ بے نامی داروں نے اپنی ذاتی آمدن سے پراپرٹیز بنائیں، ان کے مبینہ بے نامی داروں کی پراپرٹیز کو احد چیمہ سے لنک نہیں کیا جاسکتا، ان کے رشتہ داروں سعدیہ منصور، منصور احمد اور نازیہ اشرف کے اکاؤنٹس احد چیمہ کے بے نامی اکاؤنٹس نہیں ہیں۔

یاد رہے کہ 2018 کے انتخابات سے قبل پنجاب میں نیب کی جانب سے کرپشن کے خلاف ہونے والے کریک ڈاؤن کا پہلا ہائی پروفائل کیس احد چیمہ کا تھا اور اس وقت بظاہر پاکستان مسلم لیگ (ن) کی قیادت اور ان کے قریبی رہنماؤں کو نشانہ بنانے کے لیے نیب متحرک تھی۔

نیب نے احد چیمہ کو 21 فروری 2018 کو اس وقت گرفتار کیا تھا جب وہ آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم سے متعلق انکوائری کے لیے تفتیشی ٹیم کے سامنے پیش ہوئے تھے۔

بعد ازاں نیب نے ان کے خلاف الگ الگ انکوائریاں شروع کی تھیں جن میں لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) سٹی اور آمدن سے زائد اثاثوں کا کیس بھی تھا، احمد چیمہ کو گرفتاری کے طویل عرصے بعد اپریل 2021 میں تین مقدمات میں ضمانت دی گئی تھی۔

نیب نے رواں برس 20 مئی کو احد چیمہ کے ساتھ سابق وزیراعظم شہباز شریف کو آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم کیس میں کلیئر قرار دیتے ہوئے الزامات ختم کردیے تھے۔

ضرور پڑھیں

تبصرے (0) بند ہیں