بھارت: ریسٹورنٹ مالک سے الجھنے پر دَلت نوجوان پر برہنہ کرکے تشدد

04 نومبر 2019

ای میل

دَلت نوجوان کے ساتھ موجود اس کے ایک دوست کو بھی شدید زد و کوب کیا گیا — فوٹو: بشکریہ انڈین ایکسپریس
دَلت نوجوان کے ساتھ موجود اس کے ایک دوست کو بھی شدید زد و کوب کیا گیا — فوٹو: بشکریہ انڈین ایکسپریس

بھارتی ریاست گجرات کے شہر احمد آباد میں دَلت نوجوان کو مبینہ طور پر ریسٹورنٹ کے مالک سے الجھنے پر برہنہ کرکے شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

انڈین ایکسپریس کی رپورٹ کے مطابق واقعہ احمد آباد کے سبَرمتی ٹول ناکے کے علاقے میں روڈ کنارے واقع ریسٹورنٹ میں پیش آیا۔

واقعے کی سامنے آنے والی ویڈیو میں چند لوگوں کی جانب سے نوجوان کو برہنہ کرکے اس پر ڈنڈوں سے تشدد کرتے دیکھا گیا، جبکہ دَلت نوجوان کے ساتھ موجود اس کے ایک دوست کو بھی شدید زد و کوب کیا گیا۔

بہیمانہ طور پر تشدد کا نشانہ بننے والے نوجوان کو احمد آباد کے سول ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں اس کی حالت تشویشناک ہے، جبکہ زد و کوب کیے جانے کے نتیجے میں نوجوان کے دوست کو بھی معمولی زخم آئے۔

مزید پڑھیں: بھارت: نچلی ذات کے ہندو نوجوان کو انسانی فضلہ کھانے پر مجبور کیے جانے کا انکشاف

پولیس کے مطابق یہ واقعہ اتوار کے روز اس وقت پیش آیا جب دو دلت نوجوان پَرگنیش پَرمار اور جیش ریسٹورنٹ پہنچے۔

سبرمتی پولیس اسٹیشن کے انچارج آر ایچ والا کا کہنا تھا کہ 'ریسٹورنٹ کے مالک اور پرگنیش کے درمیان کسی بات پر بحث ہوئی جس کے بعد ریسٹورنٹ مالک اور چند دیگر افراد نے دونوں نوجوانوں کو ڈنڈوں سے پیٹنا شروع کر دیا۔'

انہوں نے کہا کہ مَہیش ٹھاکور اور شَنکر ٹھاکور کے خلاف مختلف قوانین کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا ہے جبکہ ریسٹورنٹ کے مالک مہیش کو گرفتار بھی کیا جاچکا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: بھارت: تشدد کا شکار دلت نوجوان ہلاک

وَدگام سے قانون ساز اسمبلی کے رکن جِگنیش میوانی نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اگر ملزمان کو چوبیس گھنٹے میں گرفتار نہیں کیا گیا تو دلت برادری کے سماجی کارکن احمد آباد میں احتجاج کی کال دیں گے۔