'غیر ملکی کرپٹ سرکاری عہدیداروں اور ان کے اہلخانہ کی امریکا میں کوئی جگہ نہیں'

اپ ڈیٹ 10 دسمبر 2019

ای میل

گلوبل میگنیٹسکی ایکٹ انسانی حقوق کی پامالی کرنے والوں پر پابندیوں کی اجازت دیتا ہے—فوٹو: اے پی
گلوبل میگنیٹسکی ایکٹ انسانی حقوق کی پامالی کرنے والوں پر پابندیوں کی اجازت دیتا ہے—فوٹو: اے پی

واشنگٹن: امریکا کے سیکریٹری آف اسٹیٹ مائیک پومپیو نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ بدعنوان غیر ملکی عہدیداروں اور ان کے اہلخانہ کے افراد کو امریکا سفر کرنے اور ناجائز طریقے سے حاصل فوائد کو امریکا میں خرچ کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

واضح رہے کہ انسداد بدعنوانی کے عالمی دن کے مناسبت سے امریکی محکمہ خزانہ نے بدعنوان عناصر اور ان کی حمایت کرنے والے نیٹ ورکس پر پابندی عائد کرنے کا اعلان کیا۔

مزیدپڑھیں: کرپشن کیسز: امریکا میں تعینات پاکستانی سفیر دوبارہ نیب طلب

گلوبل میگنیٹسکی ایکٹ انسانی حقوق کی پامالی کرنے والوں اور بدعنوانی میں ملوث افراد پر پابندیوں کی اجازت دیتا ہے۔

مائیک پومپیو نے انسداد بدعنوانی کے دن اپنے پیغام میں کہا کہ 'ہم عالمی سطح پر اس اختیار کو غیر ملکی حکومتوں کے کرپٹ عہدیداروں اور ان کے اہلخانہ کے خلاف امریکا آنے اور ناجائز طریقے سے حاصل فوائد کو خرچ کرنے سے روکنے کے لیے استعمال کریں گے۔'

خیال رہے کہ 2019 میں امریکی محکمہ خارجہ نے 40 کے قریب سرکاری عہدیداروں اور ان کے اہلخانہ کے اراکین کی بدعنوانی میں ملوث ہونے کی نشاندہی کی تھی۔

انہوں نے کہا کہ تھا 'آج، ہم عالمی سطح پر بدعنوانی کی روک تھام اور ان کا مقابلہ کرنے کے اپنے عزم کی توثیق کرتے ہیں'۔

یہ بھی پڑھیں: کرپشن کینسر ہے، خاتمے کیلئے بڑی سرجری کی ضرورت ہے، چیئرمین نیب

امریکا کے سیکریٹری خارجہ مائیک پومپیو نے کہا کہ 'بدعنوانی، معاشی نمو اور ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے اور بین الاقوامی جرائم کی سہولت فراہم کرتی ہے، دہشت گردی کو ایندھن دیتی ہے اور دنیا بھر کے شہریوں کو ان کے بنیادی حقوق سے محروم کرتی ہے'۔


یہ خبر 10 دسمبر 2019 کو ڈان اخبار میں شائع ہوئی