اقوام متحدہ میں 'مذہبی مقامات کے تحفظ کیلئے امن، رواداری کو فروغ' دینے سے متعلق قرارداد منظور

23 جنوری 2021

ای میل

قرارداد پاکستان اور اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے متعدد ممالک کی جانب سے پیش کی گئی تھی — فائل فوٹو
قرارداد پاکستان اور اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے متعدد ممالک کی جانب سے پیش کی گئی تھی — فائل فوٹو

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں 'مذہبی مقامات کے تحفظ کے لیے امن اور رواداری کی ثقافت کو فروغ' دینے سے متعلق پاکستان اور دیگر ممالک کی پیش کردہ قرارداد منظور کرلی گئی۔

دفتر خارجہ سے جاری بیان کے مطابق جنرل اسمبلی نے 'مذہبی مقامات کے تحفظ کے لیے امن اور رواداری کی ثقافت کو فروغ' دینے سے متعلق پاکستان اور اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے متعدد ممالک کی جانب سے پیش کردہ قرارداد متفقہ طور پر منظور کی ہے۔

بیان میں کہا گیا کہ وزیر اعظم عمران خان کے وژن کے مطابق یہ قرارداد مذہبی مقامات کے تحفظ، بین المذاہب ہم آہنگی کے فروغ اور مذہب یا عقیدے کی بنیاد پر عدم رواداری کا مقابلہ کرنے کے لیے پاکستان کی جاری سفارتی کوششوں کا حصہ ہے۔

مزید پڑھیں: اقوام متحدہ میں بین المذاہب، بین الثقافتی مذاکرات کے فروغ سے متعلق پاکستان کی قرارداد منظور

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ مذہبی شخصیات اور مقامات کی بے حرمتی، دنیا بھر میں بڑھتی ہوئی مذہبی انتہا پسندی اور عدم رواداری کے حالیہ واقعات کے پس منظر میں اس قرارداد کا مقصد اس طرح کے منفی رجحانات کو روکنا ہے۔

قرارداد میں مذہب یا عقیدے کی بنیاد پر ہر طرح کے تشدد، امتیازی سلوک، عدم برداشت، مذہبی منافرت اور مذہبی مقامات پر حملوں اور مذہب کی جبری تبدیلی کی مذمت کی گئی ہے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ پاکستان، سعودی عرب، یمن، متحدہ عرب امارات، مراکش، عمان، بحرین اور مصر پر مشتمل ان سرکردہ ممالک کی اجتماعی کاوشوں کی وجہ سے اس قرارداد کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے اتفاق رائے سے منظور کیا۔