سخت پابندیوں کے باوجود ’دی بیٹ مین’ کی شوٹنگ جاری

اپ ڈیٹ 16 اکتوبر 2020

ای میل

وارنر اسٹوڈیو فلم دی بیٹ مین کو سال 2021 کے بجائے 2022 میں ریلیز کرنے کا اعلان کرچکا ہے— فوٹو: میگا امیجز
وارنر اسٹوڈیو فلم دی بیٹ مین کو سال 2021 کے بجائے 2022 میں ریلیز کرنے کا اعلان کرچکا ہے— فوٹو: میگا امیجز

برطانیہ کے شہر لیور پول میں کورونا کیسز میں اضافے کے باوجود وہاں ہولی وڈ کی آنے والی فلم بیٹ مین کی شوٹنگ دیکھ کر لوگ حیران ہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے اسکائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق دی بیٹ مین میں مرکزی کردار ادا کرنے والے رابرٹ پیٹسن کو سیٹ پر اپنے کردار میں دیکھا گیا ہے۔

خیال رہے کہ 2020 کے اوائل میں دی بیٹ مین کی شوٹنگ گلاسگو میں شروع ہوئی تھی لیکن کورونا وائرس کی عالمی وبا کی وجہ سے روک دی گئی۔

بعدازاں ستمبر میں رپورٹ کیا گیا تھا کہ رابرٹ پیٹسن کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے لیکن وارنر برادرز کی جانب سے اس کی کوئی تصدیق نہیں کی گئی تھی۔

مزید پڑھیں: ’دی بیٹ مین‘ کی ریلیز 2022 تک ملتوی

اب لیور پول میں فلم کی شوٹنگ جاری ہے جبکہ اسی ہفتے شہر کی انتظامیہ نے کورونا کیسز میں اضافے کے باعث انتہائی سنگین پابندیاں لگائی ہیں۔

اب فلم کی شوٹنگ کی اور بیٹ مین کی گلیوں سے گزرنے کی تصاویر نے سوالات اٹھائے ہیں کہ فلمبندی کیسے ہورہی ہے جب شہریوں کے 'انڈورز اور آؤٹ ڈورز' میں میل جول پر پابندی لگائی ہے، جن میں گارڈنز، جمز وغیرہ شامل ہیں۔

لیور پول سٹی کونسل کے ترجمان نے شہریوں کو یقین دہانی کروائی کہ حفاظتی اقدامات پر عملدرآمد کیا جارہا ہے۔

ترجمان نے اسکائی نیوز کو بتایا کہ نئی پابندیوں سے شہر میں فلموں کی شوٹنگ متاثر نہیں ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ فلم آفس ہر پروڈکشن کے ساتھ کام کررہا ہے تاکہ کووڈ-19 سے بچاؤ کے اقدامات پر عمل کیا جائے۔

دوسری جانب وارنر برادرز نے اب تک دی بیٹ کے لیے حفاظتی اقدامات کی تصدیق نہیں کی۔

چند روز قبل وارنر بردارز نے اپنی دو فلموں ’ڈیون‘ اور ’دی بیٹ مین‘ کو تاخیر سے ریلیز کرنے کا اعلان کیا تھا اور اب دی بیٹ مین کو 2022 میں ریلیز کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں:کورونا وائرس: فلم ’بیٹ مین‘ کی ریلیز بھی تاخیر کا شکار

خیال رہے کہ وارنر اسٹوڈیو نے ابتدائی طور پر اعلان کیا تھا کہ فلم دی بیٹ مین کو سال 2021 کے جون میں ریلیز کیا جائے گا بعدازاں اسے اکتوبر 2021 میں ریلیز کرنے کا اعلان ہوا تھا اور اب اس میں تاخیر کا فیصلہ سامنے آیا۔

علاوہ ازیں ستمبر میں مرکزی اداکار روبرٹ پیٹسن میں کورونا وائرس کی تصدیق کے بعد فلم کی شوٹنگ 2 ہفتے تک روک دی گئی تھی۔

فلم اسٹوڈیو وارنر بروس نے کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے فرد کا نام نہیں بتایا تھا تاہم ورائٹی، ہولی وڈ رپورٹر اور وینیٹی فیئر نے تمام ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ جس فرد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے وہ فلم اسٹار روبرٹ پیٹسن ہیں۔

یہ واضح نہیں تھا کہ اداکار میں عالمی وبا کا باعث بننے والے کورونا وائرس کی علامات کس حد تک ظاہر ہوئیں۔