'مفت فیس بک' سروس استعمال کرتے ہیں؟ تو یہ ضرور جان لیں

26 جنوری 2022
— اے پی فائل فوٹو
— اے پی فائل فوٹو

میٹا (فیس بک کمپنی کا نیا نام) نے کچھ سال قبل پاکستان سمیت دنیا کے مختلف ممالک میں اپنے سوشل میڈیا نیٹ ورک کے استعمال کے لیے 'مفت انٹرنیٹ سروس' کو متعارف کرایا تھا۔

مگر اب انکشاف ہوا ہے کہ یہ سروس بالکل بھی مفت نہیں بلکہ صارفین کو غیرضروری فیس ادا کرنے پر مجبور کردیتی ہے۔

یہ انکشاف وال اسٹریٹ جرنل کی ایک رپورٹ میں کیا گیا جس کے مطابق سافٹ ویئر خامیوں کے تنیجے میں صارفین ماہانہ لاکھوں ڈالرز ادا کرتے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ پیڈ فیچرز جیسے ویڈیوز کو اس مفت سروس میں ظاہر نہیں ہونا چاہیے یا صارفین کو ڈیٹا چارجز سے خبردار کرنا چاہیے، مگر ایسا ہوتا نہیں۔

جب صارف کسی ویڈیو مواد پر کلک کرتا ہے تو اسے ٹیلی کام سروس کو چارجز ادا کرنا پڑتے ہیں۔

فیس بک کے مفت انٹرنیٹ میں یہ خامی ٹیلی کام سروسز کے لیے بہت پرکشش ہے جو ایک تخمینے کے مطابق ایسے صارفین سے 2021 کے موسم گرما میں 78 لاکھ ڈالرز (ایک ارب 37 کروڑ 67 لاکھ روپے سے زیادہ) کما رہے تھے۔

رپورٹ کے مطابق یہ مسئلہ پاکستان میں زیادہ سنجیدہ ہے جہاں صارفین سے ماہانہ 19 لاکھ ڈالرز (33 کروڑ 53 لاکھ روپے سے زیادہ) حاصل کیے گئے۔

میٹا کے ایک ترجمان نے بتایا کہ کمپنی کو مسئلے کے بارے میں رپورٹس موصول ہوئی ہیں اور سافٹ ویئر خامیوں کو ختم کرنے کے لیے مسلسل کام کیا جارہا ہے۔

فری موڈ کے نئے ورژنز میں واضح طور پر ٹیکسٹ اونلی کا ذکر کیا جائے گا تاکہ صارفین کو علم ہوسکے کہ ویڈیو یا فوٹوز پر کلک کرنا مفت نہیں۔

گوگل کی طرح میٹا بھی مفت انٹرنیٹ رسائی میں بہت زیادہ دلچسپی رکھتی ہے کیونکہ ترقی پذیر ممالک ہی آئندہ برسوں میں اس کی نشوونما میں کردار ادا کریں گے جہاں ابھی بھی متعدد افراد آن لائن نہیں۔

ویسے تو مفت سروس صارفین کو صرف فیس بک یا اس کی سروسز تک محدود نہیں کرتی مگر اس بات کا قوی امکان ہوتا ہے کہ انٹرنیٹ پر آنے والے نئے افراد اپنا اکاؤنٹ بناکر میٹا کی ترقی کو مزید بڑھائیں۔

تبصرے (1) بند ہیں

waseem zia Jan 27, 2022 07:00pm
کیا یہ دھوکہ یے