آسٹریلیا میں شدید بارشیں، 50 سال کا بدترین سیلاب آگیا

اپ ڈیٹ 21 مارچ 2021
سڈنی میں سیلاب کے بعد نواحی علاقے میں کئی مکانات پانی میں ڈوبے ہوئے ہیں — فوٹو: رائٹرز
سڈنی میں سیلاب کے بعد نواحی علاقے میں کئی مکانات پانی میں ڈوبے ہوئے ہیں — فوٹو: رائٹرز
سیلاب کے بعد نیو ساؤتھ ویلز کے دریائے میننگ میں ایک گھر تیر رہا ہے — فوٹو: رائٹرز
سیلاب کے بعد نیو ساؤتھ ویلز کے دریائے میننگ میں ایک گھر تیر رہا ہے — فوٹو: رائٹرز
شدید بارشوں اور سیلاب کی وجہ سے کئی مقامات پر بجلی کے کھمبے تک پانی میں ڈوب گئے — اے ایف پی
شدید بارشوں اور سیلاب کی وجہ سے کئی مقامات پر بجلی کے کھمبے تک پانی میں ڈوب گئے — اے ایف پی
ایک خاتون سڈنی میں بدترین سیلاب کے بعد ڈوبے ہوئے پارک کی تصویر لے رہی ہیں— فوٹو: اے ایف پی
ایک خاتون سڈنی میں بدترین سیلاب کے بعد ڈوبے ہوئے پارک کی تصویر لے رہی ہیں— فوٹو: اے ایف پی
نیو ساؤتھ ویلز میں شدید بارشوں کے بعد آنے والے سیلاب سے بندرگاہ بھی ڈوبی ہوئی ہے— فوٹو: رائٹرز
نیو ساؤتھ ویلز میں شدید بارشوں کے بعد آنے والے سیلاب سے بندرگاہ بھی ڈوبی ہوئی ہے— فوٹو: رائٹرز
ایک ٹرک سیلابی پانی کے ریلے سے نکلنے کی کوشش کررہا ہے— فوٹو: اے پی
ایک ٹرک سیلابی پانی کے ریلے سے نکلنے کی کوشش کررہا ہے— فوٹو: اے پی

آسٹریلیا کے مشرقی ساحل پر شدید بارشوں کے نتیجے میں 50 سال کا بدترین سیلاب آیا ہے جس کے نتیجے میں سیکڑوں گھر تباہ اور ہزاروں افراد نقل مکانی پر مجبور ہو گئے۔

بارش کے نتیجے میں آسٹریلیا کی سب سے زیادہ آبادی والی ریاست نیو ساؤتھ ویلز اور ریاستی دارالحکومت سڈنی کے زیریں علاقے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔

کئی مقامات پر سڑکیں بند کردی گئی ہیں اور اسکول بھی پیر کو بند رکھنے کا اعلان کیا گیا ہے۔

ماہرین موسمیات کا کہنا تھا کہ بارشوں کا سلسلہ کچھ دن تک جاری رہے گا جس کی وجہ سے آنے والے چند دن تک صورتحال میں بہتری ممکن نہیں۔

تبصرے (0) بند ہیں