عمر گل کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے باؤلنگ کوچ مقرر

اپ ڈیٹ 13 جنوری 2021

ای میل

عمر گل کو عبدالرزاق کی جگہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کا باؤلنگ کوچ مقرر کیا گیا ہے— فائل فوٹو: اے ایف پی
عمر گل کو عبدالرزاق کی جگہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کا باؤلنگ کوچ مقرر کیا گیا ہے— فائل فوٹو: اے ایف پی

پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کی فرنچائز کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے قومی ٹیم کے سابق مایہ ناز فاسٹ باؤلر عمر گل کو باؤلنگ بنانے کا اعلان کردیا ہے۔

گزشتہ چار سیرنز سے سابق آل راؤنڈر عبدالرزاق کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے باؤلنگ کوچ کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے تھے تاہم پاکستان کرکٹ بورڈ کی نئی پالیسی کی وجہ سے اب عبدالرزاق پی ایس ایل فرنچائز کے لیے مزید کام نہیں کر سکتا۔

مزید پڑھیں: عمر گل کا ہر طرز کی کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان

عبدالرزاق اس وقت پاکستان کرکٹ بورڈ کی ایک ایسوسی ایشن سے بطور کوچ وابستہ ہیں لہٰذا ڈومیسٹک کرکٹ سے منسلک کوئی بھی فرد مفادات کے ٹکراؤ کی پالیسی کے تحت پی ایس ایل فرنچائز کی کوچنگ نہیں کر سکتا۔

47 ٹیسٹ، 130 ون ڈے اور 60 ٹی 20 میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کا اعزاز حاصل کرنے والے 36 سالہ سابق فاسٹ باؤلر گزشتہ سال ریٹائرمنٹ کے بعد پہلی مرتبہ کوچنگ کی ذمے داری ادا کریں گے۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے مالک ندیم عمر نے اپنے بیان میں کہا کہ عمر گل کا ٹی20 کیریئر بہترین رہا اور وہ اپنے پیشرو عبدالرزاق کے بہترین جانشین ثابت ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ جدید دور کے کھیل کے حوالے سے عمر گل کی معلومات نسیم شاہ اور محمد حسنین اور نسیم شاہ جیسے ہمارے فاسٹ باؤلرز کے لیے مددگار ثابت ہوں گی اور مجھے یقین ہے کہ آنے والی پی ایس ایل میں وہ ہماری ٹیم کے لیے بہت مددگار ثابت ہوں گے۔

یہ بھی پڑھیں: جب عمر گل نے ناقابل یقین فتح دلائی

اپنی عمدہ یارکرز کی وجہ سے 'گُل ڈوزر' کے نام سے مشہور عمر گل نے 2003 میں بنگلہ دیش اور زمبابوے کے خلاف بالترتیب ٹیسٹ اور ون ڈے انٹرنیشنل ڈیبیو کیا اور 400 سے زائد وکٹیں حاصل کیں۔

ٹیسٹ اور ون ڈے کرکٹ سے قطع نظر ٹی 20 کرکٹ دنیا بھر میں مقبول ہوئی تو عمر گل اس فارمیٹ کے سب سے کامیاب باؤلر کے طور پر ابھر کر سامنے آئے اور 2007 اور 2009 کے ورلڈ ٹی20 میں سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے باؤلر رہے۔

اپنی شاندار یارکرز کی وجہ سے وہ دنیا بھر کے بلے بازوں کے لیے وبال جان بنے رہے اور ایک عرصے تک ٹی 20 کرکٹ میں عالمی نمبر ایک باؤلر کے منصب پر فائز رہے۔

2012 تک عمر گل قومی ٹیم کا مستقل حصہ رہے خصوصاً ون ڈے اور ٹی 20 میں ان کی کاکرردگی قابل ستائش تھی جبکہ 2010 کے لارڈز ٹیسٹ میں محمد آصف اور محمد عامر پر پابندی کے بعد مشکل وقت میں عمر گل نے ہی پاکستان کی فاسٹ باؤلنگ لائن کو سہارا دیا تھا۔

عمر گل نے اپنا آخری ٹیسٹ میچ 2013 میں دورہ جنوبی افریقہ کے دوران کھیلا تھا جبکہ 2016 میں آخری ون ڈے اور ٹی20 میچ کھیلا تھا۔