کیا کورونا کی قسم اومیکرون بچوں کو زیادہ بیمار کرسکتی ہے؟

20 جنوری 2022
یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی — شٹر اسٹاک فوٹو
یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی — شٹر اسٹاک فوٹو

کورونا وائرس کی قسم اومیکرون سابقہ اقسام کے برعکس ممکنہ طور پر بچوں کے لیے زیادہ خطرناک ہوسکتی ہے۔

یہ بات جنوبی افریقہ میں ہونے والی ایک تحقیق میں سامنے آئی۔

نیشنل انسٹیٹوٹ فار کمیونیکیبل ڈیزیز کی اس تحقیق میں جنوبی افریقہ کے سب سے بڑے میڈیکل انشورنس پروگرام کے ہسپتال میں داخلے کے ڈیٹا کی جانچ پڑتال کی گئی تھی۔

یہ کووڈ کے باعث ہسپتال میں داخلے ہونے والے 56 ہزار 164 افراد کا ڈیٹا تھا اور اس کے تجزیے سے دریافت ہوا کہ جنوبی افریقہ میں اومیکرون کی لہر کے دوران 4 سال سے کم بچوں کے ہسپتال میں داخلے کی شرح ڈیلٹا کے مقابلے میں 49 فیصد زیادہ تھی۔

اسی طرح یہ شرح اویجنل وائرس اور اس کی بیٹا قسم کے مقابلے میں بھی زیادہ تھی۔

تحقیق کے مطابق 4 سے 18 سال کی عمر کے افراد میں کووڈ کے باعث زیادہ بیمار ہوکر ہسپتال میں داخل ہونے کی شرح ڈیلٹا کے مقابلے میں 25 فیصد تھی مگر بیٹا کے مقابلے میں کم تھی۔

تحقیق کے مطابق بچوں میں تو ہسپتال داخلے کی شرح میں اضافہ ہوا مگر ڈیٹا سے بھی معلوم ہوا کہ بالغ افراد میں اومیکرون سے ہسپتال داخلے کی شرح جنوبی افریقہ میں کورونا کی دیگر اقسام کے مقابلے میں سب سے کم تھی۔

محققین نے بتایا کہ 18 سال سے کم عمر افراد میں کووڈ 19 کے کیسز اور ہسپتال میں داخلے کی شرح میں اضافہ دریافت ہوا۔

انہوں نے کہا کہ اس سے یہ ممکنہ نتیجہ سامنے آتا ہے کہ بالغ آبادی کے مقابلے میں اومیکرون قسم سے بچے اور نوجوان پر زیادہ اثرات مرتب ہوئے ہیں۔

مگر محققین نے تسلیم کیا کہ تحقیق میں اس حقیقت کو مدنظر نہیں رکھا گیا کہ جنوبی افریقہ میں نومبر 2021 کے شروع تک 12 سے 17 سال کی عمر کے بچوں کی کووڈ ویکسینیشن شرح بہت کم تھی جبکہ 12 سال سے کم عمر بچے اس کے اہل نہیں تھے۔

انہوں نے بتایا کہ نوجوانوں کے مقابلے میں زیادہ عمر کی آبادی میں ویکسینیشن کی شرح کافی زیادہ ہے۔

تحقیق میں یہ بھی دریافت کیا گیا کہ اومیکرون سے کووڈ 19 کا شکار ہونے والے افراد کی اوسط عمر 38.5 سال تھی، جو ڈیلٹا کی لہر میں 40.8 سال، بیٹا کی لہر میں 45.6 سال اور پہلی لہر میں 43 سال تھی۔

تحقیق کے مطابق ہر عمر کے گروپس میں اومیکرون سے بیمار ہونے کے بعد ہسپتال میں داخلے کی شرح 15.4 فیصد تھی۔

اس کے مقابلے میں ڈیلٹا کی لہر میں یہ شرح 19.3 فیصد، بیٹا کی لہر میں 28.4 فیصد اور اوریجنل وائرس کی لہر میں 21.4 فیصد تھی۔

تبصرے (0) بند ہیں