فیصل آباد: شادی سے انکار پر بس کی خاتون میزبان قتل

اپ ڈیٹ 18 جون 2018

ای میل

صوبہ پنجاب کے ضلع فیصل آباد میں نجی بس سروس کے سیکیورٹی گارڈ نے دورانِ سفر خاتون میزبان 19 سالہ مہوش ارشد کو میبنہ طور پر ہراساں کیا اور بعد ازاں بس ٹرمنل پر پہنچ کر اسے فائرنگ کرکے قتل کردیا۔

واقعے کے حوالے سے منظر عام پر آنے والی ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ دوران سفر سیکیورٹی گارڈ نے خاتون میزبان کا ہاتھ پکڑ رکھا ہے اور ان سے بدتمیزی کررہا ہے۔

اس دوران خاتون کی جانب سے کچھ کہنے پر سیکیورٹی گارڈ نے خاتون میزبان کے منہ پر تھپڑ دے مارا اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دیں۔

مزید پڑھیں: شادی سے انکار پر سابقہ منگیتر کا قتل

سیکیورٹی گارڈ کی جانب سے تھپڑ مارے جارنے پر خاتون میزبان نے اسے برا بھلا کہا جبکہ بس میں سوار مسافروں کی جانب سے سیکیورٹی گارڈ اور خاتون میزبان کے درمیان جاری تنازع پر دونوں کو سمجھانے کی کوشش کی گئی۔

خیال رہے کہ ویڈیو میں تنازعے کی وجہ سامنے نہیں آرہی ہے۔

بعد ازاں بس ٹرمنل پر لگے سی سی ٹی وی کیمرہ کی ریکارڈنگ میں دیکھا جاسکتا ہے کہ خاتون ٹرمنل کے قریب پیدل چلنے والوں کے لیے بنائے گئے پل کی سیڑھیاں چڑھ رہی ہیں کہ اس دوران کسی شخص نے آکر خاتون میزبان کو روکا اور ان کا ہاتھ پکڑ لیا اور معمولی تلخ کلامی کے بعد خاتون کو گولی مار دی۔

یہ بھی پڑھیں: شادی سے انکار: خاتون کا نوجوان پر تیزاب سے حملہ

واضح رہے کہ سی سی ٹی وی فوٹیج میں فائرنگ کرنے والے شخص کو نہیں دیکھا جاسکتا جبکہ خاتون کو گولی لگنے کے بعد چیخ و پکار کرتے دیکھا جاسکتا ہے۔

بعد ازاں پولیس نے مقتولہ کے والد کی مدعیت میں واقعے کا مقدمہ درج کرلیا جس کے مطابق مقتولہ مہوش ارشد کی عمر 18 سے 19 سال کے درمیان تھی ، جو الہلال ٹریول میں بطور میزبان نوکری کررہی تھی۔

ایف آئی آر کے مطابق ملزم اور مقتولہ اس سے قبل کوہستان ٹریول پر بھی ایک ساتھ کام کرچکے ہیں جہاں ملزم کی جانب سے مہوش پر شادی کے لیے دباؤ ڈالا جارہا تھا۔

مزید پڑھیں: بدین: شادی سے انکار پر 22 سالہ لڑکی کا قتل

پولیس کے مطابق ملزم نے مہوش پر فائرنگ کی اور فرار ہوگیا جبکہ خاتون کو زخمی حالت میں ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ دوران علاج جاں بحق ہوگئی۔

پولیس حکام نے بتایا کہ واقعہ 9 جون کو پیش آیا تھا جبکہ ملزم کو واقعے کے فوری بعد گرفتار کرلیا گیا تھا۔ پولیس کے مطابق ملزم نے اعتراف جرم کرلیا اور قتل کی وجہ شادی سے انکار کرنا بتائی ہے۔

پولیس نے واقعے کے بعد ملزم عمر دراز کو گرفتار کر کے علاقہ مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش کیا، جہاں مجسٹریٹ نے ملزم کو 4 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔