• KHI: Asr 5:15pm Maghrib 7:23pm
  • LHR: Asr 4:59pm Maghrib 7:09pm
  • ISB: Asr 5:09pm Maghrib 7:20pm
  • KHI: Asr 5:15pm Maghrib 7:23pm
  • LHR: Asr 4:59pm Maghrib 7:09pm
  • ISB: Asr 5:09pm Maghrib 7:20pm

شرح نمو کے بارے میں 2 سال پہلے ہی بتادیا تھا یہ اچانک نہیں بڑھی، اسد عمر

شائع May 28, 2021 اپ ڈیٹ June 6, 2021
وفاقی وزیر اسد عمر کا  اسلام آابد چیمبرز آف کامرس سے خطاب—تصویر: ڈان نیوز
وفاقی وزیر اسد عمر کا اسلام آابد چیمبرز آف کامرس سے خطاب—تصویر: ڈان نیوز

وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا ہے کہ پلاننگ کمیشن نے آئندہ مالی سال کے لیے جی ڈی پی کی شرح نمو 4.8 فیصد رہنے کا تخمینہ لگایا ہے اور میرے اندازے کے مطابق اس میں بڑھنے کی گنجائش موجود ہے۔

اسلام آباد چیمبرز آف کامرس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جو سب پریشان ہیں کہ اچانک سے نمو کہاں سے آگئی، انہوں نے کہا کہ میں بتادوں کہ دو سال قبل مجھ سے کسی نے سوال کیا تھا جس پر میں نے بتایا تھا کہ 2 سال بعد نمو آئے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ اینوئل پلان کوآرڈینیشن کمیٹی، جس میں تمام صوبے بھی شامل ہیں، نے قومی اقتصادی کونسل کو اس کی منظوری دے دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:آئی ایم ایف کی رضامندی سے حکومت نے بلند معاشی اہداف مقرر کردیے

اسد عمر نے کہا کہ جی ڈی پی کی 3.94 فیصد نمو اور آئندہ مالی سال کے لیے 4.8 فیصد کے تخمینے کی وجہ یہ ہے کہ ہم توازن کے ساتھ فیصلے کرتے چلے گئے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا وبا کے دوران وزیراعظم عمران خان کی جانب سے جس طرح کے فیصلے کیے گئے وہ اسی چیز کی عکاسی کرتے ہیں جیسے کوئی ماں اپنے بچوں کے بارے میں سوچتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بھارتی معیشت دنیا کی تیز ترین ترقی کرنے والی معیشت ہے لیکن وہ گزشتہ سال جتنی سکڑی ایسا اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا تھا اور گزشتہ برس منفی 10 فیصد پر پہنچ گئی تھی لیکن ہماری 0.4 فیصد منفی تھی۔

بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ کوئی پالیسی تھی کوئی سوچ تھی جس پر مسلسل عمل کیا گیا ہے۔

مزید پڑھیں:پاکستان کی معاشی شرح نمو 3.94 فیصد تک بڑھنے کی پیش گوئی

ان کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے آخری سال میں جی ڈی پی کی شرح نمو 5.4 فیصد تھی اور مجھے اس بات میں کوئی شک نہیں ہے کہ حکومتی مدت ختم ہونے سے قبل جی ڈی پی کی شرح نمو اس سے زیادہ ہوگی لیکن فرق یہ ہوگا وہ نمو ایسی تھی کہ 20 ارب ڈالر کا بیرونی خسارہ تھا۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ وہ لوگ جو گزشتہ ڈھائی سال سے کہہ رہے تھے کہ مسلم لیگ (ن) کے دورِ حکومت میں دودھ اور شہد کی نہریں بہہ رہی تھیں اور پاکستان کی معیشت کہاں سے کہاں جارہی تھی وہی کل کہہ رہے تھے کہ پی ٹی آئی کی حکومت نے بڑے غلط فیصلے کیے ان کو فوری آئی ایم ایف کے پاس جانا چاہیے تھا تو جب آپ کی معیشت آسمان پر تھی تو فوری طور پر آئی ایم ایف کے پاس کیوں جانا چاہیے تھا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ وقت آہستہ آہستہ سب دکھا دیتا ہے ہم دعویٰ نہیں کرتے کہ ہر فیصلہ ہی ٹھیک ہے ہوسکتا ہے کہ اس سے بہتر فیصلے ہوسکیں لیکن تمام فیصلے نیک نیتی کے ساتھ کیے جاتے ہیں۔

اسد عمر نے کہا کہ جس رپورٹ میں 3.94 فیصد نمو بتائی ہے اسی میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ گزشتہ برس ہماری شرح نمو 0.47 منفی تھی لیکن آئی ایم ایف اور عالمی بینک نے منفی ڈیڑھ سے 2 فیصد کا تخمینہ لگایا تھا اس لیے اپنے آپ پر بحیثیت ملک اعتماد کریں اگر آپ سچائی سے چلیں تو اس بات سے مرعوب ہونے کی ضرورت نہیں کہ باہر کی دنیا کیا کہتی ہے۔

'اسلام آباد کی 21 فیصد ٹارگٹڈ آبادی ویکسنیشن کرواچکی ہے'

انہوں نے کہا کہ تاجر تقاضہ کررہے ہیں کہ سخت اسٹینڈرڈ آپریٹنگ پروسیجرز (ایس او پیز) کے ساتھ کھول دیے جائیں، کاروبار 2 دن کے بجائے ایک دن بند کیا جائے اور اوقات کار 8 بجے کے بجائے 10 بجے کردیے جائیں لیکن میں چاہتا ہوں کہ بغیر ایس او پیز کے تمام مارکیٹس 24 گھنٹے کھلی رہیں اور کوئی بھی بندش کا دن نہ ہو۔

یہ بھی پڑھیں:رواں مالی سال جی ڈی پی کی شرح 4 فیصد رہے گی، حماد اظہر

اسد عمر نے کہا کہ ملک کے دوسرے حصوں کی نسبت اسلام آباد میں ویکسینیشن کا کام تیزی سے جاری ہے اور وفاقی دارالحکومت کی 21 فیصد ٹارگٹڈ آبادی ویکسینیشن کرواچکی ہے لیکن ہمارے پاس گنجائش اس سے بھی زیادہ ہے، جتنی تیزی سے ویکسینیشن ہوجائے گی ہم جلد ان پابندیوں سے نکل جائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ وبا کی بندشوں سے نکلنے کے لیے ویکسینیشن کا جو ہدف ہم نے پانا ہے وہ برسوں یا مہینوں کی نہیں چند ہفتوں کی بات ہے ہم اسلام آباد میں ویکسین کی روزانہ 20 ہزار خوراکیں لگاسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جتنی جلد ویکسینیشن ہوجائے گی اس کا سب سے زیادہ فائدہ تاجروں کو ہوگا اور پابندیاں کھولی جاسکتی ہیں، میں چاہتا ہوں کہ بڑی عید پر مارکیٹوں میں کوئی بندش نہ ہو اور سب کھلا ہوا ہو، اس سلسلے میں این سی او سی آپ کو بھرپور مدد کرے گی۔

کارٹون

کارٹون : 15 جون 2024
کارٹون : 14 جون 2024